چین کےجنگی طیارے یوم پاکستان پریڈ میں حصہ لینے کیلئے پہنچ گئے

Spread the love

بیجنگ(مانیٹرنگ ڈیسک)چین کی پیپلز لبریشن آرمی ائیرفورس کے بایی

ائیروبیٹک جے ۔10جنگی طیارے پاکستان کے قومی دن کی پریٖٖٖڈمیں حصہ لیں

گے اس سلسلے میں چین کی بایی ائیروبیٹک ٹیم پاکستان پہنچ گئی ہے جو

23مارچ کو منعقدہ تقریب میں اپنی فضائی کارکردگی کا مظاہرہ کریگی۔چینی

پائلٹس کو پاکستان نے تقریب میں شمولیت کی دعوت دی تھی۔ چینی ٹیم کے

پاکستان پہنچنے پرنہایت گرم جوشی سے استقبال کیا گیا بچوں نے انہیں گلدستے

پیش کیے۔چائنہ سنٹرل ٹیلی ویژن کے مطابق شنگھائی اکیڈمی آف سوشل سائنسز

،انسٹی ٹیوٹ برائے بین الا قو ا می تعلقات کے ریسرچ فیلو ہو ژی یانگ نے بتایا

چین کایوم پاکستان کی تقریبات کے موقع پر جنگی طیارے بھیجنا دونوں ممالک

کے درمیان گہری دوستی کی علامت ہے یہ پہلی بار نہیں ہے کہ بایی ائیربیٹک ٹیم

نے پاکستان میں اپنی کارکردگی کا مظاہرہ کیا ہوبلکہ 19نومبر2017کو اس ٹیم

کے جے۔10جنگی طیاروں نے کوئٹہ میں بھی حیران کن کارکردگی کا مظاہرہ کیا

تھا۔ چائنہ ملٹری آن لائن کے مطابق جے۔10 سے بڑھ کر چینی تجزیہ نگار یہ

بھی توقع کرتے ہیں کہ یوم پاکستان کی پریڈ کے موقع پر چینی جنگی ہتھیاروں کی

مختلف اقسام بھی سامنے آنی چا ہییں ۔پاکستانی ائیرفورس میں جنگی جیٹ ،جے

ایف ۔17چین پاکستان مشترکہ ترقی کی پیداوار ہے پاکستان ائیرفورس زیڈ ڈی کے

۔03نظام جو چین کا تیار کردہ جہاز کا وارننگ سسٹم استعمال کرتی ہیں ۔ یہ نظام

فضائی جاسوسی اور میدان جنگ میں تمام اطلاعات بروقت فراہم کرسکتا ہے ، ایم

بی ٹی ۔2000ایک زبردست جنگی ٹینک ہے جو چائنہ نارتھ انڈسٹری کارپوریشن

نے تیار کیا اور اس کا الخالد ٹینک پاکستانی فوج میں شامل ہے ا س کے علاوہ

پاکستان چین کا ایچ جے ۔8میزائل بھی استعمال کرتا ہے جو ٹینک کیخلاف

کاروائی کرتا ہے، ایف ایم ۔90فضائی د فاعی میزائل ہے چائنہ ملٹری آئن لائن کے

مطابق چین نے پاکستان کی فوجی ترقی میں اہم کردار ادا کیا ہے جیساکہ چین اپنی

قومی دفاعی صنعت کے ذریعے کئی دہائیوں سے پاکستان کی مدد کررہاہے۔تجزیہ

نگاروں کے مطابق چین پاکستان کیساتھ مشترکہ ترقی کے کئی منصوبے

تیاراورمستقبل میں پاکستان کو ہتھیاروں کی فروخت بھی کرسکتا ہے، جے ایف ۔

17 جنگی طیاروں کا زیادہ جدید بیج ہے ،جے ایف ۔ 17 بلا ک 3کی تیاری اور

پیداوار پر بھی کام ہورہا ہے۔

Please follow and like us:

Leave a Reply