50

گھٹنے سے کسی ملزم کا گلا دبانے کی اجازت نہیں ہو گی،صدرٹرمپ

Spread the love

واشنگٹن (صرف اردو آن لائن نیوز) صدرٹرمپ

صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے پولیس نظام میں اصلاحات، تطہیر، تربیت اور ڈسپلن لانے کے ایک

ایگزیکٹو آرڈر پر دستخط کردیئے ہیں۔ 25مئی کو منی سوٹا ریاست کے شہر مینا پولیس تین

ایک سیاہ فارم جارج فلائیڈ کی سفید نام پولیس افسر کے ہاتھوں ہلاکت کے بعد ہنگامے

پھوٹ پڑے تھے۔ ان ملک گیر مظاہروں میں نسلی منافرت ختم کرنے، متعلقہ پولیس افسروں

کو سزا دینے اور پولیس نظام میں اصلاح کے مطالبات زور پکڑ گئے تھے اور ’’سیاہ

فاموں کی زندگیاں بھی اہمت رکھتی ہیں‘‘ کا نعرہ سامنے آیا تھا۔ صدر ٹرمپ نے منگل کی

سہ پہر وائٹ ہائوس کے روزگارڈن میں ایک تقریب کے دوران اس آرڈ پر دستخط کئے۔ اس

موقع پر پولیس کے ساتھ تصادم میں ہلاک ہونے والے متعدد سیاہ فام باشندوں کے خاندان

موجود تھے جن کے ساتھ تقریب شروع ہونے سے قبل صدر نے ملاقات کی۔ تاہم

پنجاب حکومت نے بھی صوبائی ملازمین پر بجلی گرادی

صدرٹرمپ نے اس تقریب میں نسلی منافرت یا سیاہ فاموں کے ساتھ ناروا سلوک کا کوئی

ذکر نہیں کیا۔ صدر ٹرمپ نے سیاہ فام افراد کی ہلاکت اور ان کے خاندانوں کو پہنچنے

والے صدمات پر افسوس کا اظہار کیا۔ تاہم اس کے بعد انہوں نے پولیس افسروں کی خدمات

کا بھی اعتراف کیا۔ جو ملک میں نظم و نسق پیدا کرنے کے لئے جانفشانی سے کام لیتے

ہیں۔ صدرٹرمپ نے جس ایگزیکٹو آرڈر پر دستخط کئے ہیں اس کے تحت ایک ڈیٹا بیس تیار

کیا جائیگا جس میں پولیس افسروں کی طرف سے کی جانے والی کسی زیادتی کا ریکارڈ

رکھا جائے گا۔ بہت سے پولیس افسر ایسے ہیں جن کی ملزموں کے ساتھ سخت رویہ

رکھنے کی طویل تاریخ ہے جن میں وہ سفید فام افسر ڈیرک شاون بھی شالم ہے جس کے

ہاتھوں سیاہ فام جارج فلائیڈ ہلاک ہوا تھا۔ صدر ٹرمپ نے بتایا کہ نئے حکم کے تحت کسی

پولیس افسر کو گھٹنے سے کسی ملزم کا گلا دبانے کی اجازت نہیں ہوگی۔ وہ یہ اختیار

صرف اس صورت میں استعمال کرسکیں گے جب ان کی اپنی زندگی خطرے میں پڑ جائے۔

صدر ٹرمپ

اپنا تبصرہ بھیجیں

Captcha loading...