فیاض احمد علیگ ڈاکٹر 113

غزل (ڈاکٹر فیاض احمد علیگ)

Spread the love

dr.faiyaz.alig@gmail.com
Mo. 9415940108

ڈاکٹر فیاض احمد علیگ کا تعلق ہندوستان سے ہے اور علمی حلقوں میں ان کا نام کسی تعارف کا محتاج نہیں ہے بینا پارہ اعظم گڑھ میں بحثیت استاد اور قریب ہی بطور معالج خدمات انجام دیتے ہیں ڈاکٹر فیاض احمد علیگ ہمہ جہت شخصیت کے مالک ہیں انہیں جس قدر دسترس طب و جراحت پر ہے اسی قدر شعر و سخن میں بھی ہے، یہی نہیں وہ تحریر و تحقیق کے فن میں بھی طاق ہونے کے ساتھ ساتھ اپنا ایک منفرد نام و مقام رکھتے ہیں ہم نے اس سے قبل بھی ڈاکٹر صاحب کے متعدد فن پارے شائع کئے ہیں اور ساتھ ساتھ ان کے تحقیقی مضامین بھی شائع ہوتے رہتے ہیں ہمارے ہاں جن لوگوں کے گذشتہ برس میں سب سے زیادہ پڑھا گیا ہے ان میں پروفیسر شمیم ارشاد اعظمی اور ڈاکٹر فیاض احمد علیگ ہی ہیں۔یہ بھی لکھنا ضروری ہے کہ ان کی غیر حاضری کو ہم تو محسوس کرتے ہیں کہ یہ ہمارے بہت محسن اور اچھے دوست و مشیر ہیں ہمارے ساتھ قارئین کرام بھی یاد کرتے ہیں اور ان کے مضامین سب سے زیادہ تلاش کئے جاتے ہیں۔ ہمارے معاونین میں یہ دونوں وہ احباب ہیں جن کی تحقیق کو ابھی تک کسی نے چیلنج نہیں کیا

ڈاکٹر فیاض احمد علیگ کا یہ کلام بھی پڑھیں

میں ہارا بھی اگر تو دوستی میں
وگرنہ کون جیتا دشمنی میں ۔
ترا ظالم کوئی نام و نسب ہے
تجھے ڈھونڈے گا کوئی کس گلی میں ۔
مصیبت میں نہیں کوئی کسی کا
زمانہ ساتھ ہوتا ہے خوشی میں ۔
غزل محبوب سی نازک تھی پہلے
مگر نشتر ہوئی اب کی صدی میں ۔
بھری برسات میں جو یار بچھڑے
کہاں پھر لطف کوئی زندگی میں ۔
مرے رستے میں دنیا آ گئی تھی
اسے بھی روند آیا بے خودی میں ۔
ذرا سی بات پر یوں روٹھ جانا
مناسب تو نہیں ہے دوستی میں ۔
سمندر اپنی موجوں سے پریشاں
سلگتی آنکھ ہے اپنی نمی میں ۔
مری فریاد بھی فیاض اکثر
وہ ظالم ٹال دیتا ہے ہنسی میں ۔

فیس بک پر ہمیں فالو اور لائیک کرنے کے لیے یہاں کلک کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں

Captcha loading...