56

بیروت میں شاہراہ جنرل قاسم سلیمانی کے نام سے منسوب

Spread the love

بیروت(صرف اردو آن لائن نیوز)(بیروت شاہراہ قاسم سلیمانی)لبنان کے دارالحکومت بیروت کے

جنوب میں حزب اللہ کے گڑھ علاقے میں ایک شارع کا نام ایران کے مقتول میجر جنرل قاسم

سلیمانی سے منسوب کردیا گیا ہے۔

اس شارع پر نصب نام کے بورڈ کی تصاویر سوشل میڈیا پر پوسٹ کی گئی ہیں۔اس پر یہ لکھا ہے:

’’ شارع شہید الحاج قاسم سلیمانی‘‘۔ یہ شارع بیروت کے جنوب میں واقع بلدیہ الغبیری میں ہے۔ اس سے

قبل اس کا نام ’’خیالی دنیا‘‘ تھا۔

بیروت کا یہ جنوبی علاقہ ’’دحیہ‘‘ کہلاتا ہے اور یہ شیعہ ملیشیا حزب اللہ کا مضبوط گڑھ سمجھا جاتا ہے۔

لبنانی قانون کے تحت کسی بھی شاہراہ یا شارع کے نام کی تبدیلی کی وزارتِ داخلہ منظوری دیتی

ہے۔فوری طور پر یہ واضح نہیں ہوا کہ آیا وزارتِ داخلہ نے اس شارع کے نام کی تبدیلی کی منظوری

دی ہے یا بلدیہ نے از خود ہی اس کانام تبدیل کردیا ہے۔

معیاری اور نایاب اردو کتب پڑھنے اور داونلوڈ کرنے کے لیے یہاں کلک کریں

سوشل میڈیا پر بعض عرب اور لبنانی صارفین نے نام کی اس تبدیلی کے اقدام پر کڑی نکتہ چینی کی

ہے اور اس کو لبنان میں ایران کے اثرورسوخ کی ایک اور علامت قرار دیا ہے۔

لبنان میں مقیم ایک صحافی نے عربی میں یہ عبارت ٹویٹ کی ہے:’’ بلدیہ الغبیری سے اگر

ہوسکا تو وہ دارالحکومت بیروت کا نام ’’الحاج قاسم سلیمانی شہر‘‘ کردے گی۔‘‘

ایران اور حزب اللہ کے ناقد لبنانی شیعہ عالم محمد علی الحسین نے عربی میں ایک ٹویٹ میں اس شارع

کے نام کی تبدیلی کو ’’اشتعال انگیز‘‘ قراردیا ہے اور اس کو لبنانیوں اور عربوں کے محسوسات کے

لیے ایک کھلا چیلنج قراردیا ہے جو ان کے بہ قول ’’قاسم سلیمانی کو ایک دہشت گرد کے طور پر

جانتے ہیں اورانھوں نے بہت سے عرب ملکوں میں اپنی تخریبی مہر کو اپنی یادگار چھوڑا ہے۔‘‘

میجر جنرل قاسم سلیمانی ایران کی سپاہِ پاسداران انقلاب کی بیرون ملک کارروائیوں کی ذمے دار

القدس فورس کے سربراہ تھے۔ وہ تین جنوری کو عراق کے دارالحکومت بغداد کے بین الاقوامی ہوائی

اڈے پر امریکا کے ایک فضائی حملے میں ہلاک ہوگئے تھے۔

پاکستان میں فیری سروس کے آغاز کی منظوری کا امکان

اس شارع پر نصب نام کے بورڈ کی تصاویر سوشل میڈیا پر پوسٹ کی گئی ہیں۔اس پر یہ لکھا ہے:

’’ شارع شہید الحاج قاسم سلیمانی‘‘۔ یہ شارع بیروت کے جنوب میں واقع بلدیہ الغبیری میں ہے۔ اس سے

قبل اس کا نام ’’خیالی دنیا‘‘ تھا۔

بیروت کا یہ جنوبی علاقہ ’’دحیہ‘‘ کہلاتا ہے اور یہ شیعہ ملیشیا حزب اللہ کا مضبوط گڑھ سمجھا جاتا ہے۔

لبنانی قانون کے تحت کسی بھی شاہراہ یا شارع کے نام کی تبدیلی کی وزارتِ داخلہ منظوری دیتی

ہے۔فوری طور پر یہ واضح نہیں ہوا کہ آیا وزارتِ داخلہ نے اس شارع کے نام کی تبدیلی کی منظوری

دی ہے یا بلدیہ نے از خود ہی اس کانام تبدیل کردیا ہے۔

سوشل میڈیا پر بعض عرب اور لبنانی صارفین نے نام کی اس تبدیلی کے اقدام پر کڑی نکتہ چینی کی

ہے اور اس کو لبنان میں ایران کے اثرورسوخ کی ایک اور علامت قرار دیا ہے۔

لبنان میں مقیم ایک صحافی نے عربی میں یہ عبارت ٹویٹ کی ہے:’’ بلدیہ الغبیری سے اگر ہوسکا

تو وہ دارالحکومت بیروت کا نام ’’الحاج قاسم سلیمانی شہر‘‘ کردے گی۔‘‘

اسلام آباد ہائیکورٹ نے سنتھا رچی کی ملک بدری روک دی

ایران اور حزب اللہ کے ناقد لبنانی شیعہ عالم محمد علی الحسین نے عربی میں ایک ٹویٹ میں اس شارع

کے نام کی تبدیلی کو ’’اشتعال انگیز‘‘ قراردیا ہے اور اس کو لبنانیوں اور عربوں کے محسوسات کے

لیے ایک کھلا چیلنج قراردیا ہے جو ان کے بہ قول ’’قاسم سلیمانی کو ایک دہشت گرد کے طور پر

جانتے ہیں اورانھوں نے بہت سے عرب ملکوں میں اپنی تخریبی مہر کو اپنی یادگار چھوڑا ہے۔‘‘

میجر جنرل قاسم سلیمانی ایران کی سپاہِ پاسداران انقلاب کی بیرون ملک کارروائیوں کی ذمے دار القدس فورس کے سربراہ تھے۔ وہ تین جنوری کو عراق کے دارالحکومت بغداد کے بین الاقوامی ہوائی اڈے پر امریکا کے ایک فضائی حملے میں ہلاک ہوگئے تھے۔

بیروت شاہراہ قاسم سلیمانی

اپنا تبصرہ بھیجیں