28

سینیٹ کی سیٹ کا ریٹ 50 سے 70 کروڑ روپے لگ چکا , عمران خان

Spread the love

سینیٹ سیٹ کا ریٹ

راولپنڈی،کلرسیداں(صرف اردو آن لائن نیوز) وزیراعظم عمران خان نے کہا ہے

کہ اگر اوپن بیلٹنگ نہ ہوئی تو اپوزیشن والے روئیں گے، سیکریٹ ووٹنگ کے

تحت حکومت کو اپوزیشن سے زیادہ سیٹیں مل سکتی ہیں، سینیٹ انتخابات

2018میں ایم پی ایز کی ویڈیوز کی ٹائمنگ کا سوال نہیں ہونا چاہیے، اصل ایشو یہ

ہے کہ کیا موجودہ نظام کے تحت سینیٹ کے الیکشن ہونے چاہئیں کہ نہیں ۔ بدھ کو

کلر سیداں میں تقریب سے خطاب کے بعد وزیراعظم عمران خان نے غیر رسمی

گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ سینیٹ انتخابات 2018میں پیسے لینے والوں کی ویڈیو

پہلے ہوتی تو اپنے خلاف مقدمات میں عدالت میں پیش کرتا جبکہ سوال یہ نہیں ہونا

چاہیے کہ ویڈیو کی ٹائمنگ کیا ہے، اہم بات یہ ہے کہ ویڈیو سے میری بات کی

تائید ہوتی ہے۔ وزیراعظم نے کہا کہ یاد رکھیں اگر اوپن بیلٹنگ نہ ہوئی تو اپوزیشن

والے روئیں گے اور سیکٹریٹ ووٹنگ پر حکومت کو اپوزیشن سے زیادہ سیٹیں

مل سکتی ہیں۔ انہوں نے کہا کہ بلوچستان میں سینیٹ کے ووٹ کی قیمت 50 سے

70کروڑ روپے لگ رہی ہے اور کیسے ممکن ہے کہ پیسہ لگا کر سینیٹر بننے والا

پیسہ نہیں بنائے گا جبکہ کئی دفعہ پہلے مجھے بھی پیسوں کے عوض سیٹ

بیچنے کی آفر ہوئی، ڈائریکٹ ان ڈائریکٹ سینیٹ سیٹ بیچنے کیلئے رابطے کئے

گئے۔ وزیراعظم عمران خان نے گفتگو میں کہا کہ نون لیگ اور پیپلز پارٹی نے

چارٹر آف ڈیمو کریسی میں اوپن بیلٹ کا معاہدہ کر چکی ہے اور میں مسلم لیگ

نون کے اوپن بیلٹ کے مطالبے کی تائید کر چکا ہوں۔ انہوں نے کہا کہ ویڈیوز کی

ٹائمنگ پر سوالتا اٹھانے کے بجائے ہمیں دیکھنا ہے کہ اصل ایشو یہ ہے کہ کیا

موجودہ نظام انتخاب کے تحت سینیٹ الیکشن ہونے چاہیں یا نہیں۔ انہوں نے کہا کہ

سینیٹ میں ووٹوں کی خریدوفروخت میں سب سے زیادہ مال فضل الرحمان نے بنایا

ہے اور اپوزیشن جماعتیں سینیٹ الیکشن کے کرپٹ نظام کو سپورٹ کررہی ہیں،

فضل الرحمان اس نظام کے سب سے بڑے بینیفشری ہیں۔ وزیراعظم عمران خان

نے کہا ہے کہ احساس کفالت پروگرام شفاف ہے، کوئی اس پر انگلی نہیں اٹھا

سکتا،حکومت کا فرض ہوتا ہے کمزور طبقے کی مدد کرے،لبنان میں رقم کی

غیرمنصفانہ تقسیم کے باعث لوگ مظاہرہ کر رہے ہیں لیکن یہاں پیسوں کی تقسیم

کو کوئی غیر منصفانہ نہیں کہہ سکتا،مستحقین کو ہیلتھ کارڈ کی سہولت دے رہے

ہیں ،نیا پاکستان ہاؤسنگ اسکیم مزدوروں کیلئے ہے جو کبھی اپنا گھر نہیں خرید

سکتے۔احساس کفالت پروگرام کے دوسرے مرحلے کی ایک تقریب سے خطاب

کرتے ہوئے وزیر اعظم عمران خان نے کہا کہ ہمارا یہ پروگرام غریب لوگوں پر

احسان نہیں بلکہ حکومت کا فرض ہوتا ہے کہ اپنے اس طبقے کو جو کمزور ہے

اس کی حمایت کریں، ان کی مدد کریں۔انہوں نے کہا کہ ہم آپ کو ایک صحت کارڈ

دیں گے، جس کا مطلب آپ ساڑھے 7 لاکھ روپے تک کسی بھی ہسپتال میں علاج

کروانا چاہیں گے تو وہ مفت ہوگا۔انہوں نے کہا کہ ہماری نیا پاکستان ہاؤسنگ

اسکیم مزدوروں کے لیے ہے جو کبھی اپنا گھر نہیں خرید سکتے، ہم ایک نیا ایسا

سسٹم لارہے ہیں کہ بجائے کرایہ دینے کے وہی رقم قسطوں میں چلی جائے گی

اور گھر آپ کا ہوجائے گا، اس کے لیے بھی ہم کوشش کر رہے ہیں، اس کے

علاوہ ہم اخوت کے ساتھ مل کام کر رہے ہیں اور انہیں ساڑھے 3 ارب روپے دے

چکے ہیں اور آگے 10 ارب روپے دیں گے تاکہ مستحق لوگوں کو وہ بغیر سود

کے قرضے دیں۔وزیر اعظم نے کہا کہ ہم آپ کو اپنے کاروبار کرنے کے لیے مدد

کریں گے۔انہوں نے کہاکہ ہم پوری کوشش کر رہے ہیں کہ احساس پروگرام کے

تحت 12 ہزار روپے مستحق لوگوں کو جائیں کیونکہ ہم نے ایسی فہرستیں دیکھی

ہیں جس میں وہ لوگ بھی شامل تھے جو مستحق نہیں تھے، ان کی پہلے نوکریاں

تھی، 8لاکھ 20ہزار سرکاری ملازم تھے انہیں نکالا جبکہ اب 30ہزار ایسے

لوگوں کو نکالا جو مستحق نہیں تھے کیونکہ ہماری کوشش ہے کہ یہ رقم صرف

مستحق افراد کو جائے۔انہوں نے کہاکہ لبنان کی حکومت نے کورونا کے دوران

سیاسی بنیادوں پر لوگوں میں پیسے بانٹے، لبنان میں رقم کی غیرمنصفانہ تقسیم کے

باعث لوگ مظاہرہ کر رہے ہیں لیکن یہاں کوئی نہیں کہہ سکتا کہ ہم نے احساس

پروگرام مں رقم کی تقسیم غیر منصفانہ کی، یہ ثانیہ نشتر کی ٹیم کو کریڈٹ جاتا

ہے کہ کہیں سے یہ آواز نہیں آئی کہ پیسے کی تقسیم غیرمنصفانہ تھی بلکہ سندھ

کی آبادی کے حساب سے ہم نے زیادہ پیسہ سندھ میں دیا، حالانکہ ہماری وہاں

حکومت نہیں تاہم ہم نے میرٹ کی بنیاد پر یہ کیا۔وزیر اعظم نے کہاکہ ہم آج سے

اس کا دوسرا مرحلہ شروع کر رہے ہیں جس میں 70 لاکھ خاندانوں میں ہم آج سے

پیسے بانٹنا شروع کر رہے ہیں، ہماری کوشش ہے کہ اس کی منصفانہ تقسیم ہو

اور سیاسی بنیادوں یا من پسندوں کو پیسہ نہیں بانٹا جائے گا۔

عمران خان

سینیٹ سیٹ کا ریٹ

صدارتی امیدوار جو بائیڈن نے ٹی وی مباحثے میں ٹرمپ کو ’مسخرہ‘ کہہ دیا

قارئین : ہماری کاوش پسند آئے تو شیئر ، اپڈیٹ رہنے کیلئے فالو کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں