واجد ضیا جہانگیر ترین, wajid zia, jahangeer tareen 32

ہر الزام کو غلط ثابت کرونگا، جہانگیرترین

Spread the love

اسلام آباد(صرف اردو آن لائن نیوز ) جہانگیرترین

تحریک انصاف کے رہنما جہانگیر خان ترین نے کہا ہے کہ جھوٹے الزامات سے جھٹکا لگا

ہے، اپنے خلاف لگنے والے ہر الزام کاجواب دوں گا اور اسے غلط ثابت کروں گا۔شوگر

چینی سکینڈل،ترین ، اومنی ،شریف،عمرشہریار سمیت6گروپ فراڈ میں ملوث

انکوائری کمیشن رپورٹ کے حوالے سے سوشل میڈیا پر اپنے ردعمل میں جہانگیر ترین کا

کہنا تھا کہ ‘میں نے ہمیشہ صاف ستھرا کاروبار کیا ہے اور پورا پاکستان جانتا ہے کہ گنے

کے کاشت کاروں کوہمیشہ مکمل ادائیگی کی ہے۔ جہانگیر ترین کا کہنا ہے کہ انہوں نے

کبھی دہرے کھاتے نہیں بنائے، ہمیشہ ذمہ داری سے ٹیکس اداکیے، اپنے خلاف لگنے والے

ہر الزام کاجواب دوں گا اور اسے غلط ثابت کروں گا۔رہنما مسلم لیگ ق چودھری مونس

الہیٰ نے شوگر انکوائری کمیشن کی رپورٹ پر ٹویٹ کرتے ہوئے کہا ہے کہ قانون سازی

کیلئے سفارشات کی حمایت کرتا ہوں۔چودھری مونس الہیٰ نے اپنے ٹویٹ میں لکھا کہ میں

پہلے ہی کہہ چکا ہوں کہ کسی شوگر مل کی مینجمنٹ میں شامل ہوں اور نہ ہی کسی مل

کے بورڈ کا حصہ ہوں۔لیگی رہنما کا کہنا تھا کہ سٹہ بازی اور چینی کی قیمتوں میں ساز باز

سے جوڑ توڑ روکنے کے لئے کمیشن کی سفارشات کی حمایت کرتا ہوں۔پاکستان پیپلز

پارٹی (پی پی پی)نے حکومت کی جانب سے جاری کردہ چینی بحران انکوائری رپورٹ کو

گمراہ کن قرار دیتے ہوئے کہا ہے کہ اس میں کسی کو بچانے کی کوشش کی گئی ہے،

آخری مرتبہ سندھ حکومت نے دسمبر 2017 میں شوگر ملز کو سبسڈی دی تھی ، انکوائری

کمیشن کو 2019 اور 2020 کے حوالے سے تحقیق کرنا تھی۔ جمعرات کو چینی بحران

انکوائری رپورٹ آنے کے بعد نجی ٹی وی سے خصوصی گفتگو کرتے ہوئے سندھ

حکومت کے ترجمان بیرسٹر مرتضی وہاب کا کہنا تھا کہ کمیشن کی جس رپورٹ کا شہزاد

اکبر نے بتایا جھوٹ پر مبنی ہے۔انہوں نے کہا کہ آخری مرتبہ سندھ حکومت نے دسمبر

2017 میں شوگر ملز کو سبسڈی دی تھی۔مرتضی وہاب کا کہنا تھا کہ انکوائری کمیشن کو

2019 اور 2020 کے حوالے سے تحقیق کرنا تھی۔انہوں نے کہا کہ 2017 یا 18 سے

متعلق تحقیقات تو ٹی او آرز میں نہیں تھی یہ شاید لوگوں کو بچانے کی کوشش ہے۔مرتضی

وہاب کا کہنا تھا کہ اگر انکوائری کا مقصد سیاسی مخالفین کو پن پوائنٹ کرنا ہے تو ہمارا

اعتراض ہے۔ان کا کہنا تھا کہ وفاقی حکومت کو وزیراعلی سندھ مراد علی شاہ اور چیئرمین

پیپلز پارٹی بلاول بھٹو زرداری فوبیا ہوچکا ہے۔مرتضی وہاب نے کہا کہ جان بوجھ کر

انکوائری کا دائرہ کار بڑھایا جارہا ہے تاکہ ذمہ داروں کی نشاندہی نہ ہو۔ان کا کہنا تھا کہ

چینی کی ایکسپورٹ کرنے کی اجازت سندھ حکومت نے نہیں بلکہ وفاقی حکومت نے دی

تھی۔
جہانگیرترین

جہانگیر ترین

اپنا تبصرہ بھیجیں