قمر جلالوی 77

قمر جلالوی فن اور شخصیت(برسی پر خصوصی تحریر)

Spread the love

تحریر و انتخاب کلام : اسلم ملک

استاد قمر جلالوی کا اصل نام سید محمد حسین تھا۔ آپ ۱۹، اگست ۱۸۸۷کو علی گڑھ کے قصبے جلالی میں پیدا ہوئے۔ آپ کے آباء و اجداد کا سلسلہ مشہور ایرانی شخصیت ’’سید نجیب علی ہمدانی‘‘ سے ملتا ہے۔ آپ کے علاقے میں سکول و کالج نہ ہونے کی وجہ سے عربی، فارسی اور اردو کی ابتدائی تعلیم گھر پر حاصل کی۔(قمر جلالوی سلام اشعار)

آپ نے آٹھ سال کی عمر ہی میں موزوں اشعار کہنا شروع کر دئیے تھے۔ آواز میں غضب کا درد تھا۔ رفتہ رفتہ مشق سخن کے ساتھ ساتھ ان کی شہرت قصبہ جلالی کی حدود سے نکل کر علی گڑھ اور گرد و نواح میں پھیل گئی۔ صرف بائیس سال کی عمر میں آپ کو استاد کا درجہ حاصل ہو گیا تھا۔ جلالی اور علی گڑھ کے اکثر نوجوان اور جوان شعرأ انہیں اپنا کلام دکھانے لگے تھے

آپ کی شادی ۱۹۲۹ء میں محترمہ کنیزہ سیدہ سے ہوئی جن سے صرف ایک صاحبزادی کنیز فاطمہ ہیں۔ تقسیم ہند کے بعد آپ ۱۱، ستمبر ۱۹۴۷ء کو پاکستان تشریف لے آئے۔

استاد قمر جلالوی کے کلام میں بیان کی برجستگی، اسلوب کی سلاست، ایک چبھتی ہوئی بات کہنے کا انداز اور اس کے ساتھ ساتھ ایک مخصوص قسم کی ڈرامائیت پائی جاتی ہے۔ وہ اپنے مخصوص ترنم اور سلاست کی وجہ سے مشاعرہ لوٹ لیا کرتے تھے۔ ان کے کلام میں دہلی اور لکھنو کی چاشنی، شوخی اور لطافت نظر آتی ہے۔

غزل کے علاوہ مرثیہ، سلام، منقبت اور رباعی میں ایک خاص مقام رکھتے تھے۔

ان کے شعری مجموعوں میں اوج قمر، رشک قمر، غم جاوداں، عقیدت جاوداں شامل ہیں۔

ان کی متعدد غزلیں مختلف گلوکاروں نے بہت خوبصورت انداز میں گائی ہیں۔ نہ صرف پاکستان بلکہ بیرون ملک بھی ان کا کلام بہت شوق سے سنا جاتا ہے۔

حکومت پاکستان نے ۱۹۵۹ء میں ان کی ادبی خدمات کو سراہتے ہوئے ڈیڑھ سو روپے ماہوار وظیفہ تاحیات مقرر کیا۔

استاد قمر جلالوی آخری عمر میں یرقان کے مرض میں مبتلا ہو گئے تھے اور اسی بیماری کی وجہ سے ۲۴، اکتوبر ۱۹۶۸ء کو کراچی میں انتقال فرمایا۔

ان کی لوح مزار پر ان کا یہ شعر کنندہ ہے:

ابھی باقی ہیں پتوں پر جلے تنکوں کی تحریریں
یہ وہ تاریخ ہے، بجلی گری تھی جب گلستاں پر
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

معیاری اور نایاب اردو کتب پڑھنے اور داونلوڈ کرنے کے لیے یہاں کلک کریں

ﺳﺎﺭﺍ ﺩﻥ ﺳﺎﺋﯿﮑﻠﻮﮞ ﮐﻮ ﭘﻨﮑﭽﺮ ﻟﮕﺎﺗﮯ، ﺩﺭﻣﯿﺎﻥ ﻣﯿﮟ ﮐﻮﺋﯽ ﺷﻌﺮ ﮨﻮﺟﺎﺗﺎ ﺗﻮ ﮐﺎﻏﺬ ﭘﺮ لکھ ﮐﺮ ﺩﯾﻮﺍﺭ ﭘﺮ ﻟﮕﮯ ﺳﺎﺋﯿﮑﻞ ﮨﯽ ﮐﮯ ﺗﺎﺭ ﻣﯿﮟ ﭘﺮﻭ ﺩﯾﺘﮯ۔
ﺷﺎﻡ ﮨﻮﺗﮯ ﮨﯽ ﺍﺻﻼﺡ ﻟﯿﻨﮯ ﻭﺍﻟﮯ ﺷﺎﮔﺮﺩ ﺟﻤﻊ ﮨﻮﺟﺎﺗﮯ ﯾﺎ ﮐﺴﯽ ﻣﺸﺎﻋﺮﮮ ﮐﮯ ﻣﻨﺘﻈﻤﯿﻦ ﮐﯽ ﺑﮭﯿﺠﯽ ﮔﺎﮌﯼ ﺁﺟﺎﺗﯽ ﺍﻭﺭ ﺳﺐ ﻣﺸﺎﻋﺮﮮ ﮐﻮ ﭼﻞ ﺩﯾﺘﮯ۔ ﻣﺨﺼﻮﺹ ﺗﺮﻧﻢ ﺍﻭﺭ ﺳﻼﺳﺖِ ﺯﺑﺎﻥ ﮐﯽ ﺣﺎﻣﻞ ﺷﺎﻋﺮﯼ ﺳﮯ ﻣﺸﺎﻋﺮﮮ ﻟﻮﭦ ﻟﯿﺘﮯ۔
۔۔۔ ﯾﮧ ﺗﮭﮯ ﺍﺳﺘﺎﺩ ﻗﻤﺮ ﺟﻼﻟﻮﯼ جن کا ﺍﺻﻞ ﻧﺎﻡ ﻣﺤﻤﺪ ﺣﺴﯿﻦ ﻋﺎﺑﺪﯼ ﺗﮭﺎ، 19 اگست 1887 ﻣﯿﮟ ﺿﻠﻊ ﻋﻠﯽ ﮔﮍﮪ ﮐﮯ ﻗﺼﺒﮯ ﺟﻼﻟﯽ ﻣﯿﮟ ﭘﯿﺪﺍ ﮨﻮﺋﮯ ۔ ﻭﺍﻟﺪ ﺳﯿﺪ ﻏﻼﻡ ﺳﺠﺎﺩ ﺣﺴﯿﻦ ﺑﮭﯽ ﺷﻌﺮ ﮐﮩﺘﮯ ﺗﮭﮯ۔ ﺍﺱ ﺍﺛﺮ ﺳﮯ ﻣﺤﻤﺪ ﺣﺴﯿﻦ ﺁﭨﮭﮧ ﺳﺎﻝ ﮐﯽ ﻋﻤﺮ ﺳﮯ ﮨﯽ ﺷﻌﺮ ﮐﮩﻨﮯ ﻟﮕﮯ۔

ﻋﺮﺑﯽ، ﻓﺎﺭﺳﯽ، ﺍﺭﺩﻭ ﮐﯽ ﺗﻌﻠﯿﻢ ﮔﮭﺮ ﭘﺮ ﮨﯽ ﺣﺎﺻﻞ ﮐﯽ۔ 22 ﺳﺎﻝ ﮐﯽ ﻋﻤﺮ ﻣﯿﮟ ﺧﻮﺩ ﺍﺻﻼﺡ ﺩﯾﻨﮯ ﻟﮕﮯ۔ ﺍﺱ ﻃﺮﺡ ﺳﺎﺭﯼ ﻋﻤﺮ ﺍﺳﺘﺎﺩ ﮐﮩﻼﺋﮯ۔

ﺁﺯﺍﺩﯼ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﮐﺮﺍﭼﯽ ﺁﺋﮯ ﺗﻮ ﺫﺭﯾﻌﮧ ﺭﻭﺯﮔﺎﺭ ﻭﮨﯽ ﺳﺎﺋﯿﮑﻠﻮﮞ ﮐﯽ ﺩﮐﺎﻥ ﺍﻭﺭ ﻣﺸﺎﻋﺮﻭﮞ ﮐﺎ ﺍﻋﺰﺍﺯﯾﮧ ﺑﻨﺎ۔
ﺣﮑﻮﻣﺖِ ﭘﺎﮐﺴﺘﺎﻥ ﮐﯽ ﻃﺮﻑ ﺳﮯ 1959 ﻣﯿﮟ ﮈﯾﮍﮪ ﺳﻮ ﺭﻭﭘﮯ ﻭﻇﯿﻔﮧ ﻣﻘﺮﺭ ﮨﻮﺍ ﺟﻮ ﺗﺎ ﺣﯿﺎﺕ ﻣﻠﺘﺎ ﺭﮨﺎ۔ ﺍﻟﺒﺘﮧ ﻣﻨﯽ ﺑﯿﮕﻢ ﻧﮯ ﺍﻥ ﮐﮯ ﮐﻼﻡ ﺳﮯ ﻻﮐﮭﻮﮞ ﮐﻤﺎﺋﮯ ۔

کرنل محمد خان کو بچھڑے 21 برس گزر گئے

ﺍﺳﺘﺎﺩ ﮐﮯ ﻣﺠﻤﻮﻋﮯ ﻏﻢِ ﺟﺎﻭﺩﺍﮞ، ﺍﻭﺝِ ﻗﻤﺮ، رﺷﮏِ ﻗﻤﺮ ﺍﻭﺭ ﻋﻘﯿﺪﺕِ ﺟﺎﻭﺩﺍﮞ ﺷﺎﺋﻊ ﮨﻮﺋﮯ ۔

ﺍﺳﺘﺎﺩ ﮐﮯ ﭼﻨﺪ ﺍﺷﻌﺎﺭ:

ﺁﺷﯿﺎﻧﮯ ﮐﺎ ﺑﺘﺎﺋﯿﮟ ﮐﯿﺎ ﭘﺘﮧ ﺧﺎﻧﮧ ﺑﺪﻭﺵ
ﭼﺎﺭ ﺗﻨﮑﮯ ﺭﮐﮭ ﻟﺌﮯ ﺟﺲ ﺷﺎﺥ ﭘﺮ ﮔﮭﺮ ﮨﻮﮔﯿﺎ
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ﺳﻨﮯ ﺟﺎﺋﻮ ﺟﮩﺎﮞ ﺗﮏ ﺳﻦ ﺳﮑﻮ ﺟﺐ ﻧﯿﻨﺪ ﺁﺋﮯ ﮔﯽ
ﻭﮨﯿﮟ ﮨﻢ ﭼﮭﻮﮌ ﺩﯾﮟ ﮔﮯ، ﺧﺘﻢ ﻓﺴﺎﻧﮧ ﺗﻮ ﮐﯿﺎ ﮨﻮﮔﺎ
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ﮐﺐ ﻣﯿﺮﺍ ﻧﺸﯿﻤﻦ ﺍﮨﻞ ﭼﻤﻦ ﮔﻠﺸﻦ ﻣﯿﮟ ﮔﻮﺍﺭﺍ ﮐﺮﺗﮯ ﮨﯿﮟ
ﻏﻨﭽﮯ ﺍﭘﻨﯽ ﺁﻭﺍﺯﻭﮞ ﻣﯿﮟ ﺑﺠﻠﯽ ﮐﻮ ﭘﮑﺎﺭﺍ ﮐﺮﺗﮯ ﮨﯿﮟ
ﺍﺏ ﻧﺰﻉ ﮐﺎ ﻋﺎﻟﻢ ﮨﮯﻣﺠﮭﮧ ﭘﺮ ﺗﻢ ﺍﭘﻨﯽ ﻣﺤﺒﺖ ﻭﺍﭘﺲ ﻟﻮ
ﺟﺐ ﮐﺸﺘﯽ ﮈﻭﺑﻨﮯ ﻟﮕﺘﯽ ﮨﮯﺗﻮ ﺑﻮﺟﮭﮧ ﺍﺗﺎﺭﺍ ﮐﺮﺗﮯ ﮨﯿﮟ
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ﻣﺠﮭﮯ ﺍﭘﻨﮯ ﺩﻝ ﮐﯽ ﺗﻮ ﭘﺮﻭﺍ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﮯ
ﻣﮕﺮ ﮈﺭ ﺭﮨﺎ ﮨﻮﮞ ﮐﮧ ﺑﭽﭙﻦ ﮐﯽ ﺿﺪ ﮨﮯ
ﺑﻮﺳﮧٔ ﺧﺎﻝ ﮐﯽ ﻗﯿﻤﺖ ﻣِﺮﯼ ﺟﺎﮞ ﭨﮭﮩﺮﯼ ﮨﮯ
ﭼﯿﺰ ﮐﺘﻨﯽ ﺳﯽ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﮐِﺘﻨﯽ ﮔﺮﺍﮞ ﭨﮭﮩﺮﯼ ﮨﮯ
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ﻣﺠﮭﮯ ﺣﺸﺮ ﻣﯿﮟ ﭘﯿﺶ ﺩﺍﻭﺭ ﺟﻮ ﺩﯾﮑﮭﺎ
ﺫﺭﺍ ﺳﯽ ﻧﮑﻞ ﺁﺋﯽ ﺻﻮﺭﺕ ﮐﺴﯽ ﮐﯽ
ﺧﺪﺍ ﮐﮯ ﻟﺌﮯ ﯾﻮﮞ ﻧﮧ ﭨﮭﮑﺮﺍ ﮐﮯ ﭼﻠﺌﮯ
ﮐﮧ ﭘﺎﻣﺎﻝ ﮨﻮﺗﯽ ﮨﮯ ﺗﺮﺑﺖ ﮐﺴﯽ ﮐﯽ
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ﻭﮦ ﺳﺮ ﮐﮭﻮﻟﮯ ﮨﻤﺎﺭﯼ ﻻﺵ ﭘﺮ ﺩﯾﻮﺍﻧﮧ ﻭﺍﺭ ﺁﺋﮯ
ﺍِﺳﯽ ﮐﻮ ﻣﻮﺕ ﮐﮩﺘﮯ ﮨﯿﮟ ﺗﻮ ﯾﺎﺭﺏ ﺑﺎﺭﺑﺎﺭ ﺁﺋﮯ
ﻧﮧ ﺟﺎﻧﮯ ﮐﯿﺎ ﺳﻤﺠﮭ ﮐﺮ ﭼُﭗ ﮨﻮﮞ ﺍﮮ ﺻﯿّﺎﺩ ﻣﯿﮟ ﻭﺭﻧﮧ
ﻭﮦ ﻗﯿﺪﯼ ﮨﻮﮞ ﺍﮔﺮ ﭼﺎﮨﻮﮞ ﻗﻔﺲ ﻣﯿﮟ ﺑﮭﯽ ﺑﮩﺎﺭ ﺁﺋﮯ
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ﺑﺎﻏﺒﺎﮞ ﮐﻮ ﻟﮩﻮﮐﯽ ﺿﺮﻭﺭﺕ ﭘﮍﯼ ﺳﺐ ﺳﮯ ﭘﮩﻠﮯ ﯾﮧ ﮔﺮﺩﻥ ﮨﻤﺎﺭﯼ ﮐﭩﯽ
ﭘﮭﺮ ﺑﮭﯽ ﮐﮩﺘﮯ ﮨﯿﮟ ﮨﻢ ﺳﮯ ﯾﮧ ﺍﮨﻞِ ﭼﻤﻦ ﯾﮧ ﭼﻤﻦ ﮨﮯ ﮨﻤﺎﺭﺍ ﺗﻤﮩﺎﺭﺍ ﻧﮩﯿﮟ


ﺍﮨﻞِ ﺍﺩﺏ ﻏﻨﯿﻤﺖ ﺟﺎﻧﯿﮟ ﻗﻤﺮؔ ﮐﯽ ﮨﺴﺘﯽ
ﺍﮎ ﺷﻤﻊ ﺟﻞ ﺭﮨﯽ ﮨﮯ ﺍﺭﺩﻭ ﮐﯽ ﺍﻧﺠﻤﻦ ﮐﯽ

منتخب کلام
۔۔۔۔۔۔۔
سنُ سنُ کے مجھ سے وصف ترے اختیار کا
دل کانپتا ہے گردش ِ لیل و نہار کا

لاریب لاشریک شہنشاہِ کُل ہے تو!
سَر خم ہے ترے دَر پہ ہر اک تاجدار کا

محموُد تیری ذات محمّد(ص) تِرا رسول
رکھا ہے نام چھانٹ کے مختار ِ کار کا

ہوتا نہیں جو حکم تِرا صید کے لئے
صید چھوڑدیتا ہے پیچھا شکار کا

بنوا کے باغ ِ خُلد تِرے حکم کے بغیر
شدّاد منہ نہ دیکھنے پایا بہار کا

جاتی ہے تیرے کہنے سے گلزار سے خزاں
آتا ہے تیرے حکم سے موسم بہار کا

رزّاق تجھ کو مذہب و ملّت سے کیا غرض
خالق تو ہی ہے کافر و ایمان دار کا

کہنا پڑے گا لاکھ عبادت گزار ہو
بندہ گنہ گار ہے پرور دگار کا

منزل تو شے ہے دوسری لاکھوں گزر گئے
اب تک پتا چلا نہ تِری رھگزار کا

پایا جو پھل تو شاخ ِ ثمر دار جھک گئی
کہتی ہوئی کہ شکر ہے پروردگار کا

دے کر عروج اختر ِ قسمت کو اے قمر
مالک بنادیا مجھے شب کی بہار کا

سلام

بصَد خلوص و عقیدت سلام کہتی ہے
حسین ؓ تمکو محبت سلام کہتی ہے

لپٹ کے روئے تھے تم جس سے کربلا کے لیے
وہی رسول کی تربت سلام کہتی ہے

نواسے ختم رسل فخرِ انبیا کے ہو تم
ہر اک نبی کی نبوت سلام کہتی ہے

دمِ جہاد جو تھی بھوک پیاس کی شدت
وہ بھوک پیاس کی شدت سلام کہتی ہے

جو زیرِ خنجر شمر آپ نے ادا کی تھی
وہ کربلا کی عبادت سلام کہتی ہے

جو تو نہ ہوتا تو امت تمام پِھر جاتی
نبی کو تیری بدولت سلام کہتی ہے

جب آتا ہے کسی بزمِ عَزا میں نامِ حسین ؓ
خدا کی آخری حجت سلام کہتی ہے

حرم لٹے ہوئے بیٹھے تھے جس اندھیرے میں
قمر وہی سبِ ظلمت سلام کہتی ہے

مریضِ محبت انھی کا فسانہ سناتا رہا دم نکلتے نکلتے
مگر ذکر شامِ الم جب بھی آیا چراغِ سحَر بجھ گیا جلتے جلتے

انھیں خط میں لکھا تھا دل مضطرب ہے جواب ان کا آیا “محبت نہ کرتے
تمھیں دل لگانے کو کس نے کہا تھا؟ بہل جائے گا دل بہلتے بہلتے”

مجھے اپنے دل کی تو پروا نہیں ہے مگر ڈر رہا ہوں کہ بچپن کی ضد ہے
کہیں پائے نازک میں موچ آ نہ جائے دلِ سخت جاں کو مسلتے مسلتے

بھلا کوئی وعدہ خلافی کی حد ہے، حساب اپنے دل میں لگا کر تو سوچو
قیامت کا دن آ گیا رفتہ رفتہ، ملاقات کا دن بدلتے بدلتے

ارادہ تھا ترکِ محبت کا لیکن فریبِ تبسّم میں پھر آ گئے ہم
ابھی کھا کے ٹھوکر سنبھلنے نہ پائے کہ پھر کھائی ٹھوکر سنبھلتے سنبھلتے

بس اب صبر کر رہروِ راہِ الفت کہ تیرے مقدر میں منزل نہیں ہے
اِدھر سامنے سر پہ شام آ رہی ہے اُدھر تھک گئے پاؤں بھی چلتے چلتے

وہ مہمان میرے ہوئے بھی تو کب تک، ہوئی شمع گُل اور نہ ڈوبے ستارے
قمرؔ اس قدر ان کو جلدی تھی گھر کی کہ گھر چل دیے چاندنی ڈھلتے ڈھلتے

تربت کہاں لوحِ سرِ تربت بھی نہیں ہے
اب تو تمھیں پھولوں کی ضرورت بھی نہیں‌ہے

وعدہ تھا یہیں کا جہاں فرصت بھی نہیں ہے
اب آگے کوئی اور قیامت بھی نہیں ہے

اظہارِ محبّت پہ بُرا مان گئے وہ
اب قابلِ اظہار محبّت بھی نہیں ہے

کس سے تمھیں تشبیہہ دوں یہ سوچ رہا ہوں
ایسی تو جہاں میں کوئی صوُرت بھی نہیں ہے

تم میری عیادت کے لئے کیوں نہیں آتے
اب تو مجھے تم سے یہ شکایت بھی نہیں ہے

اچھا مجھے منظور قیامت کا بھی وعدہ
اچھا کوئی اب دور قیامت بھی نہیں ہے

باتیں یہ حسینوں کی سمجھتا ہے قمر خوب
نفرت وہ جسے کہتے ہیں نفرت بھی نہیں ہے

ﺍﺏ ﻣﺠﮭﮯ ﮔﻠﺸﻦ ﺳﮯ ﮐﯿﺎ ﺟﺐ ﺯﯾﺮ ﺩﺍﻡ ﺁ ﮨﯽ ﮔﯿﺎ
ﺍﮎ ﻧﺸﯿﻤﻦ ﺗﮭﺎ ﺳﻮ ﻭﮦ ﺑﺠﻠﯽ ﮐﮯ ﮐﺎﻡ ﺁ ﮨﯽ ﮔﯿﺎ

ﺳﻦ ﻣﺂﻝ ﺳﻮﺯ ﺍﻟﻔﺖ ﺟﺐ ﯾﮧ ﻧﺎﻡ ﺁ ﮨﯽ ﮔﯿﺎ
ﺷﻤﻊ ﺁﺧﺮ ﺟﻞ ﺑﺠﮭﯽ ﭘﺮﻭﺍﻧﮧ ﮐﺎﻡ ﺁ ﮨﯽ ﮔﯿﺎ

ﻃﺎﻟﺐ ﺩﯾﺪﺍﺭ ﮐﺎ ﺍﺻﺮﺍﺭ ﮐﺎﻡ ﺁ ﮨﯽ ﮔﯿﺎ
ﺳﺎﻣﻨﮯ ﮐﻮﺋﯽ ﺑﺤﺴﻦ ﺍﻧﺘﻈﺎﻡ ﺁ ﮨﯽ ﮔﯿﺎ

ﮐﻮﺷﺶ ﻣﻨﺰﻝ ﺳﮯ ﺗﻮ ﺍﭼﮭﯽ ﺭﮨﯽ ﺩﯾﻮﺍﻧﮕﯽ
ﭼﻠﺘﮯ ﭘﮭﺮﺗﮯ ﺍﻥ ﺳﮯ ﻣﻠﻨﮯ ﮐﺎ ﻣﻘﺎﻡ ﺁ ﮨﯽ ﮔﯿﺎ

ﺭﺍﺯ ﺍﻟﻔﺖ ﻣﺮﻧﮯ ﻭﺍﻟﮯ ﻧﮯ ﭼﮭﭙﺎﯾﺎ ﺗﻮ ﺑﮩﺖ
ﺩﻡ ﻧﮑﻠﺘﮯ ﻭﻗﺖ ﻟﺐ ﭘﺮ ﺍﻥ ﮐﺎ ﻧﺎﻡ ﺁ ﮨﯽ ﮔﯿﺎ

ﮐﺮ ﺩﯾﺎ ﻣﺸﮩﻮﺭ ﭘﺮﺩﮮ ﻣﯿﮟ ﺗﺠﮭﮯ ﺯﺣﻤﺖ ﻧﮧ ﺩﯼ
ﺁﺝ ﮐﻮ ﮨﻮﻧﺎ ﮨﻤﺎﺭﺍ ﺗﯿﺮﮮ ﮐﺎﻡ ﺁ ﮨﯽ ﮔﯿﺎ

ﺟﺐ ﺍﭨﮭﺎ ﺳﺎﻗﯽ ﺗﻮ ﻭﺍﻋﻆ ﮐﯽ ﻧﮧ ﮐﭽﮫ ﺑﮭﯽ ﭼﻞ
ﺳﮑﯽ
ﻣﯿﺮﯼ ﻗﺴﻤﺖ ﮐﯽ ﻃﺮﺡ ﮔﺮﺩﺵ ﻣﯿﮟ ﺟﺎﻡ ﺁ ﮨﯽ ﮔﯿﺎ

ﺣﺴﻦ ﮐﻮ ﺑﮭﯽ ﻋﺸﻖ ﮐﯽ ﺿﺪ ﺭﮐﮭﻨﯽ ﭘﮍﺗﯽ ﮨﮯ
ﮐﺒﮭﯽ
ﻃﻮﺭ ﭘﺮ ﻣﻮﺳﯽٰ ﺳﮯ ﻣﻠﻨﮯ ﮐﺎ ﭘﯿﺎﻡ ﺁ ﮨﯽ ﮔﯿﺎ

ﺩﯾﺮ ﺗﮏ ﺑﺎﺏ ﺣﺮﻡ ﭘﺮ ﺭﮎ ﮐﮯ ﺍﮎ ﻣﺠﺒﻮﺭ ﻋﺸﻖ
ﺳﻮﺋﮯ ﺑﺖ ﺧﺎﻧﮧ ﺧﺪﺍ ﮐﺎ ﻟﮯ ﮐﮯ ﻧﺎﻡ ﺁ ﮨﯽ ﮔﯿﺎ

ﺭﺍﺕ ﺑﮭﺮ ﻣﺎﻧﮕﯽ ﺩﻋﺎ ﺍﻥ ﮐﮯ ﻧﮧ ﺟﺎﻧﮯ ﮐﯽ ﻗﻤﺮؔ
ﺻﺒﺢ ﮐﺎ ﺗﺎﺭﮦ ﻣﮕﺮ ﻟﮯ ﮐﺮ ﭘﯿﺎﻡ ﺁ ﮨﯽ ﮔﯿﺎ

ﺗﻮﺑﮧ ﮐﯿﺠﮯ ﺍﺏ ﻓﺮﯾﺐ ﺩﻭﺳﺘﯽ ﮐﮭﺎﺋﯿﮟ ﮔﮯ ﮐﯿﺎ
ﺁﺝ ﺗﮏ ﭘﭽﮭﺘﺎ ﺭﮨﮯ ﮨﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﭘﭽﮭﺘﺎﺋﯿﮟ ﮔﮯ ﮐﯿﺎ

ﺧﻮﺩ ﺳﻤﺠﮭﯿﮯ ﺫﺑﺢ ﮨﻮﻧﮯ ﻭﺍﻟﮯ ﺳﻤﺠﮭﺎﺋﯿﮟ ﮔﮯ ﮐﯿﺎ
ﺑﺎﺕ ﭘﮩﻨﭽﮯ ﮔﯽ ﮐﮩﺎﮞ ﺗﮏ ﺁﭖ ﮐﮩﻼﺋﯿﮟ ﮔﮯ ﮐﯿﺎ

ﺑﺰﻡ ﮐﺜﺮﺕ ﻣﯿﮟ ﯾﮧ ﮐﯿﻮﮞ ﮨﻮﺗﺎ ﮨﮯ ﺍﻥ ﮐﺎ ﺍﻧﺘﻈﺎﺭ
ﭘﺮﺩۂ ﻭﺣﺪﺕ ﺳﮯ ﻭﮦ ﺑﺎﮨﺮ ﻧﮑﻞ ﺁﺋﯿﮟ ﮔﮯ ﮐﯿﺎ

ﮐﻞ ﺑﮩﺎﺭ ﺁﺋﮯ ﮔﯽ ﯾﮧ ﺳﻦ ﮐﺮ ﻗﻔﺲ ﺑﺪﻟﻮ ﻧﮧ ﺗﻢ
ﺭﺍﺕ ﺑﮭﺮ ﻣﯿﮟ ﻗﯿﺪﯾﻮﮞ ﮐﮯ ﭘﺮ ﻧﮑﻞ ﺁﺋﯿﮟ ﮔﮯ ﮐﯿﺎ

ﺍﮮ ﺩﻝ ﻣﻀﻄﺮ ﺍﻧﮩﯿﮟ ﺑﺎﺗﻮﮞ ﺳﮯ ﭼﮭﻮﭨﺎ ﺗﮭﺎ ﭼﻤﻦ
ﺍﺏ ﺗﺮﮮ ﻧﺎﻟﮯ ﻗﻔﺲ ﺳﮯ ﺑﮭﯽ ﻧﮑﻠﻮﺍﺋﯿﮟ ﮔﮯ ﮐﯿﺎ

ﺍﮮ ﻗﻔﺲ ﻭﺍﻟﻮ ﺭﮨﺎﺋﯽ ﮐﯽ ﺗﻤﻨﺎ ﮨﮯ ﻓﻀﻮﻝ
ﻓﺼﻞ ﮔﻞ ﺁﻧﮯ ﺳﮯ ﭘﮩﻠﮯ ﭘﺮ ﻧﮧ ﮐﭧ ﺟﺎﺋﯿﮟ ﮔﮯ ﮐﯿﺎ

ﺷﺎﻡ ﻏﻢ ﺟﻞ ﺟﻞ ﮐﮯ ﻣﺜﻞ ﺷﻤﻊ ﮨﻮ ﺟﺎﺅﮞ ﮔﺎ ﺧﺘﻢ
ﺻﺒﺢ ﮐﻮ ﺍﺣﺒﺎﺏ ﺁﺋﯿﮟ ﮔﮯ ﺗﻮ ﺩﻓﻨﺎﺋﯿﮟ ﮔﮯ ﮐﯿﺎ

ﺟﺎﻧﺘﺎ ﮨﻮﮞ ﭘﮭﻮﻧﮏ ﺩﮮ ﮔﺎ ﻣﯿﺮﮮ ﮔﮭﺮ ﮐﻮ ﺑﺎﻏﺒﺎﮞ
ﺁﺷﯿﺎﮞ ﮐﮯ ﭘﺎﺱ ﻭﺍﻟﮯ ﭘﮭﻮﻝ ﺭﮦ ﺟﺎﺋﯿﮟ ﮔﮯ ﮐﯿﺎ

ﺍﻥ ﮐﯽ ﻣﺤﻔﻞ ﻣﯿﮟ ﭼﻼ ﺁﯾﺎ ﮨﮯ ﺩﺷﻤﻦ ﺧﯿﺮ ﮨﻮ
ﻣﺜﻞ ﺁﺩﻡ ﮨﻢ ﺑﮭﯽ ﺟﻨﺖ ﺳﮯ ﻧﮑﻞ ﺟﺎﺋﯿﮟ ﮔﮯ ﮐﯿﺎ

ﻧﺎﺧﺪﺍ ﻣﻮﺟﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﮐﺸﺘﯽ ﮨﮯ ﺗﻮ ﮨﻮ ﮨﻢ ﮐﻮ ﻧﮧ
ﺩﯾﮑﮫ
ﺟﻦ ﮐﻮ ﻃﻮﻓﺎﻧﻮﮞ ﻧﮯ ﭘﺎﻻ ﮨﮯ ﻭﮦ ﮔﮭﺒﺮﺍﺋﯿﮟ ﮔﮯ ﮐﯿﺎ

ﺗﻮ ﻧﮯ ﻃﻮﻓﺎﮞ ﺩﯾﮑﮭﺘﮯ ﮨﯽ ﮐﯿﻮﮞ ﻧﮕﺎﮨﯿﮟ ﭘﮭﯿﺮ ﻟﯿﮟ
ﻧﺎﺧﺪﺍ ﯾﮧ ﺍﮨﻞ ﮐﺸﺘﯽ ﮈﻭﺏ ﮨﯽ ﺟﺎﺋﯿﮟ ﮔﮯ ﮐﯿﺎ

ﮐﯿﻮﮞ ﯾﮧ ﺑﯿﺮﻭﻥ ﭼﻤﻦ ﺟﻠﺘﮯ ﮨﻮﺋﮯ ﺗﻨﮑﮯ ﮔﺌﮯ
ﻣﯿﺮﮮ ﮔﮭﺮ ﮐﯽ ﺁﮒ ﺩﻧﯿﺎ ﺑﮭﺮ ﻣﯿﮟ ﭘﮭﯿﻼﺋﯿﮟ ﮔﮯ ﮐﯿﺎ

ﮐﻮﺋﯽ ﺗﻮ ﻣﻮﻧﺲ ﺭﮨﮯ ﮔﺎ ﺍﮮ ﻗﻤﺮؔ ﺷﺎﻡ ﻓﺮﺍﻕ
ﺷﻤﻊ ﮔﻞ ﮨﻮﮔﯽ ﺗﻮ ﯾﮧ ﺗﺎﺭﮮ ﺑﮭﯽ ﭼﮭﭗ ﺟﺎﺋﯿﮟ ﮔﮯ
ﮐﯿﺎ

ﻣﺮﺍ ﺧﺎﻣﻮﺵ ﺭﮦ ﮐﺮ ﺑﮭﯽ ﺍﻧﮩﯿﮟ ﺳﺐ ﮐﭽﮫ ﺳﻨﺎ ﺩﯾﻨﺎ
ﺯﺑﺎﮞ ﺳﮯ ﮐﭽﮫ ﻧﮧ ﮐﮩﻨﺎ ﺩﯾﮑﮫ ﮐﺮ ﺁﻧﺴﻮ ﺑﮩﺎ ﺩﯾﻨﺎ

ﻧﺸﯿﻤﻦ ﮨﻮ ﻧﮧ ﮨﻮ ﯾﮧ ﺗﻮ ﻓﻠﮏ ﮐﺎ ﻣﺸﻐﻠﮧ ﭨﮭﮩﺮﺍ
ﮐﮧ ﺩﻭ ﺗﻨﮑﮯ ﺟﮩﺎﮞ ﭘﺮ ﺩﯾﮑﮭﻨﺎ ﺑﺠﻠﯽ ﮔﺮﺍ ﺩﯾﻨﺎ

ﻣﯿﮟ ﺍﺱ ﺣﺎﻟﺖ ﺳﮯ ﭘﮩﻨﭽﺎ ﺣﺸﺮ ﻭﺍﻟﮯ ﺧﻮﺩ ﭘﮑﺎﺭ
ﺍﭨﮭﮯ
ﮐﻮﺋﯽ ﻓﺮﯾﺎﺩ ﻭﺍﻻ ﺁ ﺭﮨﺎ ﮨﮯ ﺭﺍﺳﺘﮧ ﺩﯾﻨﺎ

ﺍﺟﺎﺯﺕ ﮨﻮ ﺗﻮ ﮐﮩﮧ ﺩﻭﮞ ﻗﺼﮧٔ ﺍﻟﻔﺖ ﺳﺮ ﻣﺤﻔﻞ
ﻣﺠﮭﮯ ﮐﭽﮫ ﺗﻮ ﻓﺴﺎﻧﮧ ﯾﺎﺩ ﮨﮯ ﮐﭽﮫ ﺗﻢ ﺳﻨﺎ ﺩﯾﻨﺎ

ﻣﯿﮟ ﻣﺠﺮﻡ ﮨﻮﮞ ﻣﺠﮭﮯ ﺍﻗﺮﺍﺭ ﮨﮯ ﺟﺮﻡ ﻣﺤﺒﺖ ﮐﺎ
ﻣﮕﺮ ﭘﮩﻠﮯ ﺗﻮ ﺧﻂ ﭘﺮ ﻏﻮﺭ ﮐﺮ ﻟﻮ ﭘﮭﺮ ﺳﺰﺍ ﺩﯾﻨﺎ

ﮨﭩﺎ ﮐﺮ ﺭﺥ ﺳﮯ ﮔﯿﺴﻮ ﺻﺒﺢ ﮐﺮ ﺩﯾﻨﺎ ﺗﻮ ﻣﻤﮑﻦ ﮨﮯ
ﻣﮕﺮ ﺳﺮﮐﺎﺭ ﮐﮯ ﺑﺲ ﻣﯿﮟ ﻧﮩﯿﮟ ﺗﺎﺭﮮ ﭼﮭﭙﺎ ﺩﯾﻨﺎ

ﯾﮧ ﺗﮩﺬﯾﺐ ﭼﻤﻦ ﺑﺪﻟﯽ ﮨﮯ ﺑﯿﺮﻭﻧﯽ ﮨﻮﺍﺅﮞ ﻧﮯ
ﮔﺮﯾﺒﺎﮞ ﭼﺎﮎ ﭘﮭﻮﻟﻮﮞ ﭘﺮ ﮐﻠﯽ ﮐﺎ ﻣﺴﮑﺮﺍ ﺩﯾﻨﺎ

ﻗﻤﺮؔ ﻭﮦ ﺳﺐ ﺳﮯ ﭼﮭﭗ ﮐﺮ ﺁ ﺭﮨﮯ ﮨﯿﮟ ﻓﺎﺗﺤﮧ ﭘﮍﮬﻨﮯ
ﮐﮩﻮﮞ ﮐﺲ ﺳﮯ ﮐﮧ ﻣﯿﺮﯼ ﺷﻤﻊ ﺗﺮﺑﺖ ﮐﻮ ﺑﺠﮭﺎ ﺩﯾﻨﺎ

ﮐﺐ ﻣﯿﺮﺍ ﻧﺸﯿﻤﻦ ﺍﮨﻞ ﭼﻤﻦ ﮔﻠﺸﻦ ﻣﯿﮟ ﮔﻮﺍﺭﺍ ﮐﺮﺗﮯ
ﮨﯿﮟ
ﻏﻨﭽﮯ ﺍﭘﻨﯽ ﺁﻭﺍﺯﻭﮞ ﻣﯿﮟ ﺑﺠﻠﯽ ﮐﻮ ﭘﮑﺎﺭﺍ ﮐﺮﺗﮯ ﮨﯿﮟ

ﺍﺏ ﻧﺰﻉ ﮐﺎ ﻋﺎﻟﻢ ﮨﮯ ﻣﺠﮫ ﭘﺮ ﺗﻢ ﺍﭘﻨﯽ ﻣﺤﺒﺖ ﻭﺍﭘﺲ
ﻟﻮ
ﺟﺐ ﮐﺸﺘﯽ ﮈﻭﺑﻨﮯ ﻟﮕﺘﯽ ﮨﮯ ﺗﻮ ﺑﻮﺟﮫ ﺍﺗﺎﺭﺍ ﮐﺮﺗﮯ
ﮨﯿﮟ

ﺟﺎﺗﯽ ﮨﻮﺋﯽ ﻣﯿﺖ ﺩﯾﮑﮫ ﮐﮯ ﺑﮭﯽ ﻭﺍﻟﻠﮧ ﺗﻢ ﺍﭨﮫ ﮐﮯ ﺁ
ﻧﮧ ﺳﮑﮯ
ﺩﻭ ﭼﺎﺭ ﻗﺪﻡ ﺗﻮ ﺩﺷﻤﻦ ﺑﮭﯽ ﺗﮑﻠﯿﻒ ﮔﻮﺍﺭﺍ ﮐﺮﺗﮯ
ﮨﯿﮟ

ﺑﮯ ﻭﺟﮧ ﻧﮧ ﺟﺎﻧﮯ ﮐﯿﻮﮞ ﺿﺪ ﮨﮯ ﺍﻥ ﮐﻮ ﺷﺐ ﻓﺮﻗﺖ
ﻭﺍﻟﻮﮞ ﺳﮯ
ﻭﮦ ﺭﺍﺕ ﺑﮍﮬﺎ ﺩﯾﻨﮯ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﮔﯿﺴﻮ ﮐﻮ ﺳﻨﻮﺍﺭﺍ ﮐﺮﺗﮯ
ﮨﯿﮟ

ﭘﻮﻧﭽﮭﻮ ﻧﮧ ﻋﺮﻕ ﺭﺧﺴﺎﺭﻭﮞ ﺳﮯ ﺭﻧﮕﯿﻨﺊ ﺣﺴﻦ ﮐﻮ
ﺑﮍﮬﻨﮯ ﺩﻭ
ﺳﻨﺘﮯ ﮨﯿﮟ ﮐﮧ ﺷﺒﻨﻢ ﮐﮯ ﻗﻄﺮﮮ ﭘﮭﻮﻟﻮﮞ ﮐﻮ ﻧﮑﮭﺎﺭﺍ
ﮐﺮﺗﮯ ﮨﯿﮟ

ﮐﭽﮫ ﺣﺴﻦ ﻭ ﻋﺸﻖ ﻣﯿﮟ ﻓﺮﻕ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﮯ ﺑﮭﯽ ﺗﻮ
ﻓﻘﻂ ﺭﺳﻮﺍﺋﯽ ﮐﺎ
ﺗﻢ ﮨﻮ ﮐﮧ ﮔﻮﺍﺭﺍ ﮐﺮ ﻧﮧ ﺳﮑﮯ ﮨﻢ ﮨﯿﮟ ﮐﮧ ﮔﻮﺍﺭﺍ ﮐﺮﺗﮯ
ﮨﯿﮟ

ﺗﺎﺭﻭﮞ ﮐﯽ ﺑﮩﺎﺭﻭﮞ ﻣﯿﮟ ﺑﮭﯽ ﻗﻤﺮؔ ﺗﻢ ﺍﻓﺴﺮﺩﮦ ﺳﮯ
ﺭﮨﺘﮯ ﮨﻮ
ﭘﮭﻮﻟﻮﮞ ﮐﻮ ﺗﻮ ﺩﯾﮑﮭﻮ ﮐﺎﻧﭩﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﮨﻨﺲ ﮨﻨﺲ ﮐﮯ
ﮔﺰﺍﺭﺍ ﮐﺮﺗﮯ ﮨﯿﮟ

ﭼﮭﻮﮌ ﮐﺮ ﮔﮭﺮ ﺑﺎﺭ ﺍﭘﻨﺎ ﺣﺴﺮﺕ ﺩﯾﺪﺍﺭ ﻣﯿﮟ
ﺍﮎ ﺗﻤﺎﺷﮧ ﺑﻦ ﮐﮯ ﺁ ﺑﯿﭩﮭﺎ ﮨﻮﮞ ﮐﻮﺋﮯ ﯾﺎﺭ ﻣﯿﮟ

ﺩﻡ ﻧﮑﻞ ﺟﺎﺋﮯ ﮔﺎ ﺣﺴﺮﺕ ﺳﮯ ﻧﮧ ﺩﯾﮑﮫ ﺍﮮ ﻧﺎﺧﺪﺍ
ﺍﺏ ﻣﺮﯼ ﻗﺴﻤﺖ ﭘﮧ ﮐﺸﺘﯽ ﭼﮭﻮﮌ ﺩﮮ ﻣﻨﺠﺪﮬﺎﺭ
ﻣﯿﮟ

ﺩﯾﮑﮫ ﺑﮭﯽ ﺁ ﺑﺎﺕ ﮐﮩﻨﮯ ﮐﮯ ﻟﺌﮯ ﮨﻮ ﺟﺎﺋﮯ ﮔﯽ
ﺻﺮﻑ ﮔﻨﺘﯽ ﮐﯽ ﮨﯿﮟ ﺳﺎﻧﺴﯿﮟ ﺍﺏ ﺗﺮﮮ ﺑﯿﻤﺎﺭ ﻣﯿﮟ

ﻓﺼﻞ ﮔﻞ ﻣﯿﮟ ﮐﺲ ﻗﺪﺭ ﻣﻨﺤﻮﺱ ﮨﮯ ﺭﻭﻧﺎ ﻣﺮﺍ
ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﺟﺐ ﻧﺎﻟﮯ ﮐﺌﮯ ﺑﺠﻠﯽ ﮔﺮﯼ ﮔﻞ ﺯﺍﺭ ﻣﯿﮟ

ﺟﻞ ﮔﯿﺎ ﻣﯿﺮﺍ ﻧﺸﯿﻤﻦ ﯾﮧ ﺗﻮ ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﺳﻦ ﻟﯿﺎ
ﺑﺎﻏﺒﺎﮞ ﺗﻮ ﺧﯿﺮﯾﺖ ﺳﮯ ﮨﮯ ﺻﺒﺎ ﮔﻞ ﺯﺍﺭ ﻣﯿﮟ

ﻭﮦ ﺍﮔﺮ ﺑﻦ ﺳﻨﻮﺭ ﮔﺌﮯ ﮨﻮﮞ ﮔﮯ
ﺩﯾﮑﮭﻨﮯ ﻭﺍﻟﮯ ﻣﺮ ﮔﺌﮯ ﮨﻮﮞ ﮔﮯ

ﺷﺎﻡِ ﻭﻋﺪﮦ ﺍﻭﺭ ﺍﻧﺘﻈﺎﺭ ﺍﻥ ﮐﺎ
ﺟﺎﻧﮯ ﻭﮦ ﮐﺲ ﮐﮯ ﮔﮭﺮ ﮔﺌﮯ ﮨﻮﮞ ﮔﮯ

ﺗﻢ ﺑﮭﯽ ﺩﯾﮑﮫ ﺁﺅ ﻣﺮﻧﮯ ﻭﺍﻟﮯ ﮐﻮ
ﺍﺏ ﺗﻮ ﺳﺐ ﭼﺎﺭﮦ ﮔﺮ ﮔﺌﮯ ﮨﻮﮞ ﮔﮯ

ﺟﺐ ﮔﺮﯼ ﮨﻮ ﮔﯽ ﺑﺎﻍ ﭘﺮ ﺑﺠﻠﯽ
ﺍﮨﻞِ ﮔﻠﺸﻦ ﮐﺪﮬﺮ ﮔﺌﮯ ﮨﻮﮞ ﮔﮯ

ﻧﯿﻨﺪ ﺁﺋﯽ ﻧﮧ ﮨﻮ ﮔﯽ ﺭﺍﺕ ﺍﻧﮩﯿﮟ
ﻧﺎﻟﮯ ﮐﯿﺎ ﺑﮯ ﺍﺛﺮ ﮔﺌﮯ ﮨﻮﮞ ﮔﮯ

ﺍﻭ ﺳﺮِ ﺭﺍﮦ ﻣﻨﺘﻈﺮ ﺍﻥ ﮐﮯ
ﻭﮦ ﺗﻮ ﮐﺐ ﮐﮯ ﮔﺰﺭ ﮔﺌﮯ ﮨﻮﮞ ﮔﮯ

ﺗﻢ ﺑﮭﯽ ﺍﮨﻞِ ﺟﻨﻮﮞ ﮐﻮ ﭘﻮﭼﮭﺘﮯ ﮨﻮ
ﮐﯿﺎ ﺧﺒﺮ ﮨﮯ ﮐﺪﮬﺮ ﮔﺌﮯ ﮨﻮﮞ ﮔﮯ

ﭼﺎﻧﺪﻧﯽ ﮐﻢ ﯾﮑﺎ ﯾﮏ ﺍﺗﻨﯽ ﮐﯿﻮﮞ
ﺑﺎﻡ ﺳﮯ ﻭﮦ ﺍﺗﺮ ﮔﺌﮯ ﮨﻮﮞ ﮔﮯ

ﮐﺒﮭﯽ ﮐﮩﺎ ﻧﮧ ﮐﺴﯽ ﺳﮯ ﺗﺮﮮ ﻓﺴﺎﻧﮯ ﮐﻮ
ﻧﮧ ﺟﺎﻧﮯ ﮐﯿﺴﮯ ﺧﺒﺮ ﮨﻮ ﮔﺌﯽ ﺯﻣﺎﻧﮯ ﮐﻮ

ﭼﻤﻦ ﻣﯿﮟ ﺑﺮﻕ ﻧﮩﯿﮟ ﭼﮭﻮﮌﺗﯽ ﮐﺴﯽ ﺻﻮﺭﺕ
ﻃﺮﺡ ﻃﺮﺡ ﺳﮯ ﺑﻨﺎﺗﺎ ﮨﻮﮞ ﺁﺷﯿﺎﻧﮯ ﮐﻮ

ﺩﻋﺎ ﺑﮩﺎﺭ ﮐﯽ ﻣﺎﻧﮕﯽ ﺗﻮ ﺍﺗﻨﮯ ﭘﮭﻮﻝ ﮐﮭﻠﮯ
ﮐﮩﯿﮟ ﺟﮕﮧ ﻧﮧ ﺭﮨﯽ ﻣﯿﺮﮮ ﺁﺷﯿﺎﻧﮯ ﮐﻮ

ﭼﻤﻦ ﻣﯿﮟ ﺟﺎﻧﺎ ﺗﻮ ﺻﯿﺎﺩ ﺩﯾﮑﮫ ﺑﮭﺎﻝ ﺁﻧﺎ
ﺍﮐﯿﻼ ﭼﮭﻮﮌ ﮐﮯ ﺁﯾﺎ ﮨﻮﮞ ﺁﺷﯿﺎﻧﮯ ﮐﻮ

ﻣﺮﯼ ﻟﺤﺪ ﭘﮧ ﭘﺘﻨﮕﻮﮞ ﮐﺎ ﺧﻮﻥ ﮨﻮﺗﺎ ﮨﮯ
ﺣﻀﻮﺭ ﺷﻤﻊ ﻧﮧ ﻻﯾﺎ ﮐﺮﯾﮟ ﺟﻼﻧﮯ ﮐﻮ

ﺳﻨﺎ ﮨﮯ ﻏﯿﺮ ﮐﯽ ﻣﺤﻔﻞ ﻣﯿﮟ ﺗﻢ ﻧﮧ ﺟﺎﺅ ﮔﮯ
ﮐﮩﻮ ﺗﻮ ﺁﺝ ﺳﺠﺎ ﻟﻮﮞ ﻏﺮﯾﺐ ﺧﺎﻧﮯ ﮐﻮ

ﺩﺑﺎ ﮐﮯ ﻗﺒﺮ ﻣﯿﮟ ﺳﺐ ﭼﻞ ﺩﺋﯿﮯ ﺩﻋﺎ ﻧﮧ ﺳﻼﻡ
ﺫﺭﺍ ﺳﯽ ﺩﯾﺮ ﻣﯿﮟ ﮐﯿﺎ ﮨﻮ ﮔﯿﺎ ﺯﻣﺎﻧﮯ ﮐﻮ

ﺍﺏ ﺁﮔﮯ ﺍﺱ ﻣﯿﮟ ﺗﻤﮩﺎﺭﺍ ﺑﮭﯽ ﻧﺎﻡ ﺁﺋﮯ ﮔﺎ
ﺟﻮ ﺣﮑﻢ ﮨﻮ ﺗﻮ ﯾﮩﯿﮟ ﭼﮭﻮﮌ ﺩﻭﮞ ﻓﺴﺎﻧﮯ ﮐﻮ

ﻗﻤﺮؔ ﺫﺭﺍ ﺑﮭﯽ ﻧﮩﯿﮟ ﺗﻢ ﮐﻮ ﺧﻮﻑ ﺭﺳﻮﺍﺋﯽ
ﭼﻠﮯ ﮨﻮ ﭼﺎﻧﺪﻧﯽ ﺷﺐ ﻣﯿﮟ ﺍﻧﮩﯿﮟ ﻣﻨﺎﻧﮯ ﮐﻮ

ﮨﺰﺍﺭﻭﮞ ﻓﺮﯾﺎﺩ ﮐﺮ ﺭﮨﮯ ﮨﯿﮟ ﻣﮕﺮ ﮐﺴﯽ ﭘﺮ ﻧﻈﺮ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﮯ
ﻭﮦ ﻣﺤﻮ ﮨﯿﮟ ﺁﺋﯿﻨﮯ ﻣﯿﮟ ﺍﯾﺴﮯ ﮐﮧ ﺍﻥ ﮐﻮ ﺍﭘﻨﯽ ﺧﺒﺮ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﮯ

ﻣﺮﯾﺾِ ﻓﺮﻗﺖ ﮐﺎ ﮨﮯ ﯾﮧ ﻋﺎﻟﻢ ﮐﮧ ﺷﺎﻡ ﺳﮯ ﮐﭽﮫ ﺧﺒﺮ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﮯ
ﻭﮦ ﺩﯾﮑﮭﻨﮯ ﺁﺋﯿﮟ ﮔﮯ ﺳﺤﺮ ﮐﻮ ﯾﮩﺎﮞ ﺍﻣﯿﺪِ ﺳﺤﺮ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﮯ

ﺧﻮﺷﯽ ﺗﻮ ﯾﮧ ﮨﮯ ﺟﻮﺍﺏ ﺁﯾﺎ ﻣﺂﻝ ﭘﯿﺶِ ﻧﻈﺮ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﮯ
ﻟﻔﺎﻓﮧ ﻗﺎﺻﺪ ﺳﮯ ﻟﮯ ﻟﯿﺎ ﮨﮯ ﻟﮑﮭﮯ ﮨﻮﺋﮯ ﮐﯽ ﺧﺒﺮ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﮯ

ﺩﻭﺍ ﺳﮯ ﺑﯿﻤﺎﺭِ ﻏﻢ ﮐﻮ ﺻﺤﺖ ﮐﮩﯿﮟ ﮨﻮﺋﯽ ﮐﺒﮭﯽ ﺳﻨﺎ ﮨﮯ
ﯾﮧ ﺁﺧﺮﯼ ﻭﻗﺖ ﮨﮯ ﺩﻋﺎ ﮐﺎ ﺿﺮﻭﺭﺕِ ﭼﺎﺭﮦ ﮔﺮ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﮯ

ﺗﺠﻠﯿﻮﮞ ﮐﯽ ﯾﮧ ﺍﻧﺘﮩﺎ ﮨﮯ ﮐﮧ ﺩﯾﮑﮭﻨﮯ ﻭﺍﻟﮯ ﺩﻡ ﺑﺨﻮﺩ ﮨﯿﮟ
ﮨﺮ ﺍﮎ ﮐﯽ ﺁﻧﮑﮭﻮﮞ ﮐﮯ ﺳﺎﻣﻨﮯ ﮨﮯ ﻣﮕﺮ ﻣﺠﺎﻝِ ﻧﻈﺮ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﮯ

ﺳﺮﮨﺎﻧﮯ ﻣﯿﺖ ﮐﮯ ﮐﮩﮧ ﺭﮨﮯ ﮨﯿﮟ ﮐﮩﺎ ﺳﻨﺎ ﺗﻢ ﻣﻌﺎﻑ ﮐﺮ ﺩﻭ
ﻭﮦ ﺩﻝ ﻣﯿﮟ ﺷﺎﯾﺪ ﺳﻤﺠﮫ ﮔﺌﮯ ﮨﯿﮟ ﯾﮧ ﻭﺍﭘﺴﯽ ﮐﺎ ﺳﻔﺮ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﮯ

ﺗﻢ ﺁ ﮐﮯ ﺳﯿﻨﮯ ﭘﮧ ﮨﺎﺗﮫ ﺭﮐﮫ ﺩﻭ ﻣﺴﯿﺤﺎ ﮐﮩﻨﮯ ﻟﮕﮯ ﮔﯽ ﺩﻧﯿﺎ
ﻃﺒﯿﺐ ﯾﮧ ﮐﮩﮧ ﮐﮯ ﺟﺎ ﺭﮨﮯ ﮨﯿﮟ ﺩﻭﺍﺋﮯ ﺩﺭﺩِ ﺟﮕﺮ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﮯ

ﻧﮧ ﺷﺎﺩ ﮨﻮ ﺷﺎﻡِ ﻏﻢ ﮐﮯ ﻣﺎﺭﮮ ﮐﮧ ﮐﺎﭦ ﻟﯽ ﺗﻮ ﻧﮯ ﮨﺠﺮ ﮐﯽ ﺷﺐ
ﮐﺴﯽ ﮐﮯ ﺭُﺥ ﮐﯽ ﺗﺠﻠﯿﺎﮞ ﮨﯿﮟ ﯾﮧ ﺭﻭﺷﻨﯽِ ﺳﺤﺮ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﮯ

ﻣﯿﺮﯼ ﻟﺮﺯﺗﯽ ﮨﻮﺋﯽ ﺯﺑﺎﮞ ﺳﮯ ﺳﻮﺍﻝِ ﺷﺎﻡِ ﻭﺻﺎﻝ ﺳﻦ ﮐﺮ
ﯾﮧ ﮐﮩﮧ ﮐﮯ ﻭﮦ ﭼﻞ ﺩﯾﮯ ﺍﺩﺍ ﺳﮯ ﺗﺮﯼ ﺩﻋﺎ ﻣﯿﮟ ﺍﺛﺮ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﮯ

ﺑﮭﻼ ﺗﻐﺎﻓﻞ ﮐﯽ ﺍﻧﺘﮩﺎ ﮨﮯ ﻭﮦ ﻣﺠﮫ ﮐﻮ ﻏﯿﺮﻭﮞ ﺳﮯ ﭘﻮﭼﮭﺘﮯ ﮨﯿﮟ
ﯾﮩﺎﮞ ﻟﺤﺪ ﮨﻮ ﮔﺌﯽ ﺑﺮﺍﺑﺮ ﻭﮨﺎﮞ ﺍﺑﮭﯽ ﺗﮏ ﺧﺒﺮ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﮯ

ﺑﺮﯼ ﮔﮭﮍﯼ ﭘﮭﺮ ﺑﺮﯼ ﮔﮭﮍﯼ ﮨﮯ ﮨﺰﺍﺭ ﺍﻣﯿﺪِ ﺍﻗﺮﺑﺎ ﮨﻮ
ﺩﻝ ﺍﺱ ﻗﺪﺭ ﮨﮯ ﻗﺮﯾﺐ ﻟﯿﮑﻦ ﺷﺮﯾﮏِ ﺩﺭﺩِ ﺟﮕﺮ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﮯ

ﻣﺮﺽ ﺑﮭﯽ ﺗﻢ ﻧﮯ ﺳﻤﺠﮫ ﻟﯿﺎ ﮨﮯ ﻣﺠﮭﮯ ﺧﺒﺮ ﮨﮯ ﻃﺒﯿﺐ ﮨﻮ ﺗﻢ
ﻣﮕﺮ ﺍﺏ ﺍﺱ ﮐﺎ ﻋﻼﺝ ﮐﯿﺎ ﮨﻮ ﻋﻼﺝِ ﺩﺭﺩِ ﺟﮕﺮ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﮯ

ﭼﮭﭙﺎ ﮐﮯ ﺩﺍﻍِ ﺟﮕﺮ ﮐﻮ ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﻓﻀﻮﻝ ﺍﻥ ﺳﮯ ﺿﺪﯾﮟ ﺑﮍﮬﺎﺋﯿﮟ
ﻣﯿﮟ ﮐﮩﮧ ﺭﮨﺎ ﮨﻮﮞ ﻗﻤﺮؔ ﮨﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﮨﯽ ﻭﮦ ﮐﮩﮧ ﺭﮨﮯ ﮨﯿﮟ مگر ﻧﮩﯿﮟ ﮨﮯ

ﻧﮧ ﺟﺎﺅ ﮔﮭﺮ ﺍﺑﮭﯽ ﺗﻮ ﺭﺍﺕ ﮨﮯ ﺑﺎﺩﻝ ﺑﮭﯽ ﮐﺎﻟﮯ ﮨﯿﮟ
ﺍﺫﺍﮞ ﺳﻤﺠﮭﮯ ﮨﻮ ﺗﻢ ﺟﺲ ﮐﻮ ﮐﺴﯽ ﺑﮯ ﮐﺲ ﮐﮯ ﻧﺎﻟﮯ ﮨﯿﮟ

ﮨﺰﺍﺭﻭﮞ ﻭﻋﺪۂ ﺷﺐ ﺍﺱ ﻧﮯ ﺍﺱ ﺻﻮﺭﺕ ﺳﮯ ﭨﺎﻟﮯ ﮨﯿﮟ
ﮐﺒﮭﯽ ﻣﮩﻨﺪﯼ ﻟﮕﺎ ﻟﯽ ﮨﮯ ﮐﺒﮭﯽ ﮔﯿﺴﻮ ﺳﻨﺒﮭﺎﻟﮯ ﮨﯿﮟ

ﻣﺮﯾﺾِ ﺳﻮﺯ ﻭ ﻏﻢ ﺍﮮ ﭼﺎﺭﮦ ﮔﺮ ﮐﺐ ﺑﭽﻨﮯ ﻭﺍﻟﮯ ﮨﯿﮟ
ﮐﮧ ﮨﺮ ﺁﻧﺴﻮ ﮐﯽ ﺭﻧﮕﺖ ﮐﮩﮧ ﺭﮨﯽ ﮨﮯ ﺩﻝ ﻣﯿﮟ ﭼﮭﺎﻟﮯ ﮨﯿﮟ

ﻧﮧ ﭘﻮﭼﮭﯿﮟ ﺁﭖ ﺩﯾﻮﺍﻧﻮﮞ ﺳﮯ ﺷﺎﻡ ﻭ ﺻﺒﺢ ﮐﺎ ﻋﺎﻟﻢ
ﯾﮧ ﮐﯿﺎ ﺟﺎﻧﯿﮟ ﮐﮧ ﺩﻧﯿﺎ ﻣﯿﮟ ﺍﻧﺪﮬﯿﺮﮮ ﯾﺎ ﺍﺟﺎﻟﮯ ﮨﯿﮟ

ﺗﯿﺮﯼ ﻧﯿﭽﯽ ﻧﻈﺮ ﻇﺎﻟﻢ ﻣﺴﯿﺤﺎ ﺑﮭﯽ ﮨﮯ ﻇﺎﻟﻢ ﺑﮭﯽ
ﮨﺰﺍﺭﻭﮞ ﮐﻮ ﺟﻼﯾﺎ ﮨﮯ ﮨﺰﺍﺭﻭﮞ ﻣﺎﺭ ﮈﺍﻟﮯ ﮨﯿﮟ

ﻣﺮﯾﻀﻮﮞ ﮐﺎ ﺩﻡ ﺁﻧﮑﮭﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﮨﮯ ﻭﮦ ﮨﯿﮟ ﻣﺤﻮِ ﺁﺭﺍﺋﺶ
ﻭﮨﺎﮞ ﮨﻮﻧﭩﻮﮞ ﮐﯽ ﻻﻟﯽ ﮨﮯ ﯾﮩﺎﮞ ﺟﺎﻧﻮﮞ ﮐﮯ ﻻﻟﮯ ﮨﯿﮟ

ﮨﺠﻮﻡِ ﺣﺸﺮ ﮐﻮ ﮔﮭﺒﺮﺍ ﮐﮯ ﻣﺠﮫ ﺳﮯ ﭘﻮﭼﮭﺘﮯ ﮐﯿﺎ ﮨﻮ
ﺳﺘﺎﯾﺎ ﮨﮯ ﺟﻨﮩﯿﮟ ﺗﻢ ﻧﮯ ﯾﮧ ﻭﮦ ﻓﺮﯾﺎﺩ ﻭﺍﻟﮯ ﮨﯿﮟ

ﻋﯿﺎﺩﺕ ﮐﻮ ﺟﻮ ﺭﻭﺯ ﺁﺗﮯ ﮨﻮ ﺍﺱ ﮐﺎ ﺷﮑﺮﯾﮧ ﻟﯿﮑﻦ
ﮐﺒﮭﯽ ﺳﻮﭼﺎ ﻗﻀﺎ ﮐﮯ ﻭﻗﺖ ﺗﻢ ﻧﮯ ﮐﺘﻨﮯ ﭨﺎﻟﮯ ﮨﯿﮟ

ﺗﻮ ﮨﯽ ﺍﮮ ﺿﺒﻂِ ﻏﻢ ﺍﯾﺴﮯ ﻣﯿﮟ ﻏﻢ ﮐﯽ ﺁﺑﺮﻭ ﺭﮐﮫ ﻟﮯ
ﺑﮭﺮﯼ ﻣﺤﻔﻞ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﺁﻧﮑﮭﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺁﻧﺴﻮ ﺁﻧﮯ ﻭﺍﻟﮯ ﮨﯿﮟ

ﻧﮧ ﺟﺎﻧﮯ ﺣﺸﺮ ﮐﯿﺎ ﮨﻮ ﺭﮨﺮﻭِ ﺭﺍﮦِ ﻣﺤﺒﺖ ﮐﺎ
ﮨﮯ ﻣﻨﺰﻝ ﺩﻭﺭ، ﺳﺮ ﭘﺮ ﺷﺎﻡ ﮨﮯ، ﭘﺎﺅﮞ ﻣﯿﮟ ﭼﮭﺎﻟﮯ ﮨﯿﮟ

ﮨﻮﺍ ﮐﭽﮫ ﺗﻢ ﮐﻮ ﺍﭘﻨﮯ ﻇﻠﻢ ﮐﺎ ﻣﺤﺸﺮ ﻣﯿﮟ ﺍﻧﺪﺍﺯﮦ
ﺧﺪﺍ ﮐﮯ ﺳﺎﻣﻨﮯ ﺟﺘﻨﮯ ﮨﯿﮟ ﺳﺐ ﻓﺮﯾﺎﺩ ﻭﺍﻟﮯ ﮨﯿﮟ

ﮨﻤﺎﺭﺍ ﮐﺎﺭﻭﺍﮞ ﺍﺏ ﺗﮏ ﺗﻮ ﻣﻨﺰﻝ ﭘﺮ ﭘﮩﻨﭻ ﺟﺎﺗﺎ
ﻣﮕﺮ ﯾﮧ ﺭﺍﺳﺘﮯ ﻣﯿﮟ ﭘﯿﭻ ﺗﻮ ﺭﮨﺒﺮ ﻧﮯ ﮈﺍﻟﮯ ﮨﯿﮟ

ﺑﮩﺎﺭﻭﮞ ﮐﯽ ﺧﺒﺮ ﺳﻦ ﮐﺮ ﻗﻔﺲ ﻣﯿﮟ ﺭﻭ ﺗﻮ ﺩﯾﺘﺎ ﮨﻮﮞ
ﮐﺴﯽ ﺳﮯ ﯾﮧ ﻧﮩﯿﮟ ﮐﮩﺘﺎ ﻣﯿﺮﮮ ﭘﺮ ﮐﺎﭦ ﮈﺍﻟﮯ ﮨﯿﮟ

ﺟﮩﺎﮞ ﮨﻢ ﺁ ﺑﺴﮯ ﯾﮧ ﭘﺮﺩۂ ﻇﻠﻤﺎﺕ ﮨﮯ ﺷﺎﯾﺪ
ﮐﮧ ﺗﺎﺭﯾﮑﯽ ﯾﮩﯿﮟ ﺭﮨﺘﯽ ﮨﮯ ﺩﻧﯿﺎ ﻣﯿﮟ ﺍﺟﺎﻟﮯ ﮨﯿﮟ

ﻣﺤﺒﺖ ﻣﯿﮟ ﻧﻈﺮ ﺁﺗﺎ ﻧﮩﯿﮟ ﺍﮨﻞِ ﻣﺤﺒﺖ ﮐﻮ
ﮐﮧ ﺩﻧﯿﺎ ﻣﯿﮟ ﺍﻧﺪﮬﯿﺮﮮ ﭼﮭﺎ ﺭﮨﮯ ﮨﯿﮟ ﯾﺎ ﺍﺟﺎﻟﮯ ﮨﯿﮟ

ﻗﻤﺮؔ ﺗﺴﺒﯿﺢ ﭘﮍﮬﺘﮯ ﺟﺎ ﺭﮨﮯ ﮨﯿﮟ ﺳﻮﺋﮯ ﺑﺖ ﺧﺎﻧﮧ
ﮐﻮﺋﯽ ﺩﯾﮑﮭﮯ ﺗﻮ ﯾﮧ ﺳﻤﺠﮭﮯ ﺑﮍﮮ ﺍﻟﻠﮧ ﻭﺍﻟﮯ ﮨﯿﮟ

ﺭﺳﺘﮯ ﻣﯿﮟ ﻏﯿﺮ ﻣﻞ ﮔﺌﮯ ﯾﺎ ﺭﺍﺕ ﮨﻮ ﮔﺌﯽ
ﺍﻥ ﮐﮯ ﻟﺌﮯ ﮐﻮﺋﯽ ﻧﮧ ﮐﻮﺋﯽ ﺑﺎﺕ ﮨﻮ ﮔﺌﯽ

ﺍﻥ ﮐﯽ ﻃﺮﻑ ﺳﮯ ﺗﺮﮎِ ﻣﻼﻗﺎﺕ ﮨﻮ ﮔﺌﯽ
ﮨﻢ ﺟﺲ ﺳﮯ ﮈﺭ ﺭﮨﮯ ﺗﮭﮯ ﻭﮨﯽ ﺑﺎﺕ ﮨﻮ ﮔﺌﯽ

ﺁﻧﺴﻮ ﺗﮭﻤﮯ ﺗﻮ ﺁﻧﮑﮭﻮﮞ ﮨﯽ ﻣﯿﮟ ﺑﺎﺕ ﮨﻮ ﮔﺌﯽ
ﻣﯿﺨﺎﻧﮯ ﺟﯿﺴﮯ ﮐﮭﻞ ﮔﺌﮯ ﺑﺮﺳﺎﺕ ﮨﻮ ﮔﺌﯽ

ﺁﺋﯿﻨﮧ ﺩﯾﮑﮭﻨﮯ ﻣﯿﮟ ﻧﺌﯽ ﺑﺎﺕ ﮨﻮ ﮔﺌﯽ
ﺍﻥ ﺳﮯ ﮨﯽ ﺁﺝ ﺍﻥ ﮐﯽ ﻣﻼﻗﺎﺕ ﮨﻮ ﮔﺌﯽ

ﻃﮯ ﺍﻥ ﺳﮯ ﺭﻭﺯ ﺣﺸﺮ ﻣﻼﻗﺎﺕ ﮨﻮ ﮔﺌﯽ
ﺍﺗﻨﯽ ﺳﯽ ﺑﺎﺕ ﮐﺘﻨﯽ ﺑﮍﯼ ﺑﺎﺕ ﮨﻮ ﮔﺌﯽ

ﮐﻢ ﻇﺮﻓﯽِ ﺣﯿﺎﺕ ﺳﮯ ﺗﻨﮓ ﺁ ﮔﯿﺎ ﺗﮭﺎ ﻣﯿﮟ
ﺍﭼﮭﺎ ﮨﻮﺍ ﻗﻀﺎ ﺳﮯ ﻣﻼﻗﺎﺕ ﮨﻮ ﮔﺌﯽ

ﺩﻥ ﻣﯿﮟ ﺑﮭﭩﮏ ﺭﮨﮯ ﮨﯿﮟ ﺟﻮ ﻣﻨﺰﻝ ﮐﯽ ﺭﺍﮦ ﺳﮯ
ﯾﮧ ﻟﻮﮒ ﮐﯿﺎ ﮐﺮﯾﮟ ﮔﮯ ﺍﮔﺮ ﺭﺍﺕ ﮨﻮ ﮔﺌﯽ

ﺁﺋﮯ ﮨﯿﮟ ﻭﮦ ﻣﺮﯾﺾِ ﻣﺤﺒﺖ ﮐﻮ ﺩﯾﮑﮭﻨﮯ
ﺁﻧﺴﻮ ﺑﺘﺎ ﺭﮨﮯ ﮨﯿﮟ ﮐﻮﺋﯽ ﺑﺎﺕ ﮨﻮ ﮔﺌﯽ

ﺍﭼﮭﺎ ﮨﻮﺍ ﮐﮧ ﺗﻢ ﻣﺮﮮ ﺭﻭﻧﮯ ﭘﮧ ﮨﻨﺲ ﺩﺋﯿﮯ
ﮐﮩﻨﮯ ﮐﻮ ﻋﻤﺮ ﺑﮭﺮ ﮐﮯ ﻟﺌﮯ ﺑﺎﺕ ﮨﻮ ﮔﺌﯽ

ﺍﺏ ﺩﺷﻤﻨﻮﮞ ﮐﯽ ﻣﺠﮫ ﺳﮯ ﮨﻮ ﮐﺮﺗﮯ ﺷﮑﺎﯾﺘﯿﮟ
ﺟﺐ ﺩﺷﻤﻨﻮﮞ ﮐﯽ ﻣﺠﮫ ﺳﮯ ﻣﻼﻗﺎﺕ ﮨﻮ ﮔﺌﯽ

ﺗﮭﺎ ﺍﻭﺭ ﮐﻮﻥ ﭘﻮﭼﮭﻨﮯ ﻭﺍﻻ ﻣﺮﯾﺾ ﮐﺎ
ﺗﻢ ﺁ ﮔﺌﮯ ﺗﻮ ﭘﺮﺳﺶِ ﺣﺎﻻﺕ ﮨﻮ ﮔﺌﯽ

ﺍﮮ ﺑﻠﺒﻞِ ﺑﮩﺎﺭِ ﭼﻤﻦ ﺍﭘﻨﯽ ﺧﯿﺮ ﻣﺎﻧﮓ
ﺻﯿﺎﺩ ﻭ ﺑﺎﻏﺒﺎﮞ ﻣﯿﮟ ﻣﻼﻗﺎﺕ ﮨﻮ ﮔﺌﯽ

ﺟﺐ ﺯﻟﻒ ﯾﺎﺩ ﺁ ﮔﺌﯽ ﯾﻮﮞ ﺍﺷﮏ ﺑﮩﮧ ﮔﺌﮯ
ﺟﯿﺴﮯ ﺍﻧﺪﮬﯿﺮﯼ ﺭﺍﺕ ﻣﯿﮟ ﺑﺮﺳﺎﺕ ﮨﻮ ﮔﺌﯽ

ﮔﻠﺸﻦ ﮐﺎ ﮨﻮﺵ ﺍﮨﻞِ ﺟﻨﻮﮞ ﮐﻮ ﺑﮭﻼ ﮐﮩﺎﮞ
ﺻﺤﺮﺍ ﻣﯿﮟ ﭘﮍ ﺭﮨﮯ ﺗﻮ ﺑﺴﺮ ﺭﺍﺕ ﮨﻮ ﮔﺌﯽ

ﺩﺭ ﭘﺮﺩﮦ ﺑﺰﻡِ ﻏﯿﺮ ﻣﯿﮟ ﺩﻭﻧﻮﮞ ﮐﯽ ﮔﻔﺘﮕﻮ
ﺍﭨﮭﯽ ﺍﺩﮬﺮ ﻧﮕﺎﮦ ﺍﺩﮬﺮ ﺑﺎﺕ ﮨﻮ ﮔﺌﯽ

ﮐﺐ ﺗﮏ ﻗﻤﺮؔ ﮨﻮ ﺷﺎﻡ ﮐﮯ ﻭﻋﺪﮮ ﮐﺎ ﺍﻧﺘﻈﺎﺭ
ﺳﻮﺭﺝ ﭼﮭﭙﺎ ﭼﺮﺍﻍ ﭼﻠﮯ ﺭﺍﺕ ﮨﻮ ﮔﺌﯽ

قمر جلالوی سلام اشعار قمر جلالوی سلام اشعار قمر جلالوی سلام اشعار قمر جلالوی سلام اشعار قمر جلالوی سلام اشعار قمر جلالوی سلام اشعار قمر جلالوی سلام اشعار قمر جلالوی سلام اشعار

اپنا تبصرہ بھیجیں