لابی یا کاروباری مفاد 42

ڈی جیISIکی تعیناتی میں تکنیکی خامی، جلد دور ہو جائیگی ،عمران خان

Spread the love

تعیناتی میں تکنیکی خامی

اسلام آباد (صرف اردو آن لائن نیوز) وزیر اعظم عمران خان نے تحریک انصاف

اور اتحادیوں کی پارلیمانی پارٹی کو جمعرات کو آگاہ کیا کہ قومی سلامتی کے

ادارے آئی ایس آئی کے سربراہ کی تعیناتی میں تکنیکی خامی تھی جو جلد ٹھیک

ہو جائے گی اب سب کچھ کلیئر ہے اور ڈی جی آئی ایس آئی کی تعیناتی کے

حوالے سے کوئی ابہام نہیں ہے ،پارلیمانی پارٹی کا اجلاس ہنگامی طور پر بلایا

گیا تھا جس پر اراکین نے چیف وہپ عامر ڈوگر سے احتجاج بھی کیا کیونکہ

اراکین کی اکثریت اس اجلاس میں نہیں پہنچ سکی آرمی چیف اور وزیرا عظم

کے درمیان نئے ڈی جی آئی ایس آئی کی تقرری کے حوالے سے موجودہ

صورت حال پر وزیر اعظم نے پارلیمانی پارٹی کو اعتماد میں لیا اور کہا کہ

میرے عسکری قیادت سے بہت اچھے تعلقات ہیں بلکہ میں دعویٰ سے کہتا ہوں

کہ آرمی چیف جنرل قمر جاوید باجوہ کے ساتھ مجھ سے بہتر تعلقات کسی کے

نہیں ہیں ،اس وقت حکومت اور فوج میں کسی قسم کی کوئی غلط فہمی بھی

نہیں ہے ،ڈی جی آئی ایس آئی کی تعیناتی میں ایک تکنیکی خامی تھی جو ٹھیک ہو

جائے گی ،اب ابہام بھی نہیں رہا سب کچھ واضح ہے ۔وزیر اعظم نے اعتراف

کیا کہ حکومت چاہتی تھی کہ افغان صورت حال کے تناظر میں موجودہ ڈی جی

آئی ایس آئی لیفٹیننٹ جنرل فیض حمید اپنا کام جاری رکھے لیکن آرمی چیف

جنرل قمر جاوید باجوہ کی جانب سے بتایا کہ آرمی ایکٹ میں اس بات کی مزید

گنجائش نہیں ہے ،وزیر اعظم نے یہ بھی کہا کہ نئے ڈی جی آئی ایس آئی کے

نوٹیفکیشن جلد جاری ہو جائیگا کیونکہ اس حوالے سے جو ابہام تھا وہ دور ہوگیا

ہے ،اراکین نے بھی وزیرا عظم سے مطالبہ کیا کہ اس مسئلے کو جلد حل کیا

جائے کیونکہ میڈیا اور عوام میں ڈی جی آئی ایس آئی کی تعیناتی کے معاملے پر

حکومت کے خلاف منفی تاثر بڑھ رہا ہے ۔اراکین نے اپنے حلقوں کے مسائل حل

کرنے اور مہنگائی پر قابو پانے کے بھی مطالبات کئے اور کہا کہ بڑھتی ہوئی

مہنگائی نے عوام کا جینا دو بھر کر دیا ہے حکومت کو اس طرف توجہ دینی

چاہیے،وزیرا عظم نے افغانستان کی صورت حال پر پارلیمانی پارٹی کو اعتماد

میں لیا اور کہا کہ افغانستان میں امن و استحکام کے لئے تمام شراکت داروں کو

اپنا کردار ادا کرنا ہوگا ،پاکستان اس حوالے سے کلیدی کردار ادا کرتا رہے گا

کیونکہ پاکستان میں امن کے لئے افغانستان میں امن و استحکام نا گزیر ہے ۔

وزیراعظم عمران خان نے کہا کہ بلوچستان کی ترقی حکومت کی اولین

ترجیحات میں شامل ہے۔وزیر اعظم عمران خان سے وزیر اعلیٰ بلوچستان جام

کمال کے درمیان ملاقات ہوئی، ملاقات میں وزیرِ اعظم کو بلوچستان پیکیج کے

تحت جاری ترقیاتی منصوبوں پر پیش رفت سے آگاہ کیا گیا۔اس موقع پر

وزیراعظم کا کہنا تھا کہ بلوچستان کی ترقی حکومت کی اولین ترجیحات میں

شامل ہے، حکومت نے بلوچستان کیلئے تاریخی پیکیج کا اعلان کیا۔ بلوچستان کی

افرادی قوت ملک کا اصل اثاثہ ہے۔ان کا کہنا تھا کہ حکومت بلوچ نوجوانوں کو

قومی دھارے میں شامل کرنے کیلئے ترجیحی بنیادوں پر اقدامات اٹھا رہی ہے۔

وزیراعظم عمران خان نے کہا ہے کہ ہماری حکومت درختوں کے تحفظ کے

لیے پرعزم ہے۔ سماجی رابطے کی ویب سائٹ ٹوئٹر پر اپنے بیان میں وزیراعظم

عمران خان نے کہا کہ درختوں کا تحفظ ہر ممکن طریقے سے کیا جا رہا ہے ،

درخت اگا کر ایک سے دوسری جگہ منتقل کر کے محفوظ بنا رہے ہیں۔ عمران

خان نے کہاہے کہ حکومت ملک میں سرمایہ کاری اور برآمدات کے فروغ

کیلئے اقدامات اٹھا رہی ہے،سرمایہ کار حکومتی کاروبار دوست پالیسیوں پر

اعتماد کا اظہار کر رہے ہیں۔ جمعرات کو وزیرِ اعظم عمران خان سے مشیرِ

تجارت و سرمایہ کاری عبدالرزاق داو¿د اور خواجہ جلال الدین رومی نے

ملاقات کی جس میں وزیرِ اعظم کو دبئی ایکسپو 2020 میں پاکستان میں سرمایہ

کاری کے فروغ کیلئے کیے گئے اقدامات پر بریفنگ دی گئی،ملاقات میں

بلوچستان میں آرگینک کپاس کی موجودہ استعداد کے حوالے سے گفتگو ہوئی،مزید

وزیرِ اعظم کو نئی ٹیکسٹائل پالیسی پر پیش رفت اور اسکے جلد نفاذ کے حوالے

سے آگاہ کیا گیا

تعیناتی میں تکنیکی خامی

تعیناتی میں تکنیکی خامی

ڈاکٹر وحید قریشی بطور محقق

قارئین : ہماری کاوش پسند آئے تو شیئر ، اپڈیٹ رہنے کیلئے فالو کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں