پاکستان کرونا کیسز 53 197

کرونا وائرس بمقابلہ پاکستان

Spread the love

از قلم مجاہد حسین حر: کراچی

(کرونا وائرس بمقابلہ پاکستان)دنیاکو پریشان کرنے والا کرونا وائرس جب غلطی سے پاکستان آن پہنچا تو پاکستانیوں کو دیکھ کر پریشان ہونے لگا پاکستان کے تمام شہروں ،قصبوں، دیہاتوں،گلیوں، محلوں میں پہلے سے موجود لاکھوں پریشان وائرسوں نے کرونا وائرس کا پرتپاک استقبال کیا،پرتپاک استقبال کو دیکھ کر کرونا مزید پریشان ہونے لگا

کرونا نے دیگر وائرسوں سے انکی پریشانی کی وجہ پوچھی تو کرونا کے ہم جنس وائرسوں نے روتے ہوئے کہا

جناب کرونا صاحب
آپ کو نہیں پتہ کہ جس سرزمیں پر آپ تشریف لائے ہیں اس سرزمین کے باشندے اتنے مضبوط ہیں کہ ہم جیسی نحیف مخلوق ان کے اندر گھسنا تو دور کی بات انکے منہ اور نتھنوں کے قریب بھی نہیں جاسکتے
جناب کرونا صاحب
جس جس وائرس نے پاکستانیوں کے منہ اور نتھنوں کے قریب جانے کی کوشش کی وہ وائرس یا تو دنیا ہی سے رخصت ہوگیا یا اس پر فالج گرا

پاک ٹی ہاوس لاہور 1940 سے آج تک

کرونا صاحب
یہاں کے لوگ سرخ ، ہری مرچ،نسوار ،پان، سگریٹ، چرس،بھنگ، آئس،ہیروئن،افیم نہ جانے کیا کیا کھانے اور چبانے کے عادی ہیں ہم خود پریشان ہیں کہ یہ کیسی مخلوق ہے جو کسی چیز سے خوفزدہ نہیں ہوتی

کرونا صاحب
یہ نہ گولیوں سے ڈرتے ہیں نہ ہی بم دھماکوں سے خوفزدہ ہوتے ہیں ہم نے ساری دنیا پر اپنی دھاک بٹھانے کے بعد پاکستان کا رخ کیا تاکہ پاکستانیوں پر بھی اپنی دھاک بٹھادیںلیکن جیسے ہی ہم نے پاکستان کی سرزمین پر قدم رکھا ہری نسوار اور چرس کے بدبو سے ہم چکرا کر گر گئے جب ہوش آیا تو غلاظتوں کے تعفن نے ہمیں گھیر لیا جب تعفن سے ہم نے جان چھڑانے کی کوشش کی تو ہمیں ہیروئن کا عادی بنادیا گیاجب ہم نےپاکستان سے بھاگ نکلنے کا ارادہ کیا تو کہا گیا کہ اس دام پر دنیا میں کہیں چرس اور ہیروئن دستیاب نہیں

لہذا ہم یہی ٹھہر گئےاب ہم یہاں سے کسی دوسرے ملک منتقل نہیں ہوسکتے

کرونا صاحب
آپ نے سمجھا تھا کہ پاکستانی بھی چینیوں کی طرح آپ سے ڈر جائیں گےنہ بابا نہ، یہ کسی سے نہیں ڈرتے دنیا ان سے ڈرتی ہے

کرونا صاحب
ہمارا مشورہ یہ ہے کہ آپ یہاں سے فورا بھاگ لو ورنہ تمہیں بھی ہیروئن یا نسوار کا عادی بنادیا جائے گا تم دنیا کے تمام وائرسوں تک ہمارا پیغام پہنچادو کہ وہ پاکستان آنے کی غلطی نہ کریں کرونا نے اپنے ہم جنس وائرسوں سے کہا کہ چلو میں چھپ کر واہگہ بارڈر سے بھارت میں داخل ہوجاؤں گا شاید وہاں کے لوگ مجھ سے خوف زدہ ہوجائیں وائرسوں نے کہا

کرونا صاحب
بھارت میں تو دنیا کا سب سے بڑا خبیث وائرس پہلے سے ہی حکومت کررہا ہےکرونا نے پوچھا وہ کون ہے؟ایک فالج زدہ وائرس نے مودبانہ انداز میں کہا: حجور اس کانام مودی ہےیہ سن کر کرونا ہکا بکا رہ گیا اور کہنے لگا آپ ٹھیک ہی کہتے ہیں مودی جی تو دنیا کے تمام وائرسوں کا ابا ہے

ہمیں ٹوئیٹر پر فالو کریں

پریشان حال کرونا ان دنوں پاکستان سے نکلنے کی بھرپور کوشش کررہا ہےمگر ماسک بیچنے والے دوکانداروں کی التماس کی وجہ سے کچھ دن رکنے کا سوچ رہا ہے ماسک مافیا کرونا کی منت سماجت کررہا ہے کہ انکی خاطر کچھ دن پاکستان میں ٹک جائے سنا ہے ماسک مافیا نے کرونا وائرس کے سفر کے لئے کرونا کار کا بندوبست بھی کرلیا ہے.

کرونا وائرس بمقابلہ پاکستان

کرونا وائرس بمقابلہ پاکستان

اپنا تبصرہ بھیجیں