تھرپارکر:خشک سالی نےزندہ جانداروں کو مردار کھانے پر مجبور کر دیا

Spread the love

تھرپارکر میں قحط سالی کے شدت خطرناک حد تک بڑھ گئی۔ بارشیں نہ ہونے کی وجہ سے انسان جانور پرندے سخت متاثر، حلال اور پالتو جانور بھوک کے سبب مردہ جانوروں کو کھانے لگے۔
رواں ماہ تھر میں بچوں کی ہلاکتوں کی تعداد 20 سے بھی تجاوز کر گئی لیکن سندھ حکومت کی کارکردگی صرف کاغذوں پر نظر آ رہی ہے۔
تھرپارکر ضلع کے سات تحصیلوں کلوئی، مٹھی، ڈیپلو، ننگرپارکر، چھاچھراور اسلام کوٹ ڈاھلی میں قحط کی شدت مزید تیز ہو گئی ہے۔ بارشیں نہ ہونے کے وجہ سے شجر و گھاس بھی ختم ہو گئے ہیں۔ جس کے وجہ سے پالتو اور جنگلی جانور شدید متاثر ہوکر مرنے لگے۔
شدید بھوک کی وجہ سے بھیڑ بکریاں اور دیگر حلال جانور مردہ جانوروں کی ہڈیاں اور گوشت کھارہے ہیں مگر سندھ حکومت نے نہ تو انسانوں کے لیے کوئی انتظام کیا ہے اور نہ ہی جانوروں کے لیے۔

Please follow and like us:

Leave a Reply