117

آسٹریلیا سے سیریز آزمائش کا آخری موقع ہوگی، سرفراز احمد

Spread the love

ایک دو نئے کرکٹرز کو میدان میں اتارنے کی کوشش کریں گے، پی ایس ایل کے پلیئرز بھی زیرغور آئیں گے، کپتان

دبئی(مانیٹرنگ، سپورٹس ڈیسک) قومی کرکٹ ٹیم کے کپتان سرفراز احمد نے کہا ہے کہ آسٹریلیا کیخلاف ون

ڈے سیریز کمبی نیشن کی آزمائش کا آخری موقع ہوگی۔دبئی میں ایک نٹرویو میں سرفراز احمد نے کہا کہ پی

ایس ایل کے بعد آسٹریلیا کیخلاف یو اے ای میں شیڈول ون ڈے سیریز ورلڈ کپ سے قبل کمبی نیشن کی آزمائش

کا آخری موقع ہے، اس کے بعد قومی ٹیم نے میگا ایونٹ کیلیے انگلینڈ روانہ ہونا ہے، کوشش کریں گے کہ

کینگروز کے خلاف ایک یا دو نئے کرکٹرز کو موقع دیں، سلیکشن کمیٹی کے ساتھ بیٹھ کر غور کریں گے کہ

کس کھلاڑی کی آزمائش کی جائے اور کس کو آرام دیا جائے۔انہوں نے کہا کہ پی ایس ایل میں اچھی کارکردگی

دکھانے والے کرکٹرز پر سب کی نظریں ہیں، دیکھا جا رہا ہے کہ ان میں سے کون قومی ٹیم میں جگہ بنانے

کی اہلیت رکھتا ہے، اگر کسی نے غیر معمولی کارکردگی دکھاتے ہوئے خود کو ایکس فیکٹر ثابت کیا تو

ضرور اس کے نام پر غور کریں گے، شاداب خان اسی انداز میں پی ایس ایل کے دوران سامنے آئے، پاکستان

کیلیے کھیلے اور اپنا انتخاب درست بھی ثابت کیا۔ماضی میں ڈسپلن مسائل کے باوجود عمراکمل اور احمد شہزاد

کو کوئٹہ گلیڈی ایٹرز کے اسکواڈ کا حصہ بنائے جانے کے سوال پر سرفراز احمد نے کہا کہ ان دونوں کو

شامل کیا تو لوگوں نے گڈ لک جیسے الفاظ کہے، مجھے کبھی بھی عمراکمل کے ساتھ کھیلتے ہوئے کوئی

مسئلہ پیش نہیں آیا، قومی ٹیم میں بھی ایک ساتھ رہے۔سرفراز نے بتایا کہ ٹی ٹوئنٹی کا کپتان بنا تو مڈل آرڈر

بیٹسمین میری قیادت میں ایک، دو سیریز بھی کھیلے، میں بطور کپتان کوئٹہ گلیڈی ایٹرز خوش ہوں کہ پاکستان

کی نمائندگی کرنے والے 2کرکٹرز میرے پاس آگے، یہ دونوں کسی وقت بھی میچ کا پانسہ پلٹ سکتے ہیں،

احمد شہزاد وقفے کے بعد مسابقتی کرکٹ میں آئے شاید اس لیے پرفارم نہیں کر سکے، فی الحال انہیں آرام دیا

آگے چل کر جہاں ضرورت ہوئی ان کو موقع دیا جائے گا، عمراکمل نے ڈومیسٹک کرکٹ کی فارم کو پی ایس

ایل میں بھی برقرار رکھا، کارکردگی دکھاتے ہیں تو کوئٹہ گلیڈی ایٹرز کیلیے بھی اچھا ہے۔عمراکمل کے قومی

ٹیم میں کم بیک کے حوالے سے بات کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ اگر کسی نے خود کو فٹ رکھا اور

ڈومیسٹک کرکٹ میں پرفارم کر رہا ہے تو قومی ٹیم میں واپس آ سکتا ہے، عمراکمل ہوں یا احمد شہزاد

دروازے سب کیلئے کھلے ہیں۔

اپنا تبصرہ بھیجیں