47

بھارتی فوج کے بے بنیاد پراپیگنڈہ کا مقصد انسانی حقوق کی خلاف ورزیوں سے توجہ ہٹانا ہے, جنرل باجوہ

Spread the love

انسانی حقوق خلاف ورزیوں

راولپنڈی (صرف اردو آن لائن نیوز) آرمی چیف جنرل قمر جاوید باجوہ نے کہا ہے کہہ بھارتی فوج کا بے بنیاد پروپیگنڈا ان کی مایوسی کا مظہر ہے،

بھارتی پروپیگنڈے کا مقصد بھارت کے اندرونی تنازعات اور انسانی حقوق کی سنگین خلاف ورزیوں سے توجہ ہٹانا ہے۔پاک فوج کے شعبہ تعلقات عامہ کے مطابق جنرل ہیڈ کوارٹرز (جی ایچ کیو) راولپنڈی میں آرمی چیف جنرل قمر جاوید باجوہ کی زیر صدارت کورکمانڈرز کانفرنس کا انعقاد ہوا۔

شرکا کانفرنس کو پاکستان کو غیرمستحکم کرنے اور مشکلوں سے حاصل امن و سلامتی کو خراب کرنے کے دشمن قوتوں کے عزائم پر بریفنگ دی گئی،

فورم نے بھارتی فوج کے مکروہ پروپیگنڈے کا نوٹس لیا،کانفرنس میں پاکستان کی علاقائی سلامتی کے لیے تمام ضروری اقدامات اٹھانیکا عزم کیا گیا۔ ، کور کمانڈرز نے افغانستان کی انسانی اور سیکیورٹی صورتحال پرتشویش کا اظہار کرتے ہوئے عالمی برادری پر زور دیا کہ وہ بامقصد اور پائیدار بات چیت سے افغانستان میں امن واستحکام کو یقینی بنانے کی راہ ہموار کرے ۔

شرکاء نے علاقے میں تیزی سے بدلتی ہوئی سیکیورٹی کی صورتحال کا تفصیلی جائزہ لیا خصوصی طور پر داخلی سلامتی اور بارڈر مینجمنٹ سے متعلق امور زیر غور آئے ۔

کانفرنس کے شرکاء کو بتایا گیا کہ پاکستان کو عدم استحکام کا شکار کرنے والی نادیدہ قوتوں کے عزائم کو ناکام بنانے کیلئے اقدامات اٹھائے گئے ہیں یہ قوتیں سخت محنت سے حاصل کردہ امن اور سلامتی کے اثرات ضائع کرنا چاہتی ہیں ۔

کور کمانڈرز نے بھارتی فوج کے بے بنیاد اور گھناؤنے پروپیگنڈے کا بھی سخت نوٹس لیا اور اس عزم کا اعادہ کیا کہ پاکستان کی جغرافیائی حدود اور عزت و وقار کے تحفظ کیلئے تمام ضروری اقدامات اٹھائے جائینگے ۔

آرمی چیف نے کہا کہ بھارتی فوج کا بے بنیاد پروپیگنڈہ ان کی فرسٹیریشن کو واضح کرتا ہے اور بھارتی فوج اپنے اندرونی مسائل سے توجہ ہٹانے کیلئے یہ پروپیگنڈہ کررہی ہے کیونکہ بھارتی فوج کے زیر تسلط مقبوضہ جموں وکشمیر میں انسانی حقوق کی بدترین خلاف ورزیاں جاری ہیں جن پر پردہ ڈالنے کیلئے اس قسم کا بے بنیاد پروپیگنڈہ کیا جاتا ہے

کور کمانڈرز نے افغانستان کی موجودہ انسانی اور سیکیورٹی صورتحال پر تشویش کا اظہار کیا اور کہا کہ عالمی برادری کو چاہیے کہ وہ ایک بامقصد اور پائیدار مذاکرات کے ذریعے افغانستان میں امن و استحکام کی راہ ہموار کرے

اور یہ بہت ضروری ہے آرمی چیف نے مختلف فارمیشنز کی آپریشنل تیاریوں اور تربیت کے اعلیٰ معیار کو سراہا اور کہا کہ مختلف ممالک کی افواج کے ساتھ افواج پاکستان کا تعاون کا فروغ بھی خوش آئند ہے

انہوں نے مختلف ممالک کے ساتھ آپریشنل اور انسداد دہشتگردی کے شعبوں میں مشترکہ مشقوں کے انعقاد کی بھی تعریف کی

انسانی حقوق خلاف ورزیوں


ڈاکٹر وحید قریشی بطور محقق

قارئین : ہماری کاوش پسند آئے تو شیئر ، اپڈیٹ رہنے کیلئے فالو کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں