44

آج مجید امجد کا 106 واں یوم پیدائش ہے

Spread the love


ﺑﻌﺾ ﺍﺩﯾﺐ ﺍﭘﻨﮯ ﺩﻭﺭ ﻣﯿﮟ ﺩﯾﻮﻗﺎﻣﺖ ﮔﺮﺩﺍﻧﮯ ﺟﺎﺗﮯ ﮨﯿﮟ، ﻟﯿﮑﻦ ﻭﻗﺖ ﮔﺰﺭﻧﮯ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﻟﻮﺡِ ﺯﻣﺎﻧﮧ ﺳﮯ ﺍﻥ ﮐﯽ ﺷﺒﯿﮧ ﻣﭩﺘﯽ ﭼﻠﯽ ﺟﺎﺗﯽ ﮨﮯ، ﺣﺘﯽٰ ﮐﮧ ﮐﭽﮫ ﮨﯽ ﻋﺮﺻﮧ ﮔﺰﺭﻧﮯ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﺍﻥ ﮐﺎ ﻧﺎﻡ ﻭ ﻧﺸﺎﻥ ﺑﮭﯽ ﻧﮩﯿﮟ ﺭﮨﺘﺎ۔ ﺍﺱ ﮐﮯ ﺑﺮﻋﮑﺲ ﺟﻮﮞ ﺟﻮﮞ ﻭﻗﺖ ﮔﺰﺭ ﺭﮨﺎ ﮨﮯ، ﺍﭘﻨﮯ ﺩﻭﺭ ﻣﯿﮟ ﮔﻤﻨﺎﻣﯿﻮﮞ ﮐﮯ ﺩﮬﻨﺪﻟﮑﮯ ﻣﯿﮟ ﮐﮭﻮﺋﮯ ﮨﻮﺋﮯ ﻣﺠﯿﺪ ﺍﻣﺠﺪ ﮐﮯ ﻗﺪ ﻣﯿﮟ ﺍﺿﺎﻓﮧ ﮨﻮﺗﺎ ﭼﻼ ﺟﺎ ﺭﮨﺎ ﮨﮯ۔ ﺍﻥ ﮐﺎ ﺷﻌﺮ ﮨﮯ :(مجید امجد یوم پیدائش)


ﻣﯿﮟ ﺭﻭﺯ ﺍﺩﮬﺮ ﺳﮯ ﮔﺰﺭﺗﺎ ﮨﻮﮞ، ﮐﻮﻥ ﺩﯾﮑﮭﺘﺎ ﮨﮯ
ﻣﯿﮟ ﺟﺐ ﺍﺩﮬﺮ ﺳﮯ ﻧﮧ ﮔﺰﺭﻭﮞ ﮔﺎ، ﮐﻮﻥ ﺩﯾﮑﮭﮯ ﮔﺎ

ﺯﻧﺪﮔﯽ ﻣﯿﮟ ﺗﻮ ﺷﺎﯾﺪ ﻣﺠﯿﺪ ﺍﻣﺠﺪ ﮐﯽ ﻃﺮﻑ ﮐﻢ ﮨﯽ ﺩﯾﮑﮭﺎ ﮔﯿﺎ، ﻟﯿﮑﻦ ﺍﻥ ﮐﮯ ﺍﻧﺘﻘﺎﻝ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﻣﻌﺎﺷﺮﮮ ﮐﮯ ﻋﺎﻡ ﺩﺳﺘﻮﺭ ﮐﮯ ﻣﻄﺎﺑﻖ ﻣﺠﯿﺪ ﺍﻣﺠﺪ ﮐﯽ ﻋﻈﻤﺖ ﮐﻮ ﭘﮩﭽﺎﻧﺎ ﮔﯿﺎ، ﺣﺘﯽٰ ﮐﮧ 2000 ﺀ ﻣﯿﮟ ﻻﮨﻮﺭ ﺳﮯ ﺷﺎﺋﻊ ﮨﻮﻧﮯ ﻭﺍﻟﮯ ﺭﺳﺎﻟﮯ ’ ﮐﺎﻏﺬﯼ ﭘﯿﺮﮨﻦ ‘ ﮐﯽ ﻃﺮﻑ ﺳﮯ ﮐﯿﮯ ﺟﺎﻧﮯ ﺳﺮﻭﮮ ﮐﮯ ﻣﻄﺎﺑﻖ ﻣﺠﯿﺪ ﺍﻣﺠﺪ ﮐﻮ ﺑﯿﺴﻮﯾﮟ ﺻﺪﯼ ﮐﺎﺳﺐ ﺳﮯ ﺑﮍﺍ ﻧﻈﻢ ﮔﻮ ﺷﺎﻋﺮ ﻗﺮﺍﺭ ﺩﯾﺎ ﮔﯿﺎ۔
ﻋﺎﻡ ﻗﺎﺭﺋﯿﻦ ﺗﻮ ﻣﺠﯿﺪ ﺍﻣﺠﺪ ﺗﮏ ﻧﮩﯿﮟ ﭘﮩﻨﭻ ﺳﮑﮯ، ﻟﯿﮑﻦ ﻧﺎﻗﺪﯾﻦ ﺷﺮﻭﻉ ﮨﯽ ﺳﮯ ﻣﺠﯿﺪ ﮐﮯ ﻓﻦ ﮐﮯ ﮔﺮﻭﯾﺪﮦ ﺗﮭﮯ۔ ﯾﮩﯽ ﻭﺟﮧ ﮨﮯ ﮐﮧ ﺗﻘﺮﯾﺒﺎً ﺳﺒﮭﯽ ﺑﮍﮮ ﻧﻘﺎﺩﻭﮞ ﻧﮯ ﺍﻧﮭﯿﮟ ﺧﺮﺍﺝِ ﺗﺤﺴﯿﻦ ﭘﯿﺶ ﮐﯿﺎ ﮨﮯ، ﺍﻭﺭ ﻣﺘﻌﺪﺩ ﺭﺳﺎﺋﻞ ﻣﺠﯿﺪ ﺍﻣﺠﺪ ﻧﻤﺒﺮ ﻧﮑﺎﻝ ﭼﮑﮯ ﮨﯿﮟ۔


ﭼﻨﺎﮞ ﭼﮧ ﺍﻧﻮﺭ ﺳﺪﯾﺪ ﻟﮑﮭﺘﮯ ﮨﯿﮟ :
” ﻣﺠﯿﺪ ﺍﻣﺠﺪ ﺍﻥ ﺧﻮﺵ ﻗﺴﻤﺖ ﺷﺎﻋﺮﻭﮞ ﻣﯿﮟ ﺳﮯ ﮨﮯ ﺟﺲ ﻧﮯ ﺍﭘﻨﯽ ﺯﻧﺪﮔﯽ ﻣﯿﮟ ﺍﭘﻨﮯ ﻣﺘﻌﺪﺩ ﻣﻌﺎﺻﺮﯾﻦ ﮐﯽ ﻃﺮﺡ ﺷﮩﺮﺕ ﺍﻭﺭ ﺩﻭﻟﺖ ﮐﯽ ﭼﻮﮨﺎ ﺩﻭﮌ ﻣﯿﮟ ﺣﺼﮧ ﻧﮩﯿﮟ ﻟﯿﺎ، ﻧﮧ ﮐﺴﯽ ﺳﺮﮐﺎﺭﯼ ﺩﺭﺑﺎﺭ ﻣﯿﮟ ﺣﺎﺿﺮﯼ ﺩﯼ۔ ﻧﮧ ﮐﺴﯽ ﺗﻤﻐﮯ ﯾﺎ ﺍﯾﻮﺍﺭﮈ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﺗﻌﻠﻘﺎﺕ ﮨﻤﻮﺍﺭ ﮐﯿﮯ، ﻧﮧ ﺍﺧﺒﺎﺭﯼ ﺳﻄﺢ ﭘﺮ ﻣﮩﻢ ﭼﻼﺋﯽ ﻟﯿﮑﻦ ﻭﻓﺎﺕ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﺟﺐ ﻭﮦ ﺟﺴﻤﺎﻧﯽ ﻃﻮﺭ ﭘﺮ ﮨﻢ ﻣﯿﮟ ﻣﻮﺟﻮﺩ ﻧﮩﯿﮟ ﺭﮨﺎ۔ ﺗﻮ ﺷﮩﺮﺕ ﭘﺮ ﺍﻓﺸﺎﮞ ﮨﻮ ﮐﺮ ﺍﺱ ﮐﮯ ﭘﯿﭽﮭﮯ ﺩﻭﮌﻧﮯ ﻟﮕﯽ، ﺍﺱ ﮐﯽ ﻋﻈﻤﺖ ﮐﮯ ﺍﻋﺘﺮﺍﻑ ﮐﺎ ﺣﻠﻘﮧ ﻭﺳﯿﻊ ﮨﻮﻧﺎ ﺷﺮﻭﻉ ﮨﻮ ﮔﯿﺎ ﺍﻭﺭ ﯾﮧ ﻧﻘﻄﮧ ﺳﮯ ﺑﮍﮪ ﮐﺮ ﻗﻮﺱ ﻣﯿﮟ ﺗﺒﺪﯾﻞ ﮨﻮﺍ ﺍﻭﺭ ﭘﮭﺮ ﺩﺍﺋﺮﮦ ﺩﺭ ﺩﺍﺋﺮﮦ ﭘﮭﯿﻠﺘﺎ ﮔﯿﺎ۔ “
ﻣﺠﯿﺪ ﺍﻣﺠﺪ ﮐﯽ ﭘﯿﺪﺍﺋﺶ 29 ﺟﻮﻥ 1914 ﺀﮐﻮ ﺟﮭﻨﮓ ﻣﯿﮟ ﻣﻌﻤﻮﻟﯽ ﺧﺎﻧﺪﺍﻥ ﻣﯿﮟ ﮨﻮﺋﯽ ﺗﮭﯽ۔ ﺍﻥ ﮐﮯ ﺍﺑﺘﺪﺍﺋﯽ ﺣﺎﻻﺕ ﺑﮍﮮ ﮨﯽ ﻧﺎﺧﻮﺷﮕﻮﺍﺭ ﺗﮭﮯ، ﺍﺱ ﻟﯿﮯ ﺍﻥ ﮐﯽ ﺯﻧﺪﮔﯽ ﻣﯿﮟ ﺩﺷﻮﺍﺭﯾﺎﮞ ﮨﯽ ﺩﺷﻮﺍﺭﯾﺎﮞ ﺗﮭﯿﮟ۔ ﺍﺑﺘﺪﺍﺋﯽ ﺗﻌﻠﯿﻢ ﺍﻧﮩﻮﮞ ﻧﮯ ﺟﮭﻨﮓ ﮐﮯ ﻣﺪﺭﺳﮧ ﺍﻭﺭ ﺍﺳﮑﻮﻝ ﻣﯿﮟ ﺣﺎﺻﻞ ﮐﯽ ﺗﮭﯽ۔ ﭘﮭﺮ ﻭﮦ ﺍﻋﻠﯽٰ ﺗﻌﻠﯿﻢ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﻻﮨﻮﺭ ﭼﻠﮯ ﮔﺌﮯ ﺗﮭﮯ۔ ﺟﮭﻨﮓ ﻣﯿﮟ ﻭﺍﭘﺴﯽ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﺍﯾﮏ ﮨﻔﺘﮧ ﻭﺍﺭ ﺍﺧﺒﺎﺭ ” ﻋﺮﻭﺝ “ ﺳﮯ ﻭﺍﺑﺴﺘﮧ ﮨﻮ ﮔﺌﮯ ﺗﮭﮯ۔ ﻟﯿﮑﻦ 1939 ﺀﻣﯿﮟ ﺍﻧﮕﺮﯾﺰﻭﮞ ﮐﮯ ﺧﻼﻑ ﺍﻥ ﮐﯽ ﺍﯾﮏ ﻧﻈﻢ ﺷﺎﺋﻊ ﮨﻮﻧﮯ ﭘﺮ ﺍﻧﮩﯿﮟ ﺍﺧﺒﺎﺭ ﺳﮯ ﺭﺧﺼﺖ ﮨﻮﻧﺎ ﭘﮍﺍ۔

پی ڈی ایف کتابیں ڈاونلوڈ کرنے کے لیے یہاں کلک کریں

ﺍﺳﯽ ﺯﻣﺎﻧﮯ ﻣﯿﮟ ﺍﻧﮭﻮﮞ ﻧﮯ ‘ ﺷﺎﻋﺮ ‘ ﮐﮯ ﻧﺎﻡ ﺳﮯ ﺍﯾﮏ ﻧﻈﻢ ﻟﮑﮭﯽ ﺗﮭﯽ، ﺟﺲ ﮐﺎﺍﯾﮏ ﺑﻨﺪ ﮐﭽﮫ ﯾﻮﮞ ﺗﮭﺎ :

ﯾﮧ ﻣﺤﻠﻮﮞ ﯾﮧ ﺗﺨﺘﻮﮞ ﯾﮧ ﺗﺎﺟﻮﮞ ﮐﯽ ﺩﻧﯿﺎ
ﮔﻨﺎﮨﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﻟﺘﮭﮍﮮ ﺭﻭﺍﺟﻮﮞ ﮐﯽ ﺩﻧﯿﺎ
ﻣﺤﺒﺖ ﮐﮯ ﺩﺷﻤﻦ ﺳﻤﺎﺟﻮﮞ ﮐﯽ ﺩﻧﯿﺎ

ﺍﺳﯽ ﻣﺼﺮﻋﮯ ﮐﻮ ﻟﮯ ﮐﺮ ﺳﺎﺣﺮ ﻟﺪﮬﯿﺎﻧﻮﯼ ﻧﮯ ﻓﻠﻢ ’ ﭘﯿﺎﺳﺎ ‘ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﮔﯿﺖ ﻟﮑﮭﺎ

ﯾﮧ ﻣﺤﻠﻮﮞ ﯾﮧ ﺗﺨﺘﻮﮞ ﯾﮧ ﺗﺎﺟﻮﮞ ﮐﯽ ﺩﻧﯿﺎ
ﯾﮧ ﺍﻧﺴﺎﮞ ﮐﮯ ﺩﺷﻤﻦ ﺳﻤﺎﺟﻮﮞ ﮐﯽ ﺩﻧﯿﺎ
ﯾﮧ ﺩﻧﯿﺎ ﺍﮔﺮ ﻣﻞ ﺑﮭﯽ ﺟﺎﺋﮯ ﺗﻮ ﮐﯿﺎ ﮨﮯ

ﻣﺤﻤﺪ ﺭﻓﯿﻊ ﮐﯽ ﺁﻭﺍﺯ ﻣﯿﮟ ﮔﺎﺋﮯ ﮔﺌﮯ ﺍﺱ ﻧﻐﻤﮯ ﮐﻮ ﺑﮯ ﺣﺪ ﻣﻘﺒﻮﻟﯿﺖ ﻣﻠﯽ ﺗﮭﯽ۔

ﺳﺎﺣﺮ ﮨﯽ ﭘﺮ ﺑﺲ ﻧﮩﯿﮟ، ﺑﻠﮑﮧ ﻣﺠﯿﺪ ﺍﻣﺠﺪ ﮐﯽ ﺷﺎﻋﺮﯼ ﮐﯽ ﺟﮭﻠﮏ ﺟﺪﯾﺪ ﺩﻭﺭ ﮐﮯ ﮐﺌﯽ ﺷﻌﺮﺍ ﮐﮯ ﮨﺎﮞ ﺑﮭﯽ ﻧﻈﺮ ﺁﺗﯽ ﮨﮯ۔ ﺑﻠﮑﮧ ﺑﻌﺾ ﻧﮯ ﺗﻮ ﻣﺠﯿﺪ ﺍﻣﺠﺪ ﮐﯽ ﮐﭽﮫ ﻧﻈﻤﻮﮞ ﭘﺮ ﮨﺎﺗﮫ ﺻﺎﻑ ﮐﺮ ﮐﮯ ﺍﭘﻨﯽ ﺷﮩﺮﺕ ﮐﮯ ﻣﯿﻨﺎﺭ ﮐﮭﮍﮮ ﮐﺮ ﻟﯿﮯ ﮨﯿﮟ۔ ﻣﺜﺎﻝ ﮐﮯ ﻃﻮﺭ ﭘﺮ ﻣﺠﯿﺪ ﺍﻣﺠﺪ ﮐﮯ ﺍﺑﺘﺪﺍﺋﯽ ﺩﻭﺭ ﮐﯽ ﺍﯾﮏ ﻧﻈﻢ ﮐﮯ ﭼﻨﺪ ﻣﺼﺮﻋﮯ ﻣﻼﺣﻈﮧ ﻓﺮﻣﺎﺋﯿﮯ :

ﮐﺎﺵ ﻣﯿﮟ ﺗﯿﺮﮮ ﺑُﻦِ ﮔﻮﺵ ﻣﯿﮟ ﺑُﻨﺪﺍ ﮨﻮﺗﺎ
ﺭﺍﺕ ﮐﻮ ﺑﮯ ﺧﺒﺮﯼ ﻣﯿﮟ ﺟﻮ ﻣﭽﻞ ﺟﺎﺗﺎ ﻣﯿﮟ
ﺗﻮ ﺗﺮﮮ ﮐﺎﻥ ﺳﮯ ﭼُﭗ ﭼﺎﭖ ﻧﮑﻞ ﺟﺎﺗﺎ ﻣﯿﮟ
ﺻُﺒﺢ ﮐﻮ ﮔﺮﺗﮯ ﺗﺮﯼ ﺯُﻟﻔﻮﮞ ﺳﮯ ﺟﺐ ﺑﺎﺳﯽ ﭘﮭﻮﻝ
ﻣﯿﺮﮮ ﮐﮭﻮ ﺟﺎﻧﮯ ﭘﮧ ﮨﻮﺗﺎ ﺗﺮﺍ ﺩﻝ ﮐﺘﻨﺎ ﻣﻠﻮﻝ
ﺗﻮ ﻣﺠﮭﮯ ﮈﮬﻮﻧﮉﺗﯽ ﮐﺲ ﺷﻮﻕ ﺳﮯﮔﮭﺒﺮﺍﮨﭧ ﻣﯿﮟ
ﺍﭘﻨﮯ ﻣﮩﮑﮯ ﮨﻮﺋﮯ ﺑﺴﺘﺮ ﮐﯽ ﮨﺮ ﺍﮎ ﺳﻠﻮﭦ ﻣﯿﮟ

ﺍﻭﺭ ﺍﺏ ﺟﺪﯾﺪ ﺷﺎﻋﺮ ﻭﺻﯽ ﺷﺎﮦ ﮐﯽ ﻧﻈﻢ ﺩﯾﮑﮭﺌﮯ :

ﮐﺎﺵ ﻣﯿﮟ ﺗﯿﺮﮮ ﺣﺴﯿﮟ ﮨﺎﺗﮫ ﮐﺎ ﮐﻨﮕﻦ ﮨﻮﺗﺎ
ﺗﻮ ﺑﮍﮮ ﭘﯿﺎﺭ ﺳﮯ ﭼﺎﺅ ﺳﮯ ﺑﮍﮮ ﻣﺎﻥ ﮐﮯ ﺳﺎﺗﮫ
ﺍﭘﻨﯽ ﻧﺎﺯﮎ ﺳﯽ ﮐﻼﺋﯽ ﻣﯿﮟ ﭼﮍﮬﺎﺗﯽ ﻣﺠﮫ ﮐﻮ
ﺍﻭﺭ ﺑﮯ ﺗﺎﺑﯽ ﺳﮯ ﻓﺮﺻﺖ ﮐﮯ ﺧﺰﺍﮞ ﻟﻤﺤﻮﮞ ﻣﯿﮟ
ﺗﻮ ﮐﺴﯽ ﺳﻮﭺ ﻣﯿﮟ ﮈﻭﺑﯽ ﺟﻮ ﮔﮭﻤﺎﺗﯽ ﻣﺠﮫ ﮐﻮ
ﻣﯿﮟ ﺗﯿﺮﮮ ﮨﺎﺗﮫ ﮐﯽ ﺧﻮﺷﺒﻮ ﺳﮯ ﻣﮩﮏ ﺳﺎ ﺟﺎﺗﺎ

’ ﻋﺮﻭﺝ ‘ ﭼﮭﻮﮌﻧﮯ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﻣﺠﯿﺪ ﺍﻣﺠﺪ ﮐﻮ ﺟﮭﻨﮓ ﮈﺳﭩﺮﮐﭧ ﺑﻮﺭﮈ ﻣﯿﮟ ﮐﻠﺮﮐﯽ ﻣﻞ ﮔﺌﯽ۔ ﺍﻧﮩﻮﮞ ﻧﮯ ﺧﺎﻟﮧ ﮐﯽ ﺑﯿﭩﯽ ﺳﮯ ﺷﺎﺩﯼ ﮐﯽ ﺗﮭﯽ ﺟﻮ ﺍﺳﮑﻮﻝ ﻣﯿﮟ ﭨﯿﭽﺮ ﺗﮭﯽ۔ ﻟﯿﮑﻦ ﯾﮧ ﺷﺎﺩﯼ ﯾﮑﺴﺮ ﻧﺎﮐﺎﻡ ﺛﺎﺑﺖ ﮨﻮﺋﯽ۔ ﺑﻠﮑﮧ ﺍﺱ ﮐﮯ ﺳﺒﺐ ﺍﻥ ﮐﮯ ﺫﮨﻨﯽ ﺧﻠﺠﺎﻥ ﻣﯿﮟ ﺍﺿﺎﻓﮧ ﮨﻮ ﺗﺎ ﮔﯿﺎ۔ ﺑﻌﺪ ﻣﯿﮟ مجید ﺍﻣﺠﺪ ﻣﺤﮑﻤﮧ ﻏﺬﺍ ﺳﮯ ﻭﺍﺑﺴﺘﮧ ﺭﮦ ﮐﺮ ﻣﺨﺘﻠﻒ ﺷﮩﺮﻭﮞ ﻣﯿﮟ ﺗﻌﯿﻨﺎﺕ ﺭﮨﮯ۔

ﻣﺠﯿﺪ ﺍﻣﺠﺪ ﮐﯽ ﺯﻧﺪﮔﯽ ﻣﯿﮟ ﮨﯽ ﺍﻥ ﮐﺎ ﺷﻌﺮﯼ ﻣﺠﻤﻮﻋﮧ ” ﺷﺐِ ﺭﻓﺘﮧ “ ﺷﺎﺋﻊ ﮨﻮﺍ ﺗﮭﺎ۔ ﺟﺲ ﮐﺎ ﭘﯿﺶ ﻟﻔﻆ ﺍﻧﮩﻮﮞ ﻧﮯ ﻣﻨﻈﻮﻡ ﻟﮑﮭﺎ ﺗﮭﺎ۔ ﺍﺳﮯ 1958 ﺀﻣﯿﮟ ﻧﯿﺎ ﺍﺩﺍﺭﮦ ﻻﮨﻮﺭ ﻧﮯ ﺷﺎﺋﻊ ﮐﯿﺎ ﺗﮭﺎ۔ ﺗﺎﮨﻢ ﺍﺱ ﮐﯽ ﺍﺷﺎﻋﺖ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﺑﻌﺾ ﺣﻠﻘﻮﮞ ﮐﯽ ﻃﺮﻑ ﺳﮯ ﺭﺩِ ﻋﻤﻞ ﭘﺮ ﻣﺠﯿﺪ ﺍﻣﺠﺪ ﻧﺎﺧﻮﺵ ﺗﮭﮯ، ﺟﺲ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﺍﻧﮭﻮﮞ ﻧﮯ ﺍﭘﻨﯽ ﺯﻧﺪﮔﯽ ﻣﯿﮟ ﮐﻮﺋﯽ ﻣﺠﻤﻮﻋﮧ ﺷﺎﺋﻊ ﻧﮩﯿﮟ ﮐﺮﻭﺍﯾﺎ۔


ﺍﻥ ﮐﯽ ﻣﻮﺕ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﺑﻘﯿﮧ ﮐﻼﻡ ﺟﺎﻭﯾﺪ ﻗﺮﯾﺸﯽ ﻧﮯ 1976 ﺀﻣﯿﮟ ” ﺷﺐ ﺭﻓﺘﮧ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ “ ﮐﮯ ﻧﺎﻡ ﺳﮯ ﺷﺎﺋﻊ کیا ﺗﮭﺎ۔
ﮈﺍﮐﭩﺮ ﺧﻮﺍﺟﮧ ﻣﺤﻤﺪ ﺫﮐﺮﯾﺎ ﻧﮯ ﻣﮑﻤﻞ ﮐﻼﻡ ” ﮐﻠﯿﺎﺕ ﻣﺠﯿﺪ ﺍﻣﺠﺪ ﮐﮯ ﻋﻨﻮﺍﻥ ﺳﮯ ﺳﻨﮧ 1979 ﺀﻣﯿﮟ ﺷﺎﺋﻊ ﮐﯿﺎ۔ ﺗﺎﺝ ﺷﮩﯿﺪ ﻧﮯ ﺭﺳﺎﻟﮧ ” ﻗﻨﺪ “ ﮐﺎ ﻣﺠﯿﺪ ﺍﻣﺠﺪ ﻧﻤﺒﺮ ﺑﮭﯽ ﻧﮑﺎﻻ ﺗﮭﺎ۔ ﺍﺱ ﮐﮯ ﻋﻼﻭﮦ ﺩﺳﺘﺎﻭﯾﺰ ﻣﯿﮟ ﺍﯾﮏ ﺧﺼﻮﺻﯽ ﺷﻤﺎﺭﮦ ﻣﺠﯿﺪ ﺍﻣﺠﺪ ﮐﮯ ﻧﺎﻡ ﻭﻗﻒ ﮐﯿﺎ۔ ﭼﻨﺪ ﺩﻭﺳﺮﮮ ﺍﺩﺑﯽ ﺭﺳﺎﺋﻞ ﻧﮯ ﺑﮭﯽ ﺍﻥ ﭘﺮﮔﻮﺷﮯ ﺷﺎﺋﻊ ﮐﯿﮯ۔
ﻟﯿﮑﻦ ﻧﺎﻣﻮﺭ ﻧﺎﻗﺪ ﻭﺯﯾﺮ ﺁﻏﺎ ﮐﻮﯾﮧ ﺗﺨﺼﯿﺺ ﺣﺎﺻﻞ ﮨﮯ ﮐﮧ ﺍﻧﮩﻮﮞ ﻧﮯ ﻣﺠﯿﺪ ﺍﻣﺠﺪ ﭘﺮ ﭘﮩﻠﯽ ﺗﻨﻘﯿﺪﯼ ﮐﺘﺎﺏ
” ﻣﺠﯿﺪ ﺍﻣﺠﺪ ﮐﯽ ﺩﺍﺳﺘﺎﻥِ ﻣﺤﺒﺖ “ ﮐﮯ ﻧﺎﻡ ﺳﮯ ﺷﺎﺋﻊ ﮐﯽ۔ ﯾﮧ ﺑﮭﯽ ﺣﻘﯿﻘﺖ ﮨﮯ ﮐﮧ ﻣﺠﯿﺪ ﺍﻣﺠﺪ ﮐﯽ ﺯﯾﺎﺩﮦ ﺗﺨﻠﯿﻘﺎﺕ ﻭﺯﯾﺮ ﺁﻏﺎ ﮐﮯ ﺭﺳﺎﻟﮧ ” ﺍﻭﺭﺍﻕ “ ﻣﯿﮟ ﮨﯽ ﺷﺎﺋﻊ ﮨﻮﺋﯽ ﺗﮭﯿﮟ۔ ﻭﺯﯾﺮ ﺁﻏﺎ ﺍﻥ ﮐﮯ ﺑﺎﺭﮮ ﻣﯿﮟ ﻟﮑﮭﺘﮯ ﮨﯿﮟ :
” ﺷﺎﻋﺮ ﮐﮯ ﺑﺎﻃﻦ ﮐﯽ ﺩﻧﯿﺎ ﺧﺎﺭﺝ ﮐﮯ ﻣﻈﺎﮨﺮ ﺳﮯ ﻣﻨﺴﻠﮏ ﺍﻭﺭ ﮨﻢ ﺁﮨﻨﮓ ﮨﮯ ﻣﮕﺮ ﯾﮧ ﮨﻢ ﺁﮨﻨﮕﯽ ﻋﺎﻓﯿﺖ ﮐﻮﺷﯽ ﯾﺎﻓﺮﺍﻕ ﮐﮯ ﻣﻤﺎﺛﻞ ﻧﮩﯿﮟ۔ ﺑﻠﮑﮧ ﺷﺪﯾﺪ ﺟﺬﺑﮯ ﮐﯽ ﭘﯿﺪﺍﻭﺍﺭ ﮨﯿﮟ۔ ﺟﻮ ﺟﺰﻭ ﮐﻮ ﮐﻞ ﺳﮯ ﻣﺮﺑﻮﻁ ﮐﺮﺗﺎ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﺟﺲ ﮐﮯ ﺩﺑﺎﺅ ﮐﮯ ﺗﺤﺖ ﺷﺎﻋﺮ ﺍﭘﻨﯽ ﺍﻧﺎ ﮐﯽ ﺩﯾﻮﺍﺭﻭﮞ ﮐﻮ ﻋﺒﻮﺭ ﮐﺮ ﮐﮯ ﻭﺳﯿﻊ ﺗﺮ ﺯﻧﺪﮔﯽ ﺳﮯ ﮨﻤﮑﻨﺎﺭ ﮨﻮﺟﺎﺗﺎ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﺍﺱ ﺭﺑﻂ ﺑﺎﮨﻢ ﮐﻮ ﺩﺭﯾﺎﻓﺖ ﮐﺮ ﻟﯿﺘﺎ ﮨﮯ ﺟﻮ ﮐﺎﺋﻨﺎﺕ ﻣﯿﮟ ﺟﺎﺭﯼ ﻭ ﺳﺎﺭﯼ ﮨﮯ۔ “

شرط (افسانہ) انتون چیخوف، ترجمہ عازب یعقوب

ﺩﺭﺍﺻﻞ ﻣﺠﯿﺪ ﺍﻣﺠﺪ ﮐﯽ ﺷﺎﻋﺮﯼ ﻭﺯﯾﺮ ﺁﻏﺎ ﮐﺎ ﻣﺴﺘﻘﻞ ﻣﻮﺿﻮﻉ ﺭﮨﯽ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﻭﮦ ﺍﻥ ﮐﯽ ﺷﺎﻋﺮﯼ ﮐﻮ ﺗﻮﺍﺯﻥ ﮐﯽ ﻣﺜﺎﻝ ﻣﺎﻧﺘﮯ ﮨﯿﮟ۔ ﻣﺠﯿﺪ ﺍﻣﺠﺪ ﭘﺮ ﮐﺘﺎﺏ ﻟﮑﮭﻨﮯ ﺳﮯ ﻗﺒﻞ ﺍﻧﮩﻮﮞ ﻧﮯ ﺍﭘﻨﯽ ﻣﻌﺮﮐﮧ ﺁﺭﺍ ﮐﺘﺎﺏ ’ ﺍﺭﺩﻭ ﺷﺎﻋﺮﯼ ﮐﺎﻣﺰﺍﺝ ﻣﯿﮟ ‘ ﻣﺠﯿﺪ ﺍﻣﺠﺪ ﮐﻮ ﺍﻧﻔﺮﺍﺩﯾﺖ ﮐﺎ ﻣﻈﮩﺮ ﻗﺮﺍﺭ ﺩﯾﺎ ﺗﮭﺎ۔


ﮈﺍﮐﭩﺮ ﻭﺯﯾﺮ ﺁﻏﺎ ﻧﮯ ﻣﺠﯿﺪ ﺍﻣﺠﺪﮐﯽ ﺷﺎﻋﺮﯼ ﻣﯿﮟ ﺍﺳﺘﻌﻤﺎﻝ ﮨﻮ ﻧﮯ ﻭﺍﻟﯽ ﺗﻤﺎﻡ ﻋﻼﻣﺘﻮﮞ ﮐﺎ ﺟﺎﺋﺰﮦ ﻟﯿﺎ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﺍﻥ ﮐﮯ ﻣﻔﺎﮨﯿﻢ ﮐﻮ ﭘﯿﺶ ﮐﯿﺎ ﮨﮯ۔ ﻣﺠﯿﺪ ﺍﻣﺠﺪ ﮐﮯ ﯾﮩﺎﮞ ﺟﻮ ﺍﻟﻔﺎﻅ ﺍﺳﺘﻌﻤﺎﻝ ﮨﻮ ﺗﮯ ﮨﯿﮟ ﺍﻥ ﻣﯿﮟ ﺍﮐﮩﺮﺍ ﭘﻦ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﮯ ﺑﻠﮑﮧ ﺗﮧ ﺩﺭ ﺗﮧ ﻣﻌﻨﯽ ﭘﻮﺷﯿﺪﮦ ﮨﯿﮟ، ﺍﺳﯽ ﻟﯿﮯ ﺷﺎﻋﺮﯼ ﻣﯿﮟ ﺍﺳﺘﻌﻤﺎﻝ ﮨﻮﻧﮯ ﻭﺍﻟﮯ ﺍﻟﻔﺎﻅ ﺁﻧﮑﮫ، ﺧﻮﺷﺒﻮ ‘ ﺳﺮﺳﺮﺍﮨﭧ، ﻟﻤﺲ ﺍﻭﺭ ﺯﻧﺪﮔﯽ ﮐﮯ ﻻﺗﻌﺪﺍﺩ ﻣﻮﺿﻮﻋﺎﺕ ﮐﮯ ﭼﻤﮑﺘﮯ ﮨﻮﺋﮯ ﺫﺭﺍﺕ ﮐﯽ ﻃﺮﺡ ﺷﺎﻣﻞ ﮨﻮ ﮐﺮ ﻟﻮ ﺩﯾﻨﮯ ﻟﮕﺘﮯ ﮨﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﺁﺧﺮ ﻣﯿﮟ ﺍﺱ ﻭﺟﻮﺩ ﮐﺎ ﻋﻼﻣﺘﯽ ﺣﻮﺍﻟﮧ ﺟﺎ ﺑﺠﺎ ﺍﭘﻨﯽ ﺟﮭﻠﮏ ﺩﮐﮭﺎﺗﺎ ﮨﮯ۔


ﺣﺎﻻﻧﮑﮧ ﻣﺠﯿﺪ ﺍﻣﺠﺪ ﻓﯿﺾ ﺍﺣﻤﺪ ﻓﯿﺾ، ﻧﺎﺻﺮ ﮐﺎﻇﻤﯽ، ﻥ ﻡ ﺭﺍﺷﺪ ﺟﯿﺴﮯ ﻣﻨﻔﺮﺩ ﻟﺐ ﻭ ﻟﮩﺠﮯ ﮐﮯ ﺷﻌﺮﺍ ﮐﺎ ﮨﻢ ﻋﺼﺮ ﮨﮯ۔ ﻟﯿﮑﻦ ﺍﺱ ﮐﮯ ﺑﺎﻭﺟﻮﺩ ﻭﮦ ﺍﭘﻨﮯ ﻣﺘﻘﺪﻣﯿﻦ ﺍﻭﺭ ﻣﻌﺎﺻﺮﯾﻦ ﻣﯿﮟ ﭘﮩﻼ ﺷﺎﻋﺮ ﮨﮯ ﺟﺲ ﻧﮯ ﻋﺮﺏ ﻭﻋﺠﻢ ﮐﯽ ﺷﻌﺮﯼ ﺳﺎﺧﺘﯿﺎﺕ ﺳﮯ ﻣﻨﮧ ﻣﻮﮌﺍ ﺍﻭﺭ ﺍﺭﺩﻭ ﺯﺑﺎﻥ ﻣﯿﮟ ﻣﻘﺎﻣﯽ ﺑﻮﻟﯿﻮﮞ ﮐﮯ ﺭﭼﺎﺅ ﮐﻮ ﭘﯿﻮﺳﺖ ﮐﺮ ﺩﯾﺎ۔ ﮨﻤﺎﺭﮮ ﺗﻤﺎﻡ ﮨﯽ ﺷﻌﺮﺍﺀ ﻋﺮﺑﯽ ﻭ ﻓﺎﺭﺳﯽ ﺷﺎﻋﺮﯼ ﮐﮯ ﺧﻮﺷﺎ ﭼﮞﮏ ﺭﮨﮯ ﮨﯿﮟ، ﻭﮨﯽ ﺗﺮﺍﮐﯿﺐ ﻭﮨﯽ ﺗﺸﺒﯿﮩﺎﺕ ﺍﻭﺭ ﻋﻼﻣﺎﺕ ﺍﺳﺘﻌﻤﺎﻝ ﮐﺮﺗﮯ ﺭﮨﮯ ﮨﯿﮟ ﻟﯿﮑﻦ ﻣﺠﯿﺪ ﺍﻣﺠﺪ ﻧﮯ ﺍﻧﮩﯿﮟ ﯾﮑﺴﺮ ﺗﺒﺪﯾﻞ ﮐﺮ ﺩﯾﺎ ﺍﻭﺭ ﺩﮨﻠﯽ ﺍﻭﺭ ﻟﮑﮭﻨﺌﻮ ﮐﯽ ﭨﮑﺴﺎﻟﯽ ﺑﻮﻟﯽ ﺳﮯ ﺑﺎﮨﺮ ﻧﮑﺎﻝ ﮐﺮﺳﺎﺋﻨﺴﯽ ﺩﻭﺭ ﻣﯿﮟ ﻻﮐﮭﮍﺍ ﮐﯿﺎ۔ ﻋﻠﯽ ﺗﻨﮩﺎ مجید ﺍﻣﺠﺪ ﮐﯽ ﺷﺎﻋﺮﯼ ﭘﺮ ﻟﮑﮭﺘﮯ ﮨﯿﮟ :


” ﻧﺌﯽ ﺷﺎﻋﺮﯼ ﻣﯿﮟ ﻣﺘﻨﻮﻉ ﺗﺠﺮﺑﺎﺕ ﮐﺎ ﺑﺎﺯﺍﺭ ﻣﺠﯿﺪ ﺍﻣﺠﺪ ﺳﮯ ﭘﮩﻠﮯ ﺑﮭﯽ ﮔﺮﻡ ﺗﮭﺎ ﻟﯿﮑﻦ ﻭﮦ ﺗﻤﺎﻡ ﮔﺬﺷﺘﮧ ﺗﺠﺮﺑﻮﮞ ﮐﺎ ﺭﺱ ﺍﻭﺭﻧﭽﻮﮌ ﺻﺮﻑ ﺍﺱ ﮐﯽ ﺷﺎﻋﺮﯼ ﻣﯿﮟ ﺷﮑﻞ ﭘﺬﯾﺮ ﮨﻮﺍ۔ ﺍﺱ ﮐﯽ ﺷﺎﻋﺮﺍﻧﮧ ﻋﻈﻤﺖ ﮐﮯ ﮨﺰﺍﺭ ﭘﮩﻠﻮ ﮨﯿﮟ، ﭘﮩﻠﯽ ﺑﺎﺕ ﺗﻮ ﯾﮩﯽ ﻟﯿﺠﺌﮯ ﮐﮧ ﺍﺱ ﻧﮯ ﻧﺤﻮﯼ ﻭ ﺻﺮﻓﯽ، ﺑﺎﺭﯾﮑﯿﻮﮞ ﮐﮯ ﺑﺎﺭﮮ ﻣﯿﮟ ﮔﮩﺮﺍ ﺳﻮﭼﺎ۔ﭘﮭﺮ ﺍﯾﮏ ﺍﯾﺴﯽ ﺯﺑﺎﻥ ﮐﯽ ﺑﻮ ﺑﺎﺱ ﮐﻮ ﺭﺍﮦ ﺩﯼ ﺟﻮ ﺧﺎﻟﺺ ﭘﺎﮐﺴﺘﺎﻧﯽ ﺍﺭﺩﻭ ﮨﮯ۔ ﯾﮩﯽ ﻭﺟﮧ ﮨﮯ ﮐﮧ ﺍﺱ ﮐﮯ ﻓﻦ ﭘﺎﺭﻭﮞ ﻣﯿﮟ ﺯﻣﯿﻦ ﮐﯽ ﻣﮩﮏ ﻧﻤﺎﯾﺎﮞ ﮨﮯ ﻟﯿﮑﻦ ﯾﮧ ﺧﺎﻟﯽ ﺧﻮﻟﯽ ﺯﺑﺎﻥ ﮐﺎ ﺭﭼﺎﺅ ﮨﯽ ﻧﮩﯿﮟ ﺍﺱ ﮐﯽ ﺯﺑﺎﻥ ﮐﮯ ﭘﯿﭽﮭﮯ ﻭﺍﺭﺩﺍﺕ ﮐﺎ ﺷﻌﻠﮧ ﺍﯾﺴﺎ ﺗﭙﺎﮞ ﮨﮯ ﮐﮧ ﺧﯿﺎﻝ ﺑﻠﯿﻎ ﺍﻭﺭ ﺳﺎﻧﺲ ﻟﯿﺘﺎ ﮨﻮﺍ ﻣﺤﺴﻮﺱ ﮨﻮﺗﺎﮨﮯ۔ “


ﻣﺠﯿﺪ ﺍﻣﺠﺪ ﮐﯽ ﺷﻌﺮﯼ ﮐﺎﺋﻨﺎﺕ ﻣﯿﮟ ﮐﺎﻓﯽ ﺗﺠﺮﺑﮯ ﮨﯿﮟ، ﺍﻥ ﮐﯽ ﻏﺰﻟﻮﮞ ﮐﮯ ﺍﺷﻌﺎﺭ ﻣﯿﮟ ﺑﮭﯽ ﻧﯿﺎ ﭘﻦ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﻧﻈﻤﯿﮟ ﺗﻮ ﺑﮩﺮ ﺣﺎﻝ ﻧﺌﮯ ﺫﺍﺋﻘﮧ ﺳﮯ ﺁﺷﻨﺎ ﮐﺮﺗﯽ ﮨﯿﮟ

ﻣﯿﺮﮮ ﻧﺸﺎﻥ ﻗﺪﻡ ﺩﺷﺖ ﻏﻢ ﭘﮧ ﺛﺒﺖ ﺭﮨﮯ
ﺍﺑﺪ ﮐﯽ ﻟﻮﺡ ﭘﮧ ﺗﻘﺪﯾﺮ ﮐﺎ ﻟﮑﮭﺎ ﻧﮧ ﺭﮨﺎ
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ﻣﯿﮟ ﺭﻭﺯ ﺍﺩﮬﺮ ﺳﮯ ﮔﺰﺭﺗﺎ ﮨﻮﮞ ﮐﻮﻥ ﺩﯾﮑﮭﺘﺎ ﮨﮯ
ﻣﯿﮟ ﺟﺐ ﺍﺩﮬﺮ ﺳﮯ ﻧﮧ ﮔﺰﺭﻭﮞ ﮔﺎ ﮐﻮﻥ ﺩﯾﮑﮭﮯ ﮔﺎ
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ﺩﻧﯿﺎ ﮐﮯ ﭨﮭﮑﺮﺍﺋﮯ ﮨﻮﺋﮯ ﻟﻮﮔﻮﮞ ﮐﺎ ﮐﺎﻡ
ﭘﮩﺮﻭﮞ ﺑﺎﺗﯿﮟ ﮐﺮﺗﮯ ﺭﮨﻨﺎ ﺩﻧﯿﺎ ﮐﯽ
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ﭘﻠﭧ ﭘﮍﺍ ﮨﻮﮞ ﺷﻌﺎﻋﻮﮞ ﮐﮯ ﭼﺘﮭﮍﺍﮮ ﺍﻭﮌﮬﮯ
ﻧﺸﯿﺐ ﺯﯾﻨﮧ ﺍﯾﺎﻡ ﭘﺮ ﻋﺼﺎ ﺭﮐﮭﺘﺎ
ﺟﻮ ﺷﮑﻮﮦ ﺍﺏ ﮨﮯ ﯾﮩﯽ ﺍﺑﺘﺪﺍ ﻣﯿﮟ ﺗﮭﺎ ﺍﻣﺠﺪ
ﮐﺮﯾﻢ ﺗﮭﺎ ﻣﺮﯼ ﮐﻮﺷﺶ ﻣﯿﮟ ﺍﻧﺘﮩﺎ ﺭﮐﮭﺘﺎ
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ﯾﮧ ﺍﻧﺠﺎﻧﺎ ﺷﮩﺮ، ﭘﺮﺍﻧﮯ ﻟﻮﮒ، ﺍﮮ ﺩﻝ ،ﺗﻢ ﯾﮩﺎﮞ ﮐﮩﺎﮞ
ﺁﺝ ﺍﺱ ﺑﮭﯿﮍ ﻣﯿﮟ ﺍﺗﻨﮯ ﺩﻥ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﻣﻠﮯ ﮨﻮ ﮐﯿﺴﮯ ﮨﻮ
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

ﻟﯿﮑﻦ ﻣﺠﯿﺪ ﺍﻣﺠﺪ ﮐﯽ ﺍﺻﻞ ﺷﻨﺎﺧﺖ ﻏﺰﻝ ﻧﮩﯿﮟ، ﺑﻠﮑﮧ ﻧﻈﻢ ﮨﮯ،ﺟﻮ ﻧﺌﯽ ﺣﺴﯿﺖ ﺍﻭﺭ ﻧﺌﯽ ﻣﻌﻨﻮﯾﺖ ﺳﺎﻣﻨﮯ ﻻﺗﯽ ﮨﮯ۔ ﻣﺜﺎﻝ ﮐﮯ ﻃﻮﺭ ﭘﺮ ﭼﻨﺪ ﻧﻈﻤﻮﮞ ﮐﮯ ﭨﮑﮍﮮ :

ﻭﻃﻦ، ﮈﮬﯿﺮ ﺍﮎ ﺍَﻥ ﻣﻨﺠﮭﮯ ﺑﺮﺗﻨﻮﮞ ﮐﺎ
ﺟﺴﮯ ﺯﻧﺪﮔﯽ ﮐﮯ ﭘﺴﯿﻨﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﮈﻭﺑﯽ ﮨﻮﺋﯽ ﻣﺤﻨﺘﯿﮟ ﺩﺭ ﺑﺪﺭ ﮈﮬﻮﻧﮉﮬﺘﯽ ﮨﯿﮟ
ﻭﻃﻦ، ﻭﮦ ﻣﺴﺎﻓﺮ ﺍﻧﺪﮬﯿﺮﺍ
ﺟﻮ ﺍﻭﻧﭽﮯ ﭘﮩﺎﮌﻭﮞ ﺳﮯ ﮔﺮﺗﯽ ﮨﻮﺋﯽ ﻧﺪﯾﻮﮞ ﮐﮯ ﮐﻨﺎﺭﻭﮞ ﭘﮧ
ﺷﺎﺩﺍﺏ ﺷﮩﺮﻭﮞ ﻣﯿﮟ ﺭﮎ ﮐﺮ
ﮐﺴﯽ ﺁﮨﻨﯽ ﭼﮭﺖ ﺳﮯ ﺍﭨﮭﺘﺎ ﺩﮬﻮﺍﮞ ﺑﻦ ﮔﯿﺎ ﮨﮯ
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

‏ﭘﮩﺎﮌﻭﮞ ﮐﮯ ﺑﯿﭩﮯ

ﻣﺠﮭﮯ ﺧﺒﺮ ﺑﮭﯽ ﻧﮧ ﺗﮭﯽ ﺍﻭﺭ ﺍﺗﻔﺎﻕ ﺳﮯ ﮐﻞ
ﻣﯿﮟ ﺍﺱ ﻃﺮﻑ ﺳﮯ ﺟﻮﮔﺰﺭﺍ ﻭﮦ ﺍﻧﺘﻈﺎﺭ ﻣﯿﮟ ﺗﮭﮯ
ﻣﯿﮟ ﺩﯾﮑﮭﺘﺎ ﺗﮭﺎ ﺍﭼﺎﻧﮏ ﯾﮧ ﺁﺳﻤﺎﮞ ﭘﮧ ﮐﺮﮮ
ﺑﺲ ﺍﮎ ﭘﻞ ﮐﻮ ﺭﮐﮯ ﺍﻭﺭ ﭘﮭﺮ ﻣﺪﺍﺭ ﻣﯿﮟ ﺗﮭﮯ

ﻣﺠﯿﺪ ﺍﻣﺠﺪ ﮐﯽ ﭼﻨﺪ ﺷﺎﮦ ﮐﺎﺭ ﻧﻈﻤﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﭘﻨﻮﺍﮌﯼ، ﮐﻨﻮﺍﮞ، ﺁﭨﻮﮔﺮﺍﻑ، ﺑﺲ ﺳﭩﯿﻨﮉ ﭘﺮ، ﺍﻣﺮﻭﺯ، ﮐﺮﺳﻤﺲ، ﻣﻘﺒﺮﮦٴ ﺟﮩﺎﻧﮕﯿﺮ، ﭘﮩﺎﮌﻭﮞ ﮐﮯ ﺑﯿﭩﮯ، ﺻﺎﺣﺐ ﮐﺎ ﻓﺮﻭﭦ ﻓﺎﺭﻡ، ﻣﻨﭩﻮ، ﻓﺮﺩ، ﺟﻠﻮﺱِ ﺟﮩﺎﮞ ﻭﻏﯿﺮﮦ ﺷﺎﻣﻞ ﮨﯿﮟ۔
ﺩﺭﺍﺻﻞ ﻣﺠﯿﺪ ﺍﻣﺠﺪ ﮐﮯ ﺍﭘﻨﮯ ﺗﺠﺮﺑﺎﺕ ﮨﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﺍﻥ ﺗﺠﺮﺑﺎﺕ ﮐﻮ ﺍﻧﮩﻮﮞ ﻧﮯ ﺍﭘﻨﯽ ﺯﺑﺎﻥ ﻣﯿﮟ ﮈﮬﺎﻻ ﮨﮯ۔ ﺍﺳﯽ ﻟﯿﮯ ﻭﮦ ﮐﮩﺘﮯ ﮨﯿﮟ :

ﯾﮧ ﺍﺷﮑﻮﮞ ﺳﮯ ﺷﺎﺩﺍﺏ ﺩﻭ ﭼﺎﺭ ﺻﺒﺤﯿﮟ
ﯾﮧ ﺁﮨﻮﮞ ﺳﮯ ﻣﻌﻤﻮﺭ ﺩﻭ ﭼﺎﺭﺷﺎﻣﯿﮟ
ﺍﻧﮩﯿﮟ ﭼﻠﻤﻨﻮﮞ ﺳﮯ ﻣﺠﮭﮯ ﺩﯾﮑﮭﻨﺎ ﮨﮯ
ﻭﮦ ﺟﻮﮐﭽﮫ ﮐﮧ ﻧﻈﺮﻭﮞ ﮐﯽ ﺯﺩ ﻣﯿﮟ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﮯ
‏( ﺍﻣﺮﻭﺯ ‏)

11 ﻣﺌﯽ 1974 ﺀ ﮐﻮ ﻣﺠﯿﺪ ﺍﻣﺠﺪ ﮐﺎ ﻧﮩﺎﯾﺖ ﮐسمپرسی ﮐﮯ ﻋﺎﻟﻢ ﻣﯿﮟ ﺍﻧﺘﻘﺎﻝ ﮨﻮ ﮔﯿﺎ۔ ﺟﺲ ﮐﯽ ﺗﻔﺼﯿﻞ ﺍﯾﮏ ﺍﺧﺒﺎﺭ ﮐﯽ ﺧﺒﺮ ﮐﮯ ﻣﻄﺎﺑﻖ ﯾﻮﮞ ﮨﮯ :


” ﻣﻤﺘﺎﺯ ﺷﺎﻋﺮ ﻣﺠﯿﺪ ﺍﻣﺠﺪ ﻓﺮﯾﺪ ﭨﺎﺅﻥ ﻣﯿﮟ ﺍﭘﻨﮯ ﮔﮭﺮ ﭘﺮ ﻣﺮﺩﮦ ﭘﺎﺋﮯ ﮔﺌﮯ۔ ﻣﺮﺣﻮﻡ ﮐﯽ ﻣﯿﺖ ﻓﺮﺵ ﭘﺮ ﭘﮍﯼ ﺗﮭﯽ ﮐﮧ ﺍﯾﮏ ﺷﺨﺺ ﻧﮯ ﮐﮭﮍﮐﯽ ﻣﯿﮟ ﺳﮯ ﺩﯾﮑﮭﺎ ﺟﺲ ﭘﺮ ﺩﻭ ﺍﻓﺮﺍﺩ ﺩﯾﻮﺍﺭ ﭘﮭﺎﻧﺪ ﮐﺮ ﺍﻧﺪﺭ ﺩﺍﺧﻞ ﮨﻮﺋﮯ ﺗﻮ ﺍﻧﮩﯿﮟ ﻣﺮﺩﮦ ﭘﺎﯾﺎ۔ ‘‘


ﺍﺱ ﭘﺮ ﻭﺯﯾﺮ ﺁﻏﺎ ﻧﮯ ﻟﮑﮭﺎ ﺗﮭﺎ :
” ﺩﯾﮑﮭﻮ ﮨﻤﺎﺭﯼ ﺑﺪﻗﺴﻤﺖ ﻗﻮﻡ ﺑﮩﺘﺮﯾﻦ ﺗﺨﻠﯿﻘﯽ ﺻﻼﺣﯿﺖ ﺭﮐﮭﻨﮯ ﻭﺍﻟﮯ ﺍﭘﻨﮯ ﺟﯿﺎﻟﮯ ﺳﭙﻮﺗﻮﮞ ﺳﮯ ﮐﯿﺴﺎ ﺳﻠﻮﮎ ﮐﺮﺗﯽ ﮨﮯ ﮐﮧ ﻭﮦ ﺗﻨﮩﺎﺋﯽ، ﺑﮯ ﺑﺴﯽ ﺍﻭﺭ ﮐﺴمپرﺳﯽ ﮐﮯ ﻋﺎﻟﻢ ﻣﯿﮟ ﺍﯾﮍﯾﺎﮞ ﺭﮔﮍ ﺭﮔﮍ ﮐﺮ ﻣﺮ ﺟﺎﺗﮯ ﮨﯿﮟ ﻣﮕﺮ ﺍﺱ ﭘﺮ ﮐﻮﺋﯽ ﺍﺛﺮ ﻣﺮﺗﺐ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﻮ ﺗﺎ ﭘﮭﺮ ﺍﯾﮏ ﺻﺒﺢ ﭼﻨﺪ ﺭﺍﮨﮕﯿﺮ ﮐﺴﯽ ﺑﻨﺪ ﮐﻤﺮﮮ ﮐﯽ ﮐﮭﮍﮐﯽ ﻣﯿﮟ ﺳﮯ ﺟﮭﺎﻧﮑﺘﮯ ﮨﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﺍﻧﮩﯿﮟ ﻓﺮﺵ ﭘﺮ ﮐﻮﺋﯽ ﻻﺵ ﻧﻈﺮ ﺁﺗﯽ ﮨﮯ۔ ﻓﺮﺵ ﭘﺮﻻﺵ ؟ ﮐﺴﯽ ﺑﮯ ﻧﺎﻡ ﺍﻭﺭ ﺑﮯ ﭼﮩﺮﮦ ﻓﻘﯿﺮ ﮐﯽ ﻧﮩﯿﮟ ﺟﻮ ﺳﺮﺩﯾﻮﮞ ﮐﯽ ﺭﺍﺕ ﻣﯿﮟ ﭨﮭﭩﮭﺮ ﭨﮭﭩﮭﺮ ﮐﺮ ﻣﺮ ﮔﯿﺎ ﮨﻮ ﺑﻠﮑﮧ ﺍﭘﻨﮯ ﻭﻃﻦ ﮐﮯ ﺍﺱ ﺷﺎﻋﺮ ﮐﯽ ﻻﺵ ﺟﺴﮯ ﺁﻧﮯ ﻭﺍﻟﯽ ﻧﺴﻠﯿﮟ ﺍﺱ ﺻﺪﯼ ﻣﯿﮟ ﺍﺑﮭﺮﻧﮯ ﻭﺍﻟﯽ ﺩﻭ ﺗﯿﻦ ﻣﻨﻔﺮﺩ ﺁﻭﺍﺯﻭﮞ ﻣﯿﮟ ﺳﮯ ﺍﯾﮏ ﻗﺮﺍﺭ ﺩﯾﮟ ﮔﯽ۔ “
ﺁﺧﺮ ﮐﻮ ﺗﻮ ﺣﺎﻻﺕ ﮐﮯ ﺳﺘﺎﺋﮯ ﮨﻮﺋﮯ ﻟﻮﮒ ﺗﮭﮯ ﺍﺱ ﻟﯿﮯ ﯾﮧ ﮐﮩﺘﮯ ﮨﻮﺋﮯ ﭼﻠﮯ ﮔﺌﮯ :

ﻭﺍﺭ ﺩﻧﯿﺎ ﻧﮯ ﮐﯿﮯ ﻣﺠﮫ ﭘﺮ ﺗﻮ ﺍﻣﺠﺪ ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﺍﺱ ﮔﻤﺴﺎﺁﻥ ﻣﯿﮟ
ﮐﺲ ﻃﺮﺡ ﺟﯽ ﮨﺎﺭ ﮐﺮ ﺭﮐﮫ ﻟﯽ ﻧﯿﺎﻡِ ﺣﺮﻑ ﻣﯿﮟ ﺷﻤﺸﯿﺮِ ﺩﻝ

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

چند اشعار
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میں روز ادھر سے گذرتا تھا کون دیکھتا تھا
میں جب ادھر سے نہ گزروں گا کون دیکھے گا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کیا روپ دوستی کا کیا رنگ دشمنی کا
کوئی نہیں جہاں میں کوئی نہیں کسی کا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
یہ کیا طلسم ہے یہ کس کی یاسمیں بانہیں
چھڑک گئی ہیں جہاں در جہاں گلاب کے پھول
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
زندگی کی راحتیں ملتی نہیں ملتی نہیں
زندگی کا زہر پی کر جستجو میں گھومیۓ
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

چند منتخب غزلیں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

چہرہ اداس اداس تھا میلا لباس تھا
کیا دن تھے جب خیالِ تمنا لباس تھا
عریاں زمانہ گیر شررگوں جبلتیں
کچھ تھا تو ایک برگ دل ان کا لباس تھا
اس موڑ پر ابھی جسے دیکھا ہے ، کون تھا؟
سنبھلی ہوئی نگاہ تھی سادہ لباس تھا
یادوں کے دھندلے دیس کھلی چاندنی میں رات
تیرا سکوت کس کی صدا کا لباس تھا
ایسے بھی لوگ ہیں جنہیں پرکھا تو انکی روح
بے پیرہن تھی جسم سراپا لباس تھا
صدیوں کے گھاٹ پر بھرے میلوں کی بھیڑ میں
اے دردِ شادماں ترا کیا کیا لباس تھا
دیکھا تو دل کے سامنے سایوں کے جشن میں
ہر عکسِ آرزو کا انوکھا لباس تھا
امجدؔ قبائے شہ تھی کہ چولا فقیر کا
ہر بھیس میں ضمیر کا پردا لباس تھا

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

عشق کی ٹیسیں جو مضرابِ رگِ جاں ہو گئیں
روح کی مدہوش بیداری کا ساماں ہو گئیں

پیار کی میٹھی نظر سے تو نے جب دیکھا مجھے
تلخیاں سب زندگی کی لطف ساماں ہو گئیں

اب لبِ رنگیں پہ نوریں مسکراہٹ ؟ کیا کہوں
بجلیاں گویا شفق زاروں میں رقصاں ہو گئیں

ماجرائے شوق کی بے باکیاں ان پر نثار
ہائے وہ آنکھیں جو ضبطِ غم میں گریاں ہو گئیں

چھا گئیں دشواریاں پر میری سہل انگاریاں
مشکلوں کا اک خیال آیا کہ آساں ہو گئیں

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

اِک عُمر دِل کی گھات سے تُجھ پر نِگاہ کی
تُجھ پر، تِری نِگاہ سے چُھپ کر نِگاہ کی

رُوحوں میں جَلتی آگ، خیالوں میں کِھلتے پھول
ساری صداقتیں کِسی کافر نِگاہ کی

جب بھی غمِ زمانہ سے آنکھیں ہُوئیں دوچار
مُنہ پھیر کر تبسّمِ دِل پر نِگاہ کی

باگیں کِھنچیں، مُسافتیں کڑکیں، فرس رُکے
ماضی کی رتھ سے کِس نے پَلٹ کر نِگاہ کی

دونوں کا ربط ہے تِری موجِ خِرام سے
لغزِش خیال کی ہو، کہ ٹھوکر نِگاہ کی

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

اپنے دل کی کھوج میں کھو گئے کیا کیا لوگ
آنسو تپتی ریت میں بو گئے کیا کیا لوگ

کرنوں کے طوفان سے بجرے بھر بھر کر
روشنیاں اس گھاٹ پر ڈھو گئے کیا کیا لوگ

سانجھ سمے اس کنج میں زندگیوں کی اوٹ
بج گئی کیا کیا بانسری رو گئے کیا کیا لوگ

میلی چادر تان کر اس چوکھٹ کے دوار
صدیوں کے کہرام میں سو گئے کیا کیا لوگ

گٹھڑی کال رین کی سونٹی سے لٹکائے
اپنی دھن میں دھیان نگر کو گئے کیا کیا لوگ

میٹھے میٹھے بول میں دوہے کا ہنڈول
سن سن اس کو بانورے ہو گئے کیا کیا لوگ

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

دن کٹ رہے ہیں کش مکشِ روزگار میں
دم گھُٹ رہا ہے سایہ ابرِ بہار میں

آتی ہے اپنے جسم کے جلنے کی بُو مجھے
لُٹتے ہیں نکہتوں کے سبُو جب بہار میں

گزرا ادھر سے جب کوئی جھونکا تو چونک کر
دل نے کہا: “یہ آ گئے ہم کس دیار میں”

اے کنجِ عافیت تجھے پا کر پتہ چلا
کیا ہمہمے تھے گردِ سرِ رہگذار میں

میں ایک پل کے رنجِ فراواں میں کھو گیا
مر جھا گئے زمانے مرے انتظار میں

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

روش روش پہ ہیں نکہت فشاں گُلاب کے پھول
حسیں گلاب کے پھول، ارغواں گُلاب کے پھول

اُفق اُفق پہ زمانوں کی دُھند سے اُبھرے
طیور، نغمے، ندی، تتلیاں، گلاب کے پھول

کس انہماک سے بیٹھی کشید کرتی ہے
عروسِ گُل بہ قبائے جہاں، گلاب کے پھول

جہانِ گریۂ شبنم سے کس غرور کے ساتھ
گزر رہے ہیں، تبسّم کناں، گلاب کے پھول

یہ میرا دامنِ صد چاک، یہ ردائے بہار
یہاں شراب کے چھینٹے، وہاں گلاب کے پھول

کسی کا پھول سا چہرہ اور اس پہ رنگ افروز
گندھے ہوئے بہ خمِ گیسواں، گلاب کے پھول

خیالِ یار، ترے سلسلے نشوں کی رُتیں
جمالِ یار، تری جھلکیاں گلاب کے پھول

مری نگاہ میں دورِ زماں کی ہر کروٹ
لہو کی لہر، دِلوں کا دھواں، گلاب کے پھول

سلگتے جاتے ہیں چُپ چاپ ہنستے جاتے ہیں
مثالِ چہرہِ پیغمبراں گلاب کے پھول

یہ کیا طلسم ہے یہ کس کی یاسمیں باہیں
چھڑک گئی ہیں جہاں در جہاں گلاب کے پھول

کٹی ہے عمر بہاروں کے سوگ میں امجد
مری لحد پہ کھلیں جاوداں گلاب کے پھول

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

اب کے تمھارے دیس کا یہ روپ نیارا تھا
بِکھرا ہُوا ہَواؤں میں سایا تمھارا تھا

گُم سُم کھڑے ہیں اُونچی فصِیلوں کے کنکرے
کوئی صدا نہیں! مجھے کِس نے پُکارا تھا

رات آسماں پہ چاند کی منڈلی میں کون تھا
تم تھے کہ اِک سِتار بجاتا سِتارہ تھا

اُن دُورِیوں میں قُرب کا جادُو عذاب تھا
ورنہ تمھارے ہجر کا غم بھی گوارا تھا

دِل سے جو ٹیس اُٹھی، میں یہ سمجھا پُجاریو
پتّھر کے دیوتا کا تڑپتا اِشارہ تھا

تالی بجی تو سامنے ناٹک کی رات تھی
آنکھیں کھُلیں، تو بُجھتے دِلوں کا نظارہ تھا

پھر لوٹ کر نہ آیا، زمانے گزُر گئے
وہ لمحہ جس میں ایک زمانہ گزُارا تھا

بہتی ندی کے پاٹ سے اوجھل رہے وہ گاؤں
ساحِل کی اوٹ جن کا دُھواں آشکارا تھا

دُنیا کے اِس بھنور سے جب اُبھرے دُکھوں کے بَھید
اِک اِک اتھاہ بَھید خود اپنا کِنارہ تھا

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

دل سے ہر گزُری بات گزُری ہے
کِس قیامت کی، رات گزُری ہے

چاندنی، ۔۔ نیم وا دریچہ، سکوت
آنکھوں آنکھوں میں رات گزُری ہے

ہائے وہ لوگ، خُوب صُورت لوگ
جن کی دُھن میں حیات گزُری ہے

کسی بھٹکے ہوئے خیال کی موج
کتنی یادوں کے سات۔ گزُری ہے

تمتماتا ۔۔ہے ۔۔ چہرۂ ۔۔ ایّام !
دل پہ کیا واردات گزُری ہے

پھر کوئی آس لڑکھڑائی ہے
کہ، نسیمِ حیات گزُری ہے

بُجھتے جاتے ہیں دُکھتی پلکوں پہ دِیپ
نیند آئی ہے، رات گزُری ہے

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
چند منتخب نظمیں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

دل دریا سمندروں ڈونگھے———————–

اتنی آنکھیں، اتنے ماتھے، اتنے ہونٹ
چشمکیں، تیور، تبسم ، قہقہے
اس قدر غماز ، اتنے ترجماں
اور پھر بھی لاکھ پیغام ان کہے
لاکھ اشارے جو ہیں ان بوجھے ابھی
لاکھ باتیں جو ہیں گویائی سے دور
دور—- دل کے کنج ناموجود میں
روز شب موجود ، ناصبور!
کون اندھیری گھاٹیوں کو پھاند کر
جائے ان پر شور سناٹوں کے پار
گونجتے ہیں لاکھ سندیسے جہاں
کان سن سکتے نہیں جن کی پکار

یہ جبینوں پر لکیریں— موج موج!
کتنے افسانوں کی ژولیدہ سطور
انکھڑیوں میں ترمراتی ڈوریاں
کتنے قصوں کی زبان بے شعور
جام لب کی کھنکھناہٹ میں نہاں
کتنے مے خانوں کا شور بے خروش
اک تبسم، اک تکلم ، اک نگاہ
کتنے احساسات کی صوت خموش!

کون الٹ سکتا ہے یہ بوجھل نقاب
پردہ در پردہ ، حجاب اندر حجاب
اس طرف میں گوش بر آواز ہوں
اس طرف ہر ذرہ اک بجتا رباب
کس کو طاقت؟ کس کو یارا؟ کس کو تاب؟
کون ان بیاکل صداؤں کو سنے
اور ضمیر ہر صدا میں ڈوب کر
کون دل کی کلیاں چنے!

کاش میں اتنا سمجھ سکتا کبھی
جب کوئی کرتا ہے مجھ سے ہنس کر بات
کیا یہ ہو سکتا ہے کہ وقت گفتگو
اس کا دل بھی ہنستا ہو ہونٹوں کے سات

مجھ خراب آرزو کے حال پر
پھوٹ پڑتی ہے کسی کی آنکھ جب
مجھ کو ڈس جاتا ہے یہ چبھتا خیال،
اس کا دل نہ ہو مجھ پر خندہ لب!

کیا یہ سب سچ ہے جو کہتے ہیں یہ ہونٹ
ہونٹ، دھبے روح قرطاس پر
ہونٹ، قصر دل کے دروازے پہ قفل
ہونٹ ، مہریں نامہء احساس

اور ان آنکھوں پہ کس کو اعتبار؟
آنکھیں پردے روزن ادراک کے
کس طرح سمجھیں رموز زیست کو
آئینے پر دو کھلونے خاک کے؟

کس طرح مانوں کہ یہ سب سچ ہے سچ
مجھ سے جو کہتے ہیں اس دنیا کے لوگ
چھو سکا ہے ان کے سینوں کو کبھی!
میرے دل کا درد! میرے من کا روگ!

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

سازِ فقیرانہ

گلوں کی سیج ہے کیا، مخملیں بچھونا کیا
نہ مل کے خاک میں گر خاک ہوں تو سونا کیا

فقیر ہیں، دو فقیرانہ ساز رکھتے ہیں
ہمارا ہنسنا ہے کیا اور ہمارا رونا کیا

ہمیں زمانے کی ان بیکرانیوں سے کام
زمانے بھر سے ہے کم دِل کا ایک کونا کیا

نظامِ دہر کو تیورا کے کس لئے دیکھیں
جو خود ہی ڈوب رہا ہو اسے ڈبونا کیا

بساطِ سیل پہ قصرِ حباب کی تعمیر
یہ زندگی ہے تو پھر ہونا کیا، نہ ہونا کیا

نہ رو کہ ہیں ترے ہی اشک ماہ و مہر امجد
جہاں کو رکھنا ہے تاریک اگر تو رونا کیا

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

زندگی ، اے زندگی

خرقہ پوش و پا بہ گل
میں کھڑا ہوں، تیرے در پر ، زندگی
ملتجی و مضمحل
خرقہ پوش و پا بہ گل
اے جہانِ خار و خس کی روشنی
زندگی ، اے زندگی

میں ترے در پر چمکتی چلمنوں کی اوٹ سے
سن رہا ہوں قہقہوں کے دھمیے دھیمے زمزمے
گرم ، گہری ، گفتگو کے سلسلے
منقل آتش بجاں کے متصل،
اور ادھر باہر گلی میں، خرقہ پوش و پا بہ گل
میں کہ اک لمحے کا دل
جس کی ہر دھڑکن میں گونجے دو جہاں کی تیرگی
زندگی ، اے زندگی

کتنے سائے محوِ رقص
تیرے در کے پردہء گلفام پر
کتنے سائے، کتنے عکس
کتنے پیکر محوِ رقص
اور اک تو کہنیاں ٹیکے خم ایام پر
ہونٹ رکھ کر جام پر
سن رہی ہے ناچتی صدیوں کا آہنگِ قدیم
جاوداں خوشیوں کی بجتی گتکڑی کے زیر و بم
آنچلوں کی جھم جھماہٹ، پائلوں کی چھم چھم
اس طرف، باہر، سر کوئے عدم
ایک طوفاں، ایک سیل بے اماں
ڈوبنے کو ہیں مرے شام و سحر کی کشتیاں
اے نگارِ دل ستاں
اپنی نٹ کھٹ انکھڑیوں سے میری جانب جھانک بھی
زندگی، اے زندگی

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

توسیعِ شہر

بیس برس سے کھڑے تھے جو اس گاتی نہر کے دوار
جھومتے کھیتوں کی سرحد پر، بانکے پہرے دار
گھنے، سہانے، چھاؤں چھڑکتے، بُور لدے چھتنار
بیس ہزار میں بِک گئے سارے ہرے بھرے اشجار

جن کی سانس کا ہر جھونکا تھا ایک عجیب طلسم
قاتل تیشے چیر گئے ان ساونتوں کے جسم

گِری دھڑام سے گھائل پیڑوں کی نیلی دیوار
کٹتے ہیکل، جھڑتے پنجر، چھٹتے برگ و بار
سہمی دھوپ کے زرد کفن میں لاشوں کے انبار

آج کھڑا میں سوچتا ہوں اس گاتی نہر کے دوار
اس مقتل میں صرف اِک میری سوچ لہکتی ڈال
مجھ پہ بھی اب کاری ضرب اِک اے آدم کی آل

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

جو دن کبھی نہیں بیتا—– کون دیکھے گا
انہی دنوں میں اس اک دن کو کون دیکھے گا
اس ایک دن کو—- جو سورج کی راکھ میں غلطاں
انہی دنوں کی تہوں میں ھے—– کون دیکھے گا
اس ایک دن کو— جو ھے عمر کے زوال کا دن
انہی دنوں میں نمو یاب کون دیکھے گا
میں روز ادھر سے گزرتا ھوں کون دیکھتا ھے
میں جب ادھر سے نہ گزروں گا کون دیکھے گا
ہزار چہرے خود آرا ھین کون جھانکے گا
مرے نہ ھونے کی ھونی کو کون دیکھے گا
تڑخ کے گرد کی تہ سے اگر کہیں کچھ پھول
کھلے بھی تو کوئی دیکھے گا —- کون دیکھے گا

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

منٹو

میں نے اس کو دیکھا ہے
اُجلی اُجلی سڑکوں پر اِک گرد بھری حیرانی میں
پھیلتی پھیلتی بھیڑ کے اندھے اوندھے
کٹوروں کی طغیانی میں
جب وہ خالی بوتل پھینک کر کہتا ہے :
” دنیا ! تیرا حُسن یہی بدصورتی ہے ۔ “
دنیا اس کو گھورتی ہے
شورِ سلاسل بن کر گونجنے لگتا ہے
انگاروں بھری آنکھوں میں یہ تند سوال
کون ہے یہ جس نے اپنی بہکی بہکی سانسوں
کا جال
بامِ زماں پر پھینکا ہے
کون ہے جو بل کھاتے ضمیروں کے پُر پیچ
دھندلکوں میں
روحوں کے عفریت کدوں کے زہراندوز
محلکوں میں
لے آیا ہے یوں بن پوچھے اپنے آپ
عینک کے برفیلے شیشوں سے چھنتی نظروں
کی چاپ
کون ہے یہ گستاخ
تاخ تڑاخ ۔۔۔۔۔۔۔!

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

گیت

کون دیس گیو ۔ ۔ ۔ ۔

کون دیس گیو ۔ ۔ ۔ ۔
نیناں،
کون دیس گیو ۔ ۔ ۔ ۔
رُت آئے، رُت جائے، مہاری عمر کٹے رو رو
کجرا رے، متوارے نیناں، کون دیس گیو

دیکھتے دیکھتے اس نگری میں چاروں اور نُور بہا
ایک گزرتی رتھ سے چھلکا امڈ کے جوبن، اہا، اہا
راہ راہ پہ پلک پلک نے سیس نوا کے کہا:
“بانوری لہرو
رس کے شہرو
نینو، ٹھہرو، ٹھہرو!
چھین نہ لو ان ہنستے جُگوں سے سُکھ کا
سانس اِک رہا سہا”

دھول اڑی اور پھول گرے
لمحے، خوشبوئیں، جھونکے
اُبھرے، پھیلے، گئے گئے
ایدھر دیکھیں، اودھر دیکھیں، دل کے سنگ نہ کو
کون دیس گیو
کجرا رے، متوارے نیناں، کون دیس گیو

اب ان تپتے ویرانوں میں
کانٹے چن چن پور دُکھیں
جانے تم کس پھول بھوم میں جھوم جھوم ہنسو
کون دیس گیو
کجرا رے او، متوارے او، نیناں
کون دیس گیو

اپنا تبصرہ بھیجیں

Captcha loading...