سکولوں کی فیسوں میں اضافہ کے خلاف لاہور ہائیکورٹ کے فیصلے میں بہت سی غلطیاں ہیں، چیف جسٹس

Spread the love

قانون بنانے والے حقائق سے زیادہ باخبر ہوتے ہیں، افراط زر کی وجہ سے والدین کی آمدن پر بھی فرق پڑتا ہے

عدالت نے قیمتوںپر حکومتی کنٹرول ناجائزقراردے دیاتو اشیائے خور و نوش کی قیمتیں بھی کنٹرول نہیں ہوسکیں گی

چیف جسٹس آصف سعید خان کھوسہ کے نجی سکولوں کی فیسوں میں اضافہ کے خلاف کیس کی سماعت کے دوران ریمارکس

اسلام آباد(کورٹ رپورٹر)چیف جسٹس آصف سعید خان کھوسہ نے نجی سکولوں کی فیسوں میں اضافہ کے خلاف کیس کی سماعت کے دوران ریمارکس میںکہا ہے کہ قانون بنانے والے حقائق سے زیادہ باخبر ہوتے ہیں، افراط زر کی وجہ سے والدین کی آمدن پر بھی فرق پڑتا ہے، عدالت نے قیمتوںپر حکومتی کنٹرول ناجائزقراردے دیاتو اشیائے خور و نوش کی قیمتیں بھی کنٹرول نہیں ہوسکیں گی ،سکولوں کی فیسوں میں اضافہ کے خلاف لاہور ہائیکورٹ کے فیصلے میں بہت سی غلطیاں ہیں،لگتا ہے غلطیوں میں سارا قصور انگریزی کا ہے۔

چیف جسٹس آصف سعید خان کھوسہ کی سربراہی میں تین رکنی بینچ نے کیس کی سماعت کا آغاز کیا تو نجی سکولوں کے وکیل مخدوم علی خان نے کہاکہ عدالت بنیادی حقوق کی محافظ ہے ایگزیکٹو اقدامات کی نہیں، فیسوں میںپانچ فیصد سالانہ اضافے کو مناسب ثابت کرنا حکومت کا کام ہے، مجاز اتھارٹی معیشت کی بدحالی پر آنکھیں بند نہیں کر سکتی، کبھی افراط زر کی شرح پانچ فیصد رہی ہے؟ اس پر جسٹس اعجازالاحسن نے کہاکہ نجی سکولز سکولز کو منافع کے کارخانے نہیں بننے دینگے، چیف جسٹس کا کہنا تھا کہ افراط زر کی وجہ سے والدین کی آمدن پر بھی فرق پڑتا ہے، قانون بنانے والے حقائق سے زیادہ باخبر ہوتے ہیں، عدالت نے قیمتوں کاکنٹرول ناجائزقراردے دیاتو اشیائے خور و نوش کی قیمتیں بھی کنٹرول نہیں ہوسکیں گی ،لاہور ہائیکورٹ کے فیصلے میں بہت سی غلطیاں ہیں،لگتا ہے غلطیوں میں سارا قصور انگریزی کا ہے،

جسٹس اعجازالاحسن نے کہاکہ فیسوں میں قانونی اضافہ کمیٹی کی سفارشات کی بنیادپرہی ہوسکتاہے،چیف جسٹس نے کہاکہ آئین کے آرٹیکل 10اے کا اطلاق صرف ٹرائل کیلیے ہوتا ہے ہر جگہ نہیں،فیس میں 5فیصد سے زائد اضافہ لائسنس کی تجدید کے وقت ہوگا،مخدوم علی خان ایڈووکیٹ نے کہاکہ 2020 میں گیس کی قیمت 80 فیصد تک بڑھ جائے گی،جسٹس اعجازالاحسن نے کہاکہ گیس کی قیمت بڑھنے سے اسکول فیس میں80فیصد اضافہ نہیں ہوتا

مخدوم علی خان نے کہاکہ افراط زرکومدنظر رکھتے ہوئے 5 فیصد سے زیادہ اضافے کی اجازت ہے،جسٹس اعجازالاحسن نے کہاکہ فیس میں اضافے کی شرح کم سے کم ہونی چاہیے،5فیصد سے زیادہ اضافہ چاہیے تومجازاتھارٹی کو جواز پیش کریں،آڈٹ رپورٹ کے مطابق نجی اسکولز بہت زیادہ منافع لیتے ہیں۔عدالت نے کیس کی مزید سماعت آج تک ملتوی کردی۔

Please follow and like us:

Leave a Reply