92

پنجاب حکومت نے بھی صوبائی ملازمین پر بجلی گرادی

Spread the love

لاہور(صرف اردو آن لائن نیوز) صوبائی ملازمین

پنجاب حکومت نے آئندہ مالی سال 2020-21ء کے لئے 22کھرب40 ارب روپے کے حجم

کا بجٹ پیش کر دیا جس میں اخراجات جاریہ کے حجم کا تخمینہ 1778ارب روپے لگایا گیا

ہے ، ترقیاتی اخراجات کی مد میں337 ارب روپے ،صحت کے شعبہ کیلئے مجموعی طو

رپر 284ارب20کروڑروپے ،تعلیم کے شعبہ کیلئے مجموعی طور پر 391ارب روپے

سے زائد کی رقم مختص کرنے کی تجویز دی گئی ہے ،وفاق کی طرح پنجاب کے سرکاری

ملازمین کی تنخواہوں اور ریٹائرڈ ملازمین کی پنشن میں اضافہ نہیں کیا گیا ، پنجاب

حکومت کو آئندہ مالی سال کے دوران وفاقی قابل تقسیم محاصل سے 4963ارب حاصل

ہونے کا تخمینہ ہے جبکہ این ایف سی ایوارڈ کے تحت صوبہ پنجاب کو 1433ارب روپے

مہیا کئے جائیں گے،آئندہ مالی سال کے بجٹ میں صوبائی محصولات کیلئے 317ارب

روپے کا ہدف مقررکیا گیا ہے ،پنجاب کے آئندہ مالی سال کے بجٹ میں 56ارب روپے سے

زائد کے ٹیکس ریلیف پیکج کی تجویز بھی دی گئی ہے ،ہیلتھ انشورنس ، ڈاکٹرز کی

کنسلٹنسی ،ہسپتالوں پر ٹیکس 16اور5فیصد سے کم کرکے صفر ،20سے زائد سروسز پر

ٹیکس ریٹ16فیصد سے 5فیصد ،پراپرٹی ٹیکس کی ادائیگی دو اقساط ، انٹرٹینمنٹ ڈیوٹی

کی شرح کو 20فیصد سے کم کرکے 5فیصد ،سینما گھروں کوانٹرٹینمنٹ ڈیوٹی سے استثنیٰ

،نئے ویلیو ایشن ٹیبل کا اطلاق ایک سال کے لئے موخر،سٹیمپ ڈیوٹی کی موجودہ شرح کو

لاہور: کرونا سے متاثرہ علاقے سیل کرنے کا فیصلہ

5فیصد سے کم کر کے 1فیصد کرنے کی تجویز دی گئی ہے ، آئندہ مالی سال کے بجٹ میں

پبلک پرائیویٹ پارٹنر شپ اتھارٹی کے تحت آئندہ مالی سال میں 165ارب سے میگا

پراجیکٹس شروع کئے جائینگے،آئندہ مالی سال کے بجٹ میں ٹڈی دل کے تدارک ،قدرتی و

ناگہانی آفات سے نمٹنے کیلئے 4ارب سے زائد اور کورونا وائرس کی وباء سے نمٹنے کے

لئے13ارب روپے مختص کرنے کی تجویز دی گئی ہے ۔ پنجاب کا آئندہ مالی سال 2002-

21کا بجٹ پیش کرنے کے لئے اجلاس مقامی ہوٹل میں منعقد ہوا ۔ اجلاس کی صدارت

سپیکر پنجاب اسمبلی چوہدری پرویز الٰہی نے کی جبکہ وزیر اعلیٰ پنجاب سردار عثمان

بزدار بھی اجلاس میں شریک ہوئے ۔ صوبائی وزیر خزانہ مخدوم ہاشم جواں بخت نے آئندہ

مالی سال کا بجٹ پیش کیا۔

صوبائی ملازمین

اپنا تبصرہ بھیجیں