155

سول انتظامیہ کی مدد کیلئے ملک بھر میں فوج تعینات سندھ میں پبلک ٹرانسپورٹ بند

Spread the love

پشاور ، کراچی ، اسلام آباد،لاہور ( سٹاف رپورٹر )ملک بھر فوج تعینات, پاکستان میںکرونا وائرس سے متاثرہ افراد کی مجموعی تعداد 873 ہوگئیگزشتہ روز ملک بھر سے 77 کیسز رپورٹ ہوئے جن میں سے سندھ میں 42، پنجاب میں 24، خیبرپختونخوا میں 7 اور اسلام آباد میں 4 افراد میں مہلک وائرس کی تصدیق ہوئی۔نئے کیسز کی تصدیق کے بعد ملک میں متاثرہ افراد کی تعداد 87۳ تک جا پہنچی ہے جبکہ مہلک وائرس سے اب تک 6 افراد صحتیاب بھی ہوئے ہیں جن میں سے 4 کا تعلق سندھ اور 2 کا اسلام آباد سے ہے۔پنجاب میں مزید 24 افراد میں کورونا وائرس کی تصدیق ہوئی ہے جس کے بعد صوبے میں مجموعی کیسز کی تعداد 246 ہوگئی ہے۔

یہ بھی پڑھیں:پنجاب میں بھی لاک ڈائون،ڈبل سواری پر پابندی

وزیر اعلیٰ عثمان بزدار کیمطابق ڈی جی خان 177، لاہور 52، گجرات 4، گوجرانوالہ 4، جہلم 3، راولپنڈی 2، ملتان 2 اور سرگودھا میں کورونا وائرس کا ایک مریض ہے۔سندھ میں مزید 42 افراد میں کورونا وائرس کی تشخیص ہوئی جس کے بعد صوبے میں اب تک کْل کیسز کی تعداد 394 ہوگئی ہے۔ترجمان سندھ حکومت کے مطابق کراچی میں 3 نئے کیس رپورٹ ہوئے ہیں جس کے بعد کراچی میں متاثرہ افراد کی تعداد 132 تک جاپہنچی ہے جب کہ ایک مریض کا تعلق حیدرآباد اور ایک کا دادو سے ہے۔تفتان سے سکھر آنے والے زائرین میں مزید 39 افراد میں مہلک وائرس کی تشخیص ہوئی ہے جس کے بعد متاثرہ افراد کی تعداد 260 ہوگئی ہے۔اسلام آباد پولیس نے وفاقی دارلحکومت کے علاقے بارہ کہو میں تبلیغی جماعت کے 6 افراد میں کورونا کی تصدیق کر دی۔اے ایس پی بارہ کہو حمزہ امان اللہ نے کہا ہے کہ تبلیغی جماعت کے 6 افراد میں کورونا کی تصدیق ہوئی ہے،جماعت میں شریک باقی 6 افراد کے بھی ٹیسٹ کروائے جا رہے ہیں،تمام علاقے کو قرنطینہ میں بدل دیا ،ضلعی انتظامیہ اہل علاقہ کے ٹیسٹ کروائے گی۔

فیصل آباد میں ایران سے آئے 150 زائرین کو قرنطینہ منتقل کر دیا گیا جہاں انہیں میڈیکل عملے اور طبی سہولیات فراہم کی گئی ہیں، سکیورٹی کیلئے پولیس اور آرمی کے جوان بھی تعینات کر دیئے گئے۔ایران سے آئے 150 زائرین کا قافلہ فیصل آباد پہنچ گیا، زائرین کو جھنگ روڈ پارس کیمپس میں بنائے گئے قرنطینہ سینٹر میں رکھا جائے گا جہاں تمام ضروری انتظامات مکمل کر لئے گئے ہیں۔قرنطینہ میں ادویات، میڈیکل عملہ اور دیگر سہولیات فراہم کی گئی ہیں جبکہ قرنطینہ کی سکیورٹی کیلئے پولیس اور آرمی کی نفری تعینات ہے۔دوسری طرف کراچی سمیت صوبے بھر میں لاک ڈائونکے پہلیروز، شہر قائد مکمل طور پر بند کر دیا گیا۔ قانون نافذ کرنے والوں کی مختلف علاقوں میں ناکہ بندی کے بعد پولیس حکام کی شہریوں کو مسلسل گھروں میں رہنے کی ہدایت دیدی، صوبے میں کرونا وائرس کے مزید 19 کیسز رپورٹ، کل تعداد 352 ہوگئی۔سندھ کے باسیوں کا مہلک وائرس کرونا سے جنگ کا مشن، سندھ حکومت کی جانب سے صوبے بھر میں لاک ڈائون کا پہلے روز شاہراہوں، گلی محلوں اور اہم مقامات پر رینجرز اور پولیس کے ناکے لگا دیئے گئے۔رات گئے خلاف ورزی کرنے والوں کی پولیس نے خوب خاطرداری کی،تیس افراد کو حراست میں لیا اور تنبیہ کے بعد رہا کر دیا، خلاف ورزی کرنے والوں کے خلاف پولیس نے بھرپور کارروائی کا عندیہ بھی دے دیا۔ ا?ج صبح شہر قائد کی شاہراہوں پر مکمل سناٹا دیکھنے میں آیا، اہم کاروباری مراکز مکمل طور پر بند رہے، مجبوری میں کام پر جانے والوں کو اجازت کے بعد سفر کی اجازت دی گئی۔سندھ یصوبائی وزیر ٹرانسپورٹ نے صوبے بھر میں پبلک ٹرانسپورٹ پر بھی پابندی عائد کردی۔وزیرٹرانسپورٹ سندھ اویس شاہ نے اپنے بیان میں کہا کہ صوبے میں شہروں کے اندرچلنے والے پبلک ٹرانسپورٹ پر بھی پابندی عائد کردی ہے، بسیں اور آن لائن سروس پر بھی پابندی ہے۔وزیر ٹرانسپورٹ کا کہنا تھا کہ کوئی شہری بیمار ہے یا ضروری کام ہے تو وہ ٹیکسی یا رکشہ استعمال کرے۔اویس شاہ نے بتایا کہ صوبے میں2 دن میں300 گاڑیوں کا چالان کیا گیا، 50 کے روٹ پرمٹ منسوخ، 20 گاڑیاں تھانوں میں بند اور 5 ٹرانسپورٹرز پر مقدمے درج کیے۔کمشنر کراچی نے کھانے کی ہوم ڈیلیوری اور پارسل پر بھی پابندی عائد کردی جب کہ کسی گاڑی میں 10 لیٹر سے زائد پیٹرول ڈلوانے کی اجازت نہیں ہوگی۔کمشنر کراچی کا کہنا ہے کہ کریانہ اسٹورز کو ہر ممکن سہولیات فراہم کی جائیں گی، دکاندار سندھ حکومت کی مقررہ پرائس لسٹ کے مطابق اشیاء￿ خردو نوش فروخت کریں۔کمشنر کراچی کے مطابق کھانے کی ہوم ڈیلیوری اورپارسل پربھی پابندی عائد کردی گئی جب کہ تمام ریسٹورنٹس کیکچن بھی بند رہیں گے، گھر کے صرف ایک فرد کو سودا سلف خریدنے کی اجازت ہوگی۔کمشنر کراچی افتخار شلوانی نے کہا کہ بسیں، آن لائن ٹیکسی سروسز، بس سروس اور رکشے وغیرہ کو شاہراہوں پر گزرنے کی اجازت نہیں ہوگی،فارم ہاؤسز اور گھروں میں تقریبات پر پابندی ہوگی جب کہ پیٹرول پمپس پر کسی گاڑی میں 10 لیٹر سے زیادہ پیٹرول نہیں ڈالا جائے گا۔دوسری جانب محکمہ داخلہ سندھ کے نوٹی فکیشن کے مطابق اشیائے خورونوش کی خریداری کے لیے شناختی کارڈ رکھنا لازمی ہوگا اور میڈیا سے تعلق رکھنے والے افراد بھی پابندی سے مستثنیٰ ہوں گے جب کہ لازمی سروسز والے افراد کو پابندیوں میں نرمی ہوگی۔

ملک بھر فوج تعینات

ملک بھر فوج تعینات

اپنا تبصرہ بھیجیں