بھوک بیماری عمران خان 36

کورونا وباکے باوجودملک صحیح سمت پر گامزن, عمران خان

Spread the love

اسلام آباد(صرف اردو آن لائن نیوز) ملک صحیح سمت پر

وزیراعظم عمران خان نے کہا ہے کہ ملک میں گندم اور چینی کا بحران پیدا نہیں

ہونے دیں گے، غلط وقت پر بارش سے فصل کو نقصان ہوا اور موسمیاتی تبدیلیوں

کی وجہ سے گندم کی 2 فصلیں تباہ ہوئیں جس کے نتیجے میں ملک میں تخمینے

سے کم گندم پیدا ہوئی، چینی پر بدقسمتی سے ملک میں کارٹلائزیشن ہے،اس کے

خلاف اقدامات کررہے ہیں،، ان دونوں مسائل کے سوا پاکستان کے تمام اشاریے

مثبت ہیں،17سال بعد کرنٹ اکاونٹ سرپلس میں چلا گیا ہے،اقتدار سنبھالا تو

20ارب ڈالر کا کرنٹ اکاونٹ خسارہ تھا،4ماہ سے پاکستان کے قرضوں میں کوئی

اضافہ نہیں ہو، مشکل وقت سے نکل کر ملک صحیح راستے پر چل رہا ہے، کئی

ملکوں کے اندر بڑھتا ہوا اسلامو فوبیا تشویشناک ہے۔جمعرات کونیا پاکستان

سرٹیفکیٹ لانچنگ کی تقریب سے وزیراعظم عمران خان نے خطاب کرتے ہوئے

کہا کہ اس اسکیم سے اوورسیز پاکستانی رقم بھی لاسکیں گے اور ریٹرن بھی اچھا

ملے گا، اوورسیز پاکستانیوں کو قائل کریں گے اپنا پیسا پاکستان لائیں۔سمندر پار

پاکستانی ملک کا سب سے بڑا سرمایہ ہیں۔ سمندر پار پاکستانی وطن سے سب سے

زیادہ محبت کرتے ہیں۔ سمندر پار پاکستانیوں کو ملک پیسہ لانے کیلئے موقع دے

رہے ہیں۔وزیراعظم نے کہا کہ کورونا کی وجہ سے ملک میں خوراک کی رسد

متاثر ہوئی، غلط وقت پر بارش سے فصل کو نقصان ہوا اور موسمیاتی تبدیلیوں کی

وجہ سے گندم کی 2 فصلیں تباہ ہوئیں جس کے نتیجے میں ملک میں تخمینے سے

کم گندم پیدا ہوئی۔عمران خان کا کہنا تھا کہ چینی پر بدقسمتی سے ملک میں

کارٹلائزیشن ہے، شوگر ملز مل کر قیمتوں میں اضافہ کردیتی ہیں، اس کے خلاف

اقدامات کررہے ہیں، قوم کو یقین دلاتا ہوں کہ اب آگے ایسا نہیں ہوگا، گندم اور

چینی دونوں میں یہ مسائل نہیں آنے دیں گے، ان دونوں مسائل کے سوا پاکستان کے

تمام اشاریے مثبت ہیں،17سال بعد کرنٹ اکاونٹ سرپلس میں چلا گیا ہے۔ بہت

محنت سے ہم نے برآمدات بڑھانے کی کوشش کی۔ ملکی معیشت بہتر انداز میں

آگے بڑھ رہی ہے۔ فخر ہے 17سال کے بعد ہمارا کرنٹ اکاونٹس سرپلس پر گیا۔

اقتدار سنبھالا تو 20ارب ڈالر کا کرنٹ اکاونٹ خسارہ تھا۔ کورونا کید وران پوری

دنیا کی معیشت متاثر ہوئی۔ گزشتہ حکومتوں کا بوجھ نہ ہوتا تو ہمیں مزید قرضے

نہ لینے پڑتے۔ 4ماہ سے پاکستان کے قرضوں میں کوئی اضافہ نہیں ہوا۔ مشکل

وقت سے نکل کر ملک صحیح راستے پر چل رہا ہے، تاہم خرچوں کو کم کرنے

سے مشکلات آتی ہیں۔وزیراعظم نے مزید کہا کہ گزشتہ حکومتوں کا بوجھ نہ ہوتا

تو ہمیں مزید قرضے نہ لینے پڑتے، اگر پچھلے قرضوں پر سود نہ دینا پڑے تو ہم

اس وقت اپنی آمدنی کو اخراجات سے اوپر لے آئے ہیں اور کسی قرضے کی

ضرورت منہ پڑے، ہم نے پچھلے 4 ماہ میں ملکی قرضے میں کوئی اضافہ نہیں

کیا، 17 برس بعد پاکستان کا کرنٹ اکانٹ خسارہ ایک کوارٹر میں سرپلس ہوگیا ہے

اور روپے کی قدر بھی بہتر ہورہی ہے۔ فیصل آباد میں ساری ٹیکسٹائل انڈسٹری چل

پڑی ہے۔ فیصل آباد کی ٹیکسٹائل انڈسٹری میں لیبر کی کمی ہوگئی ہے۔ ہم اپنے

خرچوں سے آمدنی اوپر لے آئے ہیں، جو اچھی بات ہے۔ اﷲ کا شکر ہے پاکستان

اب درست راستے پر چل پڑا ہے۔ عمران خان نے اس موقع پر کئی ملکوں میں

بڑھتے ہوئے اسلامو فوبیا پر بھی تشویش کا اظہار کیا اور کہا کہ کئی ملکوں کے

اندر بڑھتا ہوا اسلامو فوبیا تشویشناک ہے۔ وزیر اعظم عمران خان کی زیر صدارت

قومی رابطہ کمیٹی برائے ہاؤسنگ، تعمیرات و ڈیویلپمنٹ کا ہفتہ وار اجلاس منعقد

ہوا۔اجلاس کو آگاہ کیا گیاکہ تعمیراتی منصوبوں کو گیس اور بجلی کی جلد فراہمی

کا طریقہ کار وضع کر دیا گیا ہے۔سرویئر جنرل آف پاکستان نے اجلاس کو

کیڈسٹرل میپنگ ( تعین مال گزاری کے لئے زمین کی پیمائش) کے حوالے سے

بریف کیا گیا۔ اجلاس کو آگاہ کیا گیا کہ اسلام آباد، لاہور، کراچی، کوئٹہ، نوشہرہ

اور دیگر اضلاع میں میپنگ کا عمل جاری ہے۔ اس اقدام سے زمین کی اصل

ملکیت ثابت ہوگی اور غیر قانونی قبضے اور تجاوزات کو ختم کرنے میں مدد ملے

گی۔وزیر اعظم نے ہدایت کی کہ حکومتی اجازت ناموں و دیگر متعلقہ کاروائیوں

میں بے جا تاخیر نہ کی جائے اور سرمایہ کاروں کے لیے منظوریوں کا عمل سہل

بنایا جائے۔وزیر اعظم نے اس بات پر زور دیا کہ تعمیراتی سرگرمیوں میں اضافے

سے معاشی سرگرمیاں تیز ہوں گی۔ وزیر اعظم نے کہا کہ حکومت کی توجہ

سرمایہ کاروں کے لیے ہر شعبے میں آسانیاں پیدا کرنے پر مرکوز ہے۔دریں اثنا

وزیراعظم عمران خان نے 30سال بعد ٹیکسٹائل انڈسٹری مکمل بحال ہونے پر کہا

کہ ماشااﷲ ہمارا ملک کورونا وبا کے باوجودصحیح سمت پرگامزن ہے۔ جمعرات

کو سماجی رابطے کی ویب سائٹ ٹوئٹر پر اپنے بیان میں 30سال بعد ٹیکسٹائل

انڈسٹری مکمل بحال ہونے پر وزیر اعظم عمران خان نے ردعمل کا اظہار کرتے

ہوئے کہا ماشااﷲ ہمارا ملک کورونا وبا کے باوجودصحیح سمت پرگامزن ہے۔

وزیراعظم عمران خان سے سپیکر قومی اسمبلی اسد قیصرنے ملاقات کی ہے۔قومی

اسمبلی میں پارلیمانی امور اور قانون سازی سے متعلق امور پر مشاورت کی گئی ،

تنظیم برائے اقتصادی تعاون کی پارلیمانی یونین کی مجوزہ کانفرنس بارے بھی بات

چیت ہوئی،سی پیک منصوبے کے زیر اہتمام رشکئی خصوصی اکنامک زون سے

متعلق تبادلہ خیال کیا گیا،سپیکر اسد قیصر نے پشاور میں سی پیک سے متعلق

ہونے والے سیمینار سے آگاہ کیا،دونوں رہنماوں کے درمیان افغان وفد کے دورہ

پاکستان اور ٹریڈ کانفرنس کے کامیاب انعقاد پر بات چیت ہوئی ،ملاقات میں

پارلیمانی سفارتکاری کے ذریعے مختلف ممالک سے وفود کے تبادلے پر بھی اتفاق

کیا گیا۔

عمران خان

ملک صحیح سمت پر

صدارتی امیدوار جو بائیڈن نے ٹی وی مباحثے میں ٹرمپ کو ’مسخرہ‘ کہہ دیا

قارئین : ہماری کاوش پسند آئے تو شیئر ، اپڈیٹ رہنے کیلئے فالو کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں