53

سابق وزیر اعظم نواز شریف کو سزا سنانے والے جج ارشد ملک ملازمت سے برطرف

Spread the love

لاہور (صرف اردو آن لائن نیوز) جج ارشد ملک

لاہور ہائی کورٹ کی انتظامی کمیٹی نے سابق وزیراعظم نواز شریف کو العزیزیہ ریفرنس میں سزا

سنانے والے جج ارشد ملک کو ملازمت سے برطرف کردیا جبکہ مسلم لیگ (ن) کے صدر شہباز

شریف نے مذکورہ فیصلے پر اظہار تشکر کیا ہے۔اس حوالے سے معلومات رکھنے والے ذرائع نے

ڈان نیوز کو بتایا کہ لاہور ہائی کورٹ کے چیف جسٹس قاسم خان کی صدارت میں انتظامی کمیٹی کا

اجلاس ہوا، جس میں چیف جسٹس کے علاوہ جسٹس امیر بھٹی، جسٹس ملک شہزاد احمد خان، جسٹس

جج ارشد ملک کی وجہ سے محنتی اور ایماندار ججوں کے سر شرم سے جھک گئے،چیف جسٹس

شجاعت علی خان، جسٹس عائشہ اے ملک، جسٹس شاہد وحید اور جسٹس علی باقر نجفی شامل تھے۔

مذکورہ اجلاس میں احتساب عدالت کے سابق جج اور سابق وزیراعظم نواز شریف کو العزیزیہ

ریفرنس میں سزا سنانے والے ارشد ملک کو عہدے سے برطرف کرنے کی منظوری دی گئی۔تاہم

یہاں یہ واضح رہے کہ اس سلسلے میں ابھی تک کوئی باضابطہ نوٹیفکیشن جاری نہیں کیا گیا۔خیال

رہے کہ جج ارشد ملک نے 4 دسمبر 2018 کو العزیزیہ اسٹیل ملز کرپشن ریفرنس میں سابق

وزیراعظم نواز شریف کو 7 سال قید اور جرمانے کی سزا سنائی تھی جبکہ فلیگ شپ انویسٹمنٹس

سے متعلق دوسرے ریفرنس میں بری کردیا تھا۔تاہم 6 جولائی 2019 کو اسلام آباد کی احتساب عدالت

کے سابق جج ارشد ملک کا ایک ویڈیو اسکینڈل سامنے آیا تھا، جس کے بعد اسلام آباد ہائیکورٹ نے

انہیں عہدے سے ہٹا دیا تھا جبکہ اس وقت کے چیف جسٹس لاہور ہائیکورٹ نے انہیں سیشن کورٹ

لاہور میں آفیسر آن اسپیشل ڈیوٹی (او ایس ڈی) تعینات کرتے ہوئے معاملے کی انکوائری کا حکم دیا

تھا۔مذکورہ معاملے کی انکوائری کے لیے جسٹس سردار احمد نعیم کو انکوائری جج مقرر کیا گیا تھا،

جنہوں نے تحقیقات مکمل کرکے رپورٹ انتظامی کمیٹی کو پیش کی، تاہم ارشد ملک نے کمیٹی کے

سامنے پیش ہوکر اپنے اوپر لگائے گئے الزامات کو من گھڑت اور جھوٹا قرار دیتے ہوئے انہیں تسلیم

کرنے سے انکار کردیا تھا۔

جج ارشد ملک

اپنا تبصرہ بھیجیں

Captcha loading...