طالبان جنگ ختم اعلان 65

شہری سرکاری گاڑیاں ،املاک اسلحہ جمع کرادیں،ذبیح اﷲ مجاہد

Spread the love

شہری سرکاری گاڑیاں اسلحہ

کابل ،واشنگٹن،پیرس (صرف اردو آن لائن نیوز) افغان پارلیمنٹ کے 18 ممبران اور7 صوبوں کے گورنرز نے افغان طالبان کی حمایت کا اعلان کردیا۔

میڈیا رپورٹس کے مطابق حمایت کرنے والوں میں سابق صدر اشرف غنی کے بھائی حشمت غنی ،پاکستان میں سابق افغان سفیر عمر ذاخیلوال ،افغان رہنما حامد گیلانی، اسحاق گیلانی، شر محمد اخونزاد اور حاجی دین محمد اور احمدزئی قبائل کی قومی شوریٰ بھی شامل ہے ،

دوسری جانب طالبان کی جانب سے افغانستان میں نگران حکومت بنانے کا فیصلہ کیا گیا ہے جبکہ کابینہ کیلئے مشاورت کا عمل جاری ہے۔طالبان شوریٰ کے رکن کے مطابق نگران حکومت میں تمام قبائلی رہنماؤں اور طالبان کمانڈرز کو شامل کیا جائے گا اور ابتدائی طورپر 12 ناموں پرغور کیا جارہا ہے۔

شوریٰ رکن نے بتایا کہ عدلیہ، داخلی سلامتی، امورخارجہ اور دفاع کیلئے تقرریاں کی جائیں گی۔ان کا کہنا تھا کہ طالبان کے ملٹری ونگ کے سربراہ ملایعقوب بھی قندھار سے کابل کیلئے روانہ ہوچکے ہیں۔

دوسری جانب رپورٹس کے مطابق امریکا بھی نئی انتظامیہ میں حامد کرزئی اور عبداﷲ عبداﷲ سمیت سابقہ حکومتوں کے بعض ارکان کی شمولیت پر زور دے رہا ہے۔

ادھر ترجمان طالبان ذبیح اﷲ مجاہد کی جانب سے سوشل میڈیا پر جاری بیان میں کہا گیا کہ شہری سرکاری املاک، گاڑیاں اور اسلحہ ایک ہفتے میں جمع کروا دیں۔ذبیح اﷲ مجاہد نے کہا کہ شہری سرکاری اشیا ایک ہفتے کے اندر اندر متعلقہ محکموں میں جمع کروا دیں تاکہ وہ کسی بھی قسم کی قانونی کارروائی سے بچ سکیں۔

خیال رہے کہ اس سے قبل بھی طالبان نے دارالحکومت کابل میں شہریوں کو اسلحہ جمع کروانے کی ہدایت کرتے ہوئے کہا تھا کہ پہلے شہریوں نے اپنی حفاظت کے لیے اسلحہ رکھا ہوا تھا لیکن اب انہیں حفاظت کی ضرورت نہیں ہے کیونکہ ہم ان کی حفاظت کے لیے موجود ہیں۔

قبل ازیں امریکہ نے افغانستان میں ڈرون حملہ کرکے کابل ایئرپورٹ بم دھماکوں کے ممکنہ منصوبہ ساز کو ہلاک کرنے کا دعوی کیا ہے،غیر ملکی خبر ایجنسی کے مطابق امریکی ڈرون طیاروں نے افغان صوبے ننگر ہار میں ایک چلتی گاڑی پر ڈرون حملہ کیا،

گاڑی میں 2افراد سوار تھی جن میں سے ایک ممکنہ طور پر کابل ایئرپورٹ پر حملے کے ماسٹر مائنڈ جبکہ دوسرا اس کا دوست تھا،حملے میں دونوں ہلاک ہوگئے ،

امریکی سینٹرل کمانڈ کے کیپٹن بل اربن نے افغانستان میں کئے گئے ڈرون حملے کی تصدیق کرتے ہوئے کہا کہ ابتدائی شواہد سے معلوم ہوتا ہے کہ ہم نے ہدف کو ہلاک کر دیا ہے۔امریکی سفارتخانے نے ایک اور دہشتگرد حملے کے خدشے کے پیش نظر افغانستان میں مقیم اپنے تمام شہریوں کو ایک بار پھر کابل ائیر پورٹ فوری چھوڑنے کی ہدایت کی ہے۔

میڈیارپورٹس کے مطابق ترجمان وائٹ ہاؤس جین ساکی نے بتایاکہ نیشنل سکیورٹی ٹیم نے امریکی صدر جو بائیڈن کو کابل میں حامد کرزئی ائیر پورٹ پر ایک اور دہشت گرد حملے کی اطلاع دی ہے لیکن ہم زیادہ سے زیادہ حفاظتی اقدامات کر رہے ہیں۔

دوسری جانب امریکی نشریاتی ادارے کا کہنا تھا کہ سفارتخانے نے شہریوں کو دہشتگردی کے خدشے کے پیش نظر کابل ائیرپورٹ اور اس کے داخلی دروازوں کے قریب جانے سے خبردار کیا ہے۔

مزیدبرآں فرانس نے کابل ائیرپورٹ کے ذریعے اپنے شہریوں کو نکالنے کا کام ختم کرنے کا اعلان کیا ہے۔میڈیارپورٹس کے مطابق بتایا گیا ہے کہ 15 اگست کو شروع ہونے والے اس مشن کے ذریعے تین ہزار افراد کو افغانستان سے نکالا گیا، جن میں 26 سو ایسے افغان باشندے بھی شامل تھے، جنہیں فرانس میں پناہ دی گئی تھی۔

شہری سرکاری گاڑیاں اسلحہ

ڈاکٹر وحید قریشی بطور محقق

قارئین : ہماری کاوش پسند آئے تو شیئر ، اپڈیٹ رہنے کیلئے فالو کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں