154

سعودی حکومت کا تمام عمرہ زائرین کو 72 گھنٹوں میں ملک چھوڑنے کا حکم

Spread the love

ریاض ، واشنگٹن ،نئی دہلی ، تہران ، روم ( مانیٹرنگ ڈیسک )سعودی حکومت کا تمام عمرہ زائرین کو 72 گھنٹوں میں ملک چھوڑنے کا حکم ,سعودی عرب نے کورونا وائرس کے پھیلاؤ کے خدشے کے پیش نظر پورے ملک کو لاک ڈاؤن کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔سعودی حکام کی جانب سے ملک کو لاک ڈاون کرنے کے فیصلے سے تمام ممالک اور ائیر لائنز کو بھی آگاہ کر دیا ہے۔سعودی حکومت کے فیصلے کے تحت تمام عمرہ زائرین اور وزٹ ویزے پر آنے والوں کو 72 گھنٹوں میں سعودی عرب چھوڑنا ہو گا۔سعودی اقامہ اور ریزیڈنسی رکھنے والے پاکستانیوں کو 72گھنٹوں میں سعودی عرب چھوڑنے کا کا آپشن دیا گیا ہے، اگر ملک کو ایک بار لاک ڈاؤن کر دیا گیا تو پھر کسی کو بھی جانے یا آنے کی اجازت نہیں ہو گی۔

پی آئی اے نے پاکستانی شہریوں کوواپس لانے کے لیے ہنگامی اقدامات شروع کر دیئے

سعودی حکومت کے اعلان کے مطابق پی آئی اے نے پاکستانی شہریوں کو وطن واپس لانے کے لیے ہنگامی اقدامات شروع کر دیئے ہیں۔ترجمان پی آئی اے حکام کا کہنا ہے کہ اضافی پروازوں سے پاکستانی شہریوں کو سفری سہولت فراہم کی جائے گی، اضافی پروازوں کے شیڈول کا کچھ دیر میں اعلان بھی کر دیا جائے گا۔ سعودی عرب نے دنیا بھر میں بڑھنے والے کرونا وائرس کے خطرے کے پیش نظر شہریوں اور رہائشیوں کے سفر کو عارضی طور پر معطل کرتے ہوئے پاکستان اور یورپی یونین سمیت 12ممالک کے ساتھ پروازوں کو بھی روک دیا ہے۔ سعودی خبر رساں ایجنسی (ایس پی اے) کی رپورٹ کے مطابق وزارت داخلہ کے ایک عہدیدار نے ایس پی اے کے ذریعہ جاری ایک بیان میں بتایا کہ نئی پرواز معطلی میں یورپی یونین کے ممالک ، سوئٹزرلینڈ ، ہندوستان ، پاکستان ، سری لنکا ، فلپائن ، سوڈان ، ایتھوپیا ، جنوبی سوڈان ، اریٹیریا ، کینیا ، جبوتی اور صومالیہ شامل ہیں۔عہدیدار نے کہا کہ وہ تمام افراد جو گزشتہ 14 دنوں کے دوران ان ممالک سے آئے ہیں یا وہاں موجود تھے وہ سعودی عرب کے اندر نہیں آ سکتے۔صحت حکام کی جانب سے جاری وائرس سے بچائو کے حفاظتی معیارات کا حوالہ دیتے ہوئے عہدیدار نے مزید بتایا کہ سعودی شہریوں اور رہائشیوں پر بھی ان ممالک کا سفر کرنے کی پابندی ہو گی۔اس کے علاوہ سعودی عرب نے تجارتی و مال بردار ٹریفک ، انسانی و غیر معمولی مقاصد کے علاوہ اردن کے ساتھ اپنی تمام زمینی گزرگاہیں بند کر دی ہیں

امریکا نے برطانیہ کے سوا تمام  ممالک کیساتھ  تمام سفری روابط معطل کردیئے

۔دوسری طرف امریکا نے برطانیہ کے سوا تمام دیگر یورپین ممالک کیساتھ 30 دنوں کے لئے تمام سفری روابط معطل کردیئے ہیںیہ اقدام نوول کرونا وائرس کے مزید پھیلا ئوکے خدشہ کے پیش نظر اٹھایا گیا ہے ۔ان پابندیوں کا اطلاق جمعہ کو نصف شب کے بعد ہوگا اور زمینی صورتحال کو دیکھتے ہوئے بعدازاں اس میں تبدیلی لائی جائے گی ،یہ بات صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے اپنے 11منٹ کے خطاب میں کہی۔ٹرمپ نے کہا ہے کہ ہم وائرس کے خلاف جنگ کے ایک اہم وقت سے گزررہے ہیں ۔اس وائرس سے 1ہزار سے زائد امریکی شہری متاثر ہوئے ہیں اور ملک بھر میں وائرس کی وجہ سے کم ازکم 38 افراد ہلاک ہوئے ہیں ۔ٹرمپ انتظامیہ نے اس سے قبل چین اور ایران سے سفر پر پابندی عائد کی تھی ۔

ایران میں ارکان پارلیمنٹ میں کرونا وائرس کے انکشاف کا سلسلہ جاری

ایران میں حکومتی ذمے داران اور ارکان پارلیمنٹ میں کرونا وائرس کے انکشاف کا سلسلہ جاری ہے۔غیرملکی خبررساں ادارے کے مطابق اس حوالے سے تازہ ترین پیش رفت میں اعلان کیا گیا کہ وزیر صنعت رضا رحمانی اور وزیر سیاحت علی اصغر منسان بھی اس مہلک وائرس کے متاثرین کی فہرست میں شامل ہو گئے ۔ایرانی پاسداران انقلاب کی مقرب مذکورہ نیوز ایجنسی نے صدر حسن روحانی کے نائب اسحاق جہانگیری کے بھی کرونا سے متاثر ہونے کی تصدیق کر دی ہے۔ جہانگیری کی صحت کے حوالے سے کئی روز سے قیاس آرائیاں جاری تھیں۔ حالیہ عرصے میں منعقد ہونے والے اعلی سطح کے اجلاسوں کی تصاویر میں جہانگیری کہیں نظر نہیں آئے۔فلپائن کے صدر روڈریگو نے اعلان کیا ہے کہ کورونا وائرس کے پھیلاؤ کو روکنے کے لیے دارالحکومت منیلا کا لاک ڈاؤن کیا جا رہا ہے۔ملک میں 53 مصدقہ کیسز میں سے دو ہلاک ہو چکے ہیں۔صدر نے اعلان کیا شہر سے زمینی، سمندر اور فضائی سفر منسوخ کیے جا رہے ہیں تاکہ پوری کمیونٹی کو قرنطیہ میں رکھا جا سکے۔صدر نے شہر میں بڑے اجتماعات پر بھی پابندی عائد کر دی ہے، ایک ماہ کے لیے سکول بند ہیں اور جن علاقوں میں کیسز سامنے آئے ہیں وہاں برادریوں کو قرنطینہ میں رکھا جائے گا۔

واشنگٹن کی سرکاری عمارتوں میں یکم اپریل تک عوامی داخلے پر پابندی عائد کر دی گئی

امریکی دارالحکومت واشنگٹن ڈی سی کی سرکاری عمارتوں میں یکم اپریل تک عوامی داخلے پر پابندی عائد کر دی گئی ہے۔ان عمارتوں میں ایوانِ نمائندگان اور سینیٹ کی وہ تمام عمارتیں شامل ہیں جہاں پر کانگرس کے ارکان اور ان کا عملہ کام کرتا ہے۔عام عوام کو ان عمارتوں میں داخلے یا اپنے نمائندوں سے ملنے کے لیے خصوصی پاس جاری کیے جائیں گیدنیا بھر میں کووڈ-19 نامی اس وائرس سے متاثر ہونے والے افراد کی تعداد ایک لاکھ 18 ہزار سے بڑھ چکی ہے جبکہ 4300 سے زیادہ لوگ ہلاک ہو چکے ہیںیورپ اور امریکہ میں مریضوں کی تعداد میں اضافہ دیکھنے میں آ رہا ہے جبکہ چین میں کمی دیکھی گئی ہییورپی ممالک میں کورونا وائرس کے مریضوں کی تعداد 16 ہزار سے تجاوز کر گئی ہے جن میں سے 10 ہزار اٹلی میں ہیں جہاں وائرس سے 631 افراد کی ہلاکت کی تصدیق کی جا چکی ہیامریکہ میں اس وائرس سے متاثرہ افراد کی تعداد ایک ہزار سے زیادہ ہو چکی ہے چینی حکام نے ملک میں کورونا وائرس کی بدترین صورتحال سے باہر آنے کا دعویٰ کیاہے۔غیر ملکی خبر رساں ادارے کے مطابق چین کے سینئر میڈیکل ایڈوائزر نے نیوز کانفرنس میں بتایا کہ کورونا وائرس کی عالمی وباء کے جون تک ختم ہونے کے امکانات ہیں۔انہوں نے کہا کہ چین میں دوسرے ممالک سے آنے والے کیسز میں سے کئی مریضوں میں وائرس کی علامات نہیں اور صحت یاب ہونے والے مریضوں میں دوبارہ انفیکشن کی شرح بھی انتہائی کم ہے۔دوسری جانب چینی ہیلتھ کمیشن کے سربراہ کا کہنا ہے کہ چین وائرس کی بدترین صورتحال سے باہر آگیا ہے۔

سعودی حکومت کا تمام عمرہ زائرین کو 72 گھنٹوں میں ملک چھوڑنے کا حکم

سعودی حکومت کا تمام عمرہ زائرین کو 72 گھنٹوں میں ملک چھوڑنے کا حکم

اپنا تبصرہ بھیجیں