نمونیا کی شناخت میں مدد کرنے والی اسمارٹ اسٹیتھو اسکوپ

Spread the love

امریکی ماہرین نے مصنوعی ذہانت کے بل پر نمونیا کی پیشگوئی کرنیوالی ایسی اسٹیتھو اسکوپ بنائی ہے

جو اس جا ن لیوا مرض کی بڑی حد تک پیشگوئی کرسکتی ہے۔

جان ہاپکنز یونیورسٹی کی ذیلی کمپنی سوناووی لیبس نے 1800 سے اب تک کبھی نہ بدلنے والی اسٹیتھواسکوپ کو ایک نیا روپ دے کر اسے اسمارٹ بنایا ہے۔

اب یہ سینے سے اٹھنے والی آوازوں کو پڑھ کر ان کا بہتر انداز میں تجزیہ کرسکتی ہے۔

مریض کے سینے کے بعض مقامات کی آوازوں کا موازنہ ایک ایسے بیس سے کیا جاتا ہے

جس میں نمونیا کے مریضوں کے سینے کی آوازیں محفوظ ہیں۔

اس بنا پر اسٹیتھو اسکوپ اور اس سے وابستہ سافٹ ویئر نمونیا کی بہت درستی سے شناخت کرتا ہے۔

حساس اسٹیتھو اسکوپ کسی بھی ماحول میں پھیپھڑوں کی معمولی آواز بھی سن لیتی ہے۔

اس پر کام کرنیوالے پروفیسر جیمز ویسٹ نے بتایا ڈاکٹروں کی مدد کے بغیر یہ ٹیکنالوجی نہ صرف نمونیا بلکہ

دیگر امراض کی شناخت بھی کرسکتی ہے۔

نمونیا شناخت کرنیوالی اسٹیتھو اسکوپ الگورتھم ، ڈیٹا بیس اور پرو سیسر کی مدد سے کام کرتی ہے۔

ابتدائی درجے میں یہ 87 فیصد درستی سے نمونیا کی پیشگوئی کرسکتی ہے۔

اب سوناوی کمپنی فیلکس اور فیلکس پرو کے نام سے دو جدید ترین اسٹیتھو اسکوپ فروخت کیلئے پیش کررہی ہے۔

Please follow and like us:

Leave a Reply