44

خاشقجی قتل سے متعلق امریکی رپورٹ میں سیاسی مقاصد کے لیے ردوبدل کیا گیا

Spread the love

خاشقجی قتل امریکی رپورٹ

واشنگٹن (صرف اردو آن لائن نیوز) امریکا کی نیشنل انٹیلی جنس کے سابق قائم مقام ڈائریکٹر رچرڈ گرینیل نے قراردیا ہے کہ بائیڈن انتظامیہ کی جانب سے مقتول

سعودی صحافی جمال خاشقجی کے قتل سے متعلق جاری کردہ خفیہ رپورٹ میں سیاسی مقاصد کے لیے ردوبدل کیا گیا ہے۔میڈیارپورٹس کے مطابق گرینیل نے

ایک ٹویٹ میں کہا کہ بائیڈن کی ٹیم کی طرف سے جاری کردہ خاشقجی رپورٹ میں کوئی نئی چیز نہیں ہے،یہ بس مفت بری میں انٹیلی جنس کو نئے سرے سے

پیک کرکے پیش کیا گیا ہے اور سیاسی مقاصد کے لیے انٹیلی جنس معلومات میں قطع وبرید کی گئی ہے۔امریکی صدر جو بائیڈن کی انتظامیہ نے اگلے روز اس

رپورٹ کو ڈی کلاسیفائی کیا ۔اس میں سعودی ولی عہد شہزادہ محمد بن سلمان پر یہ الزام عاید کیا گیا کہ انھوں نے 2018 میں خاشقجی آپریشن کی منظوری دی

تھی۔اس کے نتیجے میں ترکی کے شہراستنبول میں واقع سعودی عرب کے قونصل خانے میں جمال خاشقجی کا قتل ہوا تھا۔سعودی عرب نے گذشتہ جمعہ کو ایک بیان

میں امریکا کی جمال خاشقجی کے قتل کیس سے متعلق اس جائزہ رپورٹ کو منفی ، جھوٹ پر مبنی اور غلط قرار دے کر مسترد کردیا تھا اور کہا تھا کہ یہ اس کے

لیے بالکل ناقابل قبول ہے۔سعودی وزارت خارجہ نے بیان میں کہاکہ اس رپورٹ میں نامکمل اور غلط معلومات ہیں اور ان کی بنیاد پر سعودی قیادت کے بارے میں

غلط نتیجہ اخذ کیا گیا ہے۔

خاشقجی قتل امریکی رپورٹ

ڈاکٹر وحید قریشی بطور محقق

قارئین : ہماری کاوش پسند آئے تو شیئر ، اپڈیٹ رہنے کیلئے فالو کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں