saif 162

سیف الدین سیف کی ستائیسویں برسی

Spread the love

سیف اندازِ بیاں رنگ بدل دیتا ہے
ورنہ دنیا میں کوئی بات نئی بات نہیں

یہ شعر سیف الدین سیف کا ہے۔ جن کی آج ستائیسویں برسی ہے. ان کا 12 جولائی، 1993 کو

لاہور میں انتقال ہوا اور ماڈل ٹاؤن کے قبرستان میں سپردِ خاک ہوئے.


سیف الدین سیف 20 مارچ، 1922ء کو امرتسر میں پیدا ہوئے۔ جہاں ان کے آبأ و اجداد

کشمیر سے ہجرت کرکے آباد ہوئے تھے۔ والد کا نام خواجہ معراج دین تھا . سیف اڑھائی

برس کے ہوئے تو ان کی والدہ کا انتقال ہو گیا۔ سیف نے ابتدائی تعلیم مسلم ہائی اسکول

امرتسر سے حاصل کی لیکن میٹرک کا امتحان بطور پرائیویٹ امیدوار پاس کیا۔ پھر

ایم اے او کالج امرتسر میں داخل ہو گئے۔ یہاں پر پرنسپل ڈاکٹر ایم ڈی تاثیر اور انگریزی

کے لیکچرار فیض احمد فیض کی قربت نے علمی و ادبی ذوق پیدا کیا۔

خاکسار تحریک میں شامل ہوجانے کی وجہ سے سیف کی تعلیم نامکمل رہی ۔ کچھہ روابط

فلمی دنیا کی طرف لے گئے اور سیف فلمی کہانیاں لکھنے لگے۔ قیام پاکستان کے بعد لاہور

آکر پھر فلمی دنیا سے وابستہ ہو گئے۔ 1954 میں اپنا ذاتی ادارہ

راہ نما فلمز قائم کیا۔

24 جولائی کو آیا صوفیہ میں نماز جمعہ ادا کریں گے:ترک صدر

انہوں نے جن فلموں کے لئے نغمات تحریر کیے ان میں ہچکولے، امانت، نویلی دلہن،

غلام، محبوبہ، آغوش، آنکھہ کا نشہ، سات لاکھہ، کرتار سنگھہ، طوفان، قاتل، انتقام،

لخت جگر، امراؤ جان ادا، ثریا بھوپالی، عذرا، تہذیب، نارکلی، انجمن، شمع پروانہ

سرِ فہرست ہیں۔ انہوں نے خود بھی فلمیں بنائیں جن میں سات لاکھہ اور کرتار سنگھہ شامل ہیں

ان کے کچھہ مشہور نغمات یہ ہیں:

جلتے ہیں ارمان میرا دل روتا ہے (انارکلی)

وہ خواب سہانا ٹوٹ گیا امید گئی ارمان گئے (لخت جگر)

چل ہٹ ری ہوا گھونگھٹ نہ اٹھا (مادر وطن)

جس طرف آنکھہ اٹھاؤں تیری تصویراں ہیں (ثریا بھوپالی)

میں تیرا شہر چھوڑ جاؤں گا (شمع اور پروانہ)

اظہار بھی مشکل ہے کچھہ کہہ بھی نہیں سکتے (انجمن)

جو بچا تھا لٹانے کے لیے آئے ہیں (امراؤ جان ادا)

آئے موسم رنگیلے سہانے تو چھٹی لے کے آجا بالما (سات لاکھہ)

سیف الدین سیف نے فلم کے ساتھہ ادب سے بھی رابطہ برقرار رکھا اور گیتوں کے ساتھ ساتھ

نظمیں اور غزلیں بھی تخلیق کرتے رہے۔ سیف الدین سیف کی شاعری سماج کے مسائل

اور زندگی کے حقائق کو حقیقت پسندانہ انداز میں بیان کرتی ہے۔ ان کی شاعری کے تین

مجموعےخمِ کاکل ، دوردراز اورکفِ گل فروش شائع ہوئے ۔

پی ڈی ایف کتابیں ڈاونلوڈ کرنے کے لیے یہاں کلک کریں

سیف الدین سیف کے کچھہ اشعار

ہم کو تو گردشِ حالات پہ رونا آیا
رونے والے تجھے کس بات پہ رونا آیا

مرنے والوں پہ سیف حیرت کیوں
موت آساں ہو گئی ہوگی

کوئی ایسا اہلِ دل ہو کہ فسانۂ محبت
میں اسے سنا کے روؤں وہ مجھے سنا کے روئے

بڑے خطرے میں ہے حسنِ گلستاں ہم نہ کہتے تھے
چمن تک آگئی دیوارِ زنداں ہم نہ کہتے تھے

کیا قیامت ہے کہ ہجر کے دن بھی
زندگی میں شمار ہوتے ہیں

دشمن گئے تو کشمکشِ دوستی گئی
دشمن گئے کہ دوست ہمارے چلے گئے

تمہارے بعد خدا جانے کیا ہوا دل کو
کسی سے رابطہ بڑھانے کا حوصلہ نہ ہوا

شور دن کو نہیں سونے دیتا
شب کو سناٹا جگا دیتا ہے

اس مسافر کی نقاہت کا ٹھکانہ کیا ہے
سنگِ منزل جسے دیوار نظر آنے لگے

عمر کیسے کٹے گی سیف یہاں
رات کٹتی نظر نہیں آتی

ایسے لمحے بھی گزارے ہیں تیری فرقت میں
جب تری یاد بھی اس دل پہ گراں گزری ہے

دن گزرتا ہے تو لگتا ہے بڑا کام ہوا
رات کٹتی ہے تو اک معرکہ سر ہوتا ہے

سیف مری کم علمی میرے کام آئی
بستی کے سب دانشور نیلام ہوئے

بدلا ہے مگر بھیس غم عشق کا تو نے
بس اے غم دوراں تجھے پہچان گئے ہم

مری داستان حسرت وہ سنا سنا کے روئے
مرے آزمانے والے مجھے آزما کے روئے

جانے اس شہر کا معیار صداقت کیا ہے
بت بھی ہاتھوں میں لیے پھرتے ہیں قران یہاں

کسی کی یاد سیف اور دل کی حالت
گھنا جنگل اکیلی جھونپڑی ہے

سیف الدین سیف برسی سیف الدین سیف برسی

اپنا تبصرہ بھیجیں