کورونا ویکسین 29 ہلاک 35

امریکا کا ویکسینیٹڈ افراد کے لیے سفری پابندیاں ہٹانے کا فیصلہ

Spread the love

پابندیاں ہٹانے کا فیصلہ

واشنگٹن (صرف اردو آن لائن نیوز) امریکا نے نومبر سے ویکسین شدہ افراد پر سے تمام سفری پابندیاں ہٹانے کا فیصلہ کیا ہے۔وائٹ ہائوس کے عہدیدار نے کہا ہے کہ مکمل ویکسین والے مسافر نومبر سے امریکا میں داخل ہوسکیں گے۔

عہدیدار کا کہنا ہے کہ امریکا گزشتہ سال سے سفری پابندی کے شکار ملکوں سے غیر امریکی شہریوں کو ملک میں آنے کی اجازت دینے کا ارادہ رکھتا ہے۔امریکہ اپنی کورونا وائرس سفری پابندیوں میں نرمی کے ساتھ ، برطانیہ ، یورپی یونین اور دیگر ممالک کے مسافر کو آنے کی اجازت دیگا۔

یوپی یونین کے ممالک کی جانب سے کیے گئے مطالبے کے بعد یہ اقدام اٹھانے کا فیصلہ کیا گیا ہے جس کے بعد بہت سے رشتہ دار اور دوست لمبے عرصے بعد مل سکیں گے۔نئے قواعد کے تحت ، غیر ملکی مسافروں کو پرواز سے پہلے ویکسینیشن کے ثبوت دکھانے ، سفر کے تین دن کے اندر منفی کوویڈ 19 ٹیسٹ کا نتیجہ حاصل کرنے اور اپنے رابطوں کی معلومات فراہم کرنے کی ضرورت ہوگی۔

کسی مسافر کو قرنطینہ کرنے کی ضرورت نہیں ہوگی۔ نئی پالیسی میں کچھ استثنیٰ بھی شامل ہوں گے ، جیسے کہ ان بچوں کے جو ویکسین کے اہل نہیں ہیں ان قواعد سے استثنیٰ دیا جائے گا۔لیکن فی الحال یہ واضح نہیں ہوسکا کہ نئے قواعد صرف امریکی منظور شدہ ویکسینوں پر لاگو ہوں گے یاتمام ویکسینوں پر؟

وائٹ ہاوس عہدیدار نے کہا کہ اس کا تعین امریکی مرکز برائے بیماری کنٹرول کرے گا۔امریکہ نے سفری پابندیاں ابتدائی طور پر 2020 کے اوائل میں چین سے آنے والے مسافروں پر عائد کی گئی تھیں۔

بعد یہ پابندیاں کورونا وائرس کے پھیلاو کے ساتھ دوسرے ممالک تک بھی بڑھا دی گئیں تھیں۔اس وقت بیشتر غیر امریکی شہریوں کے داخلے پر پابندی عائد ہے جو گزشتہ 14 دنوں میں برطانیہ اور دیگر یورپی ممالک ، چین ، بھارت ، جنوبی افریقہ ، ایران اور برازیل میں رہے ہیںـ

پابندیاں ہٹانے کا فیصلہ

ڈاکٹر وحید قریشی بطور محقق

قارئین : ہماری کاوش پسند آئے تو شیئر ، اپڈیٹ رہنے کیلئے فالو کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں