کشمیری طلباء پر حملے 42

پاکستان کی جیت کے بعد انتہا پسند ہندوؤں کے کشمیری طلباء پر حملے

Spread the love

کشمیری طلباء پر حملے

سرینگر(صرف اردو آن لائن نیوز) آئی سی سی ٹی 20 عالمی کپ میں بھارت کے خلاف پاکستان کی جیت کے بعد بھارتی پنجاب کے مختلف کالجوں میں انتہا پسند ہندوؤں نے کشمیری طلباء پر حملے شروع کر دیئے۔ کشمیر میڈیا سروس کے مطابق پنجاب کے علاقے سنگرور میں ’’بھائی گرو داس انسٹی ٹیوٹ آف انجینئرنگ اینڈ ٹیکنالوجی ‘‘میں بھارتی ریاست اترپردیش اور بہار سے تعلق رکھنے والے ہندو دہشت گردوں نے ہوسٹل میں گھس کر کشمیری طلباء کو بے رحمی سے مارا پیٹا۔

ایک طالب علم نے فیس بک پر حملے کو براہ راست شیئر کیا جس میں حملہ آورکشمیری طلباء کے کمروں میں گھس گئے اوران پر ڈنڈوں اور لاٹھیوں سے حملہ کیا ۔بھائی گرو داس انسٹی ٹیوٹ آف انجینئرنگ اینڈ ٹیکنالوجی میں انجینئرنگ کے ایک طالب علم عاقب نے صحافیوں کو بتایا کہ اتر پردیش اور بہار کے کچھ طلباء لاٹھیوں کے ساتھ ان کے کمروں میں گھس گئے اوران پر حملہ کیا۔

انہوں نے کہاکہ ہم اپنے ہوسٹل کے کمروں میں تھے اور باہر سے شور کی آواز آئی۔ ہم یہ دیکھنے گئے کہ کیا ہو رہا ہے تودیکھا کہ کچھ لوگ دوسرے بلاک میں کشمیری طلباء پر حملہ کر رہے ہیں۔ اسی کالج سے تعلق رکھنے والے ایک اور طالب علم شعیب نے بتایا کہ حملہ آوروں نے ہمارے کمروں کی کھڑکیوں کے شیشے توڑ دیے اور مسلسل ’’آپ پاکستانی ہیں‘‘کے نعرے لگا رہے تھے۔

انہوں نے کہاکہ ہم نے اپنے آپ کو کمروں میں بند کر رکھا ۔انہوں نے کہاکہ پنجاب سے مقامی لوگ جو زیادہ تر سکھ ہیں، ہماری مدد کے لیے آئے اور انہوں نے ہمیں حملوں سے بچانے کی کوشش کی۔جموں و کشمیر سٹوڈنٹس ایسوسی ایشن کے ترجمان ناصر کھوئی ہامی نے صحافیوں کو بتایا کہ انہیں میچ میں بھارت کی شکست کے بعد پنجاب کے مختلف کالجوں میں زیر تعلیم کشمیری طلباء کی طرف سے پریشان کن فون کالز موصول ہوئی ہیں۔

انہوں نے کہاکہ مجھے ان حملوں کی جو ویڈیوز موصول رہی ہیں وہ بہت تکلیف دہ ہیں۔

دوسری طرف وفاقی وزیر اطلاعات فواد چودھری نے کہا ہے کہ مقبوضہ کشمیر میں ٹیم کی جیت کا جشن مودی کی آنکھیں کھولنے کیلئے کافی ہے۔ وفاقی وزیر فواد چودھری نے پاک بھارت میچ کے بعد مقبوضہ کشمیر میں پاکستان کی جیت ہونے والے جشن کے بارے میں سوشل میڈیا کی ویب سائٹ ٹوئٹر پر تبصرہ کرتے ہوئے کہا ہے کہ مقبوضہ کشمیر میں ٹیم کی جیت کا جشن مودی اینڈکمپنی کی آنکھیں کھولنے کیلئے کافی ہے۔ ان کا کہنا ہے کہ بھارت میں مسلمانوں کو ذہنی اورجسمانی اذیت کا نشانہ بنانے کی مذمت کرتے ہیں۔

وفاقی وزیر برائے منصوبہ بندی اسد عمر نے قومی ٹیم کے کپتان بابر اعظم کو بھارتی ٹیم کوچائے پلانے کا مشورہ دیکر ایک بار پھر بھارت کے زخموں پر نمک چھڑک دیا۔ٹوئٹر پر اسد عمر نے بابراعظم کو ٹیگ کرتے ہوئے ٹوئٹ کی اور لکھا کہ بابر انہیں چائے پلانا نہیں بھولنا۔اسد عمر نے اپنی ٹوئٹ میں بھارت کیلئے 27 فروری کے اس واقعے کی یاد تازہ کی جب پاکستانی فضائیہ نے بھارتی پائلٹ ابھی نندن کے طیارے کو مار گرایا اور پاک فوج نے بھارتی پائلٹ کو گرفتار کیا جس کے بعد ابھی نندن کی پاکستانی فوج کی حراست میں ’فنٹاسٹک ٹی‘ کی ویڈیو سامنے آئی۔

آل انڈیا اتحادالمسلمین کے سربراہ اسدالدین اویسی کے مطابق انہوں نے پہلے ہی کہا تھا کہ پاکستان کے ساتھ میچ نہیں کھیلنا چاہیے۔اسدالدین اویسی نے نئی دہلی میں پریس کانفرنس کے دوران ایک سوال کے جواب میں کہا کہ میں نے واضح طور پرکہا تھا کہ پاکستان سے میچ نہ کھیلا جائے۔۔ ورلڈ ٹی ٹوئنٹی میں پاکستان کے ہاتھوں بھارت کی شکست کے بعد بھارتی انتہا پسندوں کی جانب سے مسلمان کرکٹر محمد شامی کے خلاف سوشل میڈیا پر نفرت انگیز مہم پر اسدالدین اویسی کا کہنا تھا کہ یہ سب ظاہر کرتا ہے کہ بھارت میں مسلمانوں کے خلاف نفرت، فرقہ پرستی اور بنیاد پرستی میں کتنا اضافہ ہوچکا ہے۔ان کا کہنا تھا کہ ٹیم میں 11 کھلاڑی ہوتے ہیں لیکن ان میں صرف ایک مسلمان کھلاڑی کو نشانہ بنانا تشویش ناک اور افسوس کی بات ہے۔

کشمیری طلباء پر حملے

ڈاکٹر وحید قریشی بطور محقق

قارئین : ہماری کاوش پسند آئے تو شیئر ، اپڈیٹ رہنے کیلئے فالو کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں