19 مارچ کے واقعات ایک نظر میں

Spread the love

واقعات

1931ء امریکی ریاست نیواڈا میں جوئے کو قانونی حیثیت دے دی گئی۔

1932ء سڈنی ہاربر پل کا افتتاح ہوا۔

1972ء پاکستان میں انشورنس کمپنیوں کو قومی تحویل میں لے لیا گیا۔

2002ء انسانی حقوق کی خلاف ورزی کرنے پر زمبابوے کی دولت مشترکہ کی رکنیت معطل کر دی گئی۔

2003ء امریکہ نے عراق کے خلاف جنگ کا اعلان کیا۔

2005ء پاکستان نے دوہزار کلو میٹر تک مار کرنے والے ایٹمی بلاسٹک میزائل شاہین ٹوکا کامیاب تجربہ کیا۔

1990ء کینیڈا کے دار الحکومت اوٹاوامیں پہلی بارخواتین کا آئس ہاکی ٹورنامنٹ ہوا۔

1972ء بھارت اور بنگلہ دیش کے دوستی کے معاہدے پر دستخط ہوئے۔

1915ء سیارہ پلوٹو کی پہلی بار تصاویر لی گئیں۔ تاہم اس وقت پلوٹو کو سیارہ تسلیم نہیں کیا گیا۔

ولادت

1883ء والٹر ہاورتھ ایک انگریز کیمسٹ تھا جنھوں نے وٹامن سی پر کام کیا۔ انھیں 1937 میں پال کارر کے ساتھ کیمسٹری کا نوبل انعام دیا گیا۔ ان کا انتقال 19 مارچ 1950 کو ہوا۔

1895ء ماکسیم ریلسکی یوکرین کے شاعر، مترجم، سماجی کارکن، یوکرینی سائنس اکادمی اور روسی سائنس اکادمی کے رکن ہیں۔ شاعر اور اکیڈمیشین، لینن انعام اور سوویت یونین کے ریاستی انعامات یافتہ ماکسیم ریلسکی کو بجا طور پر تارس شیوچنکو اور ایوان فرانکو کے بعد یوکرین کا سب سے اہم شاعر سمجھا جاتا ہے۔ ان کا انتقال 24 جولائی 1964ء کو ہوا۔

1900ء فریڈرک جولیو، فرانسیسی سائنس دان۔ 1926ء میں مشہور سائنس دان پیرے اور مادام کیوری کی بیٹی آئرین کیوری سے شادی کی۔ دونوں پیرس میں ریڈیم انسٹی ٹیوٹ میں نائب محقق کی حیثیت سے کام کرتے تھے۔ بیوی 1932ء میں اپنی والدہ مادام کیوری کی وفات پر اس ادارے کی ناظم مقرر ہوئی۔ دونوں نے مل کر ریڈیائی شعاعوں پر مادام کیوری کے کام کو جاری رکھا اور مفید تحقیقات کیں۔ انھوں نے الفا ذرات اور چند کیمیاوی عناصر کے امتزاج سے ریڈیائی مادے کے سلسلے میں کئی نئے تجربے کیے۔ اس سلسلے میں انھیں 1935ء میں کیمیا کا نوبیل انعام ملا۔ 1946ء میں جولیو فرانس کے جوہری توانائی کے کمیشن کا صدر مقرر ہوا۔ کچھ عرصہ عالمی امن کیمٹی کا صدر بھی رہا۔ ان کا انتقال 14 اگست 1958ء کو جگر کے مرض کے باعث ہوا۔

1906ء اڈولف ایش مان، ایک نازی جرمن افسر جو یہود دشمنی کے لیے شہرت رکھتا تھا۔ 1932ء میں آسٹریا کی نازی پارٹی میں شریک ہوا۔ بعد میں جرمنی چلا گیا۔ جہاں تاریخ صیہونیت کا مطالعہ کیا۔ 1940ء میں گسٹاپو کے اس حصے کا چیف بنا دیا گیا جس کا تعلق یہودیوں سے تھا۔ اس نے دوسری جنگ عظیم کے دوران لاکھوں یہودیوں کو موت کے گھاٹ اتار دیا۔ 1945ء میں اسے اتحادیوں نے پکڑ لیا۔ 1950ء میں بھاگ کر ارجنٹائن چلا گیا۔ آخراسرائیلی ایجنٹوں نے 1960ء میں اسے ڈھونڈ نکالا اور اغوا کرکے اسرائیل لے آئے۔ اسرائیلی عدالت نے اس کوسزائے موت کا حکم دیا۔ اس کو 31 مئی 1962ء کو اسرائیل میں پھانسی دے دی گئی۔

1933ء فلپ ملٹن روتھ،امریکی ناول نگار ہیں وہ 1959ء میں اسوقت مشہور ہوئے جب انکا ناول نویلہ گوڈبائی کولمبس (novella Goodbye Columbus) منظر عام پہ آیا۔ روتھ امریکہ کے بھی ان دایبوں میں شامل ہیں جو کم و بیش تمام امریکی اعزاز حاصل کر چکے ہیں۔ دیگر انعامات کے علاوہ انھیں دو بار نیشنل بُک ایوارڈ مل چکا ہے۔ انیس سو ستانوے میں انھیں ’امریکن پیسٹرل‘ پر پلئٹزر انعام بھی دیا گیا۔

1943ء ماریو جے۔ مولینا میکسیکو کے نوبل انعام یافتہ کیمیاءدان ہیں جنھوں نے انٹارکٹیکا میں موجود اوزون تہہ کے سوراخ کو دریافت کرنے میں اہم کردار ادا کیا۔نیز وہ نوبل انعام جیتنے والے پہلے میکسیکن شخصیت ہیں۔

1944ء سرحان بشارہ سرحان، ایک فلسطینی۔ اردنی شہری ہے جس نے امریکی سینیٹر رابرٹ ایف کینیڈی کو 5 جون 1968ء کو فائرنگ کر کے زخمی کر دیا تھا، اگلے روز کینڈی اس جہانِ فانی سے کوچ کر گیا۔ عدالت نے مقدمہ کے نتیجہ میں ملزم کو جرم کا مرتکب پایا اور اسے عمر قید کی سزا سنائی تھی۔ وہ اب بھی سان ڈائیگو کاؤنٹی، کیلی فورنیا کے ایک قید خانے میں سزا کاٹ رہا ہے۔

1978ء ابرار حسین ایک برطانوی مسلم فلم ساز، رائٹر، پروڈیوسر اور ڈائریکٹر ہے۔ اس نے لندن، برطانیہ میں پرورش پائی اور کنگسٹن یونیورسٹی سے تعلیم حاصل کی۔

1984ء تنوشری دتتا بھارتی اداکارہ کی پیدائش۔

2007ء اردن کے شہزادے عبداللہ بن علی کی پیدائش۔

وفات

1739ء برہان الملک سعادت علی خان، بانی سلطنت اودھ ب رہان الملک، نام محمد امین،آبائی وطن نیشا پور(خراسان) آپ ایرانی موسوی سید تھے۔ آپ کا مسلک شیعہ بیان کیا جاتا ہے۔ ان کی پیدائش کا سال 1680 بیان کیا گیا ہے۔

1987ء لیوس دی بروگلی فرانس کے ایک طبیعیات دان تھے جنھیں 1929ء میں نوبل انعام برائے طبیعیات دیا گیا، جس کی وجہ ایلکٹرون کی لہری خصوصیات کا پتہ لگانا تھا۔ یعنی انھوں نے بتایا تھا کہ الیکٹروں لہروں کی طرح حرکت کرتی ہیں۔ وہ 15 اگست 1892ء کو پیدا ہوئے۔

1991ء حزیں قادری، کا اصل نام بشیر احمد تھا، پاکستان کی فلمی صنعت کے مشہور کہانی کار اور نغمہ نگار تھے، جو اپنے نغمات ٹانگے والا خیر منگدا، چن میرے مکھناں اور اکھیاں نوں رہن دے اکھیاں دے کول کول کی وجہ سے لازوال شہرت رکھتے ہیں۔ حزیں قادری کی پیدائش کا سال 1926 ہے۔

1999ء ـ حجاب امتیازعلی پاکستان کی نامور افسانہ و ناول نگار ہیں جو اپنی رومانی تحریروں کی وجہ سے مشہور و مقبول ہوئیں۔ حجاب امتیاز علی نے 4 نومبر، 1908ء میں حیدر آباد دکن، ہندوستان کے ایک مقتدر اور مہذب گھرانے میں آنکھ کھولی۔ ان کے والد سید محمد اسماعیل نظام حیدر آباد کے فرسٹ سکریٹری تھے۔ حجاب نے عربی، فارسی، اردو اور موسیقی کی تعلیم گھر پر ہی پائی۔ حجاب نے انگریزی تعلیم کالج میں حاصل کی، جس میں انہیں عبور حاصل تھا۔ حجاب کی شادی 1935ء میں ڈراما انارکلی کے مصنف امتیاز علی تاج سے ہوئی۔ نکاح سے قبل حجاب کا نام حجاب اسماعیل تھا، جو بعد میں حجاب امتیاز علی مشہور ہو گیا۔ حجاب نے 1936ء میں ناردن لاہور فلائنگ کلب سے ہوا بازی کی سند حاصل کی اور برٹش گورنمنٹ کی وہ پہلی خاتون پائلٹ کہلائیں۔ اسی برس تہذیب نسواں میں ان کی ہوا بازی کے متعلق ایک نظم چھپی تھی، جس نے حجاب کو کافی شہرت دی۔

2000ء شفیق الرحمن، پاکستانی ادیب (پیدائش 1920ء)

2006ء محمد علی، پاکستانی اداکار (پیدائش 1931ء)

18 مارچ کے واقعات کے لیے یہاں کلک کریں

Leave a Reply