146

یوکرین مسافرطیارہ مار گرانے کیخلافتہران یونیورسٹی ایرانی پولیس اور طلبا کے درمیان میدان جنگ بن گئی

Spread the love

تہران کی جامع امیرکبیر میں طلبا نے حکومت کے خلاف مظاہرے شروع کیے تو پولیس نے یونیورسٹی کا گھیرائو کرلیا

تہران(ویب ڈیسک)ایران میں پاسداران انقلاب کی طرف سے یوکرین کا مسافرطیارہ مار گرائے جانے کے واقعے کے بعد عوامی غم وغصہ بدستورموجود ہے اور ملک میں کئی مقامات پر حکومت کے خلاف مظاہرے ہو رہے ہیں۔ تہران یونیورسٹی میں طلبا اور پولیس کے درمیان کئی گھنٹے تک تصادم جاری رہا۔ تہران کی جامع امیرکبیر میں طلبا نے حکومت کے خلاف مظاہرے شروع کیے تو پولیس نے یونیورسٹی کا گھیرائو کرلیا۔

ایرانمیڈیا کے مطابق تہران یونیورسٹی کے طلبا اتحاد کی طرف سے ایک بیان جاری کیا گیا ہے جس میں بتایا گیا ہے کہ یونیورسٹی کے اطراف میں پولیس کی بھاری نفری تعینات کی گئی ہے۔ بیان میں مزید کہا گیا ہے کہ پاسیج فورس اور طلبا کے درمیان کئی گھنٹے محاذ آرائی ہوئی۔سوشل میڈیا پر پوسٹ کردہ فوٹیج میں بتایا گیا ہے کہ دارالحکومت تہران میں بڑی تعداد میں لوگوں نے یوکرین کا طیارہ مار گرائے جانے کے خلاف احتجاج جاری رکھا ہوا ہے۔

خیال رہے کہ 8 جنوری 2020 کو تہران میں یوکرین کا ایک مسافر ہوائی جہاز گرکرتباہ ہوگیا تھا۔ بعد ازاں ایران نے تسلیم کیا تھا کہ یوکرین کے ہوائی جہاز کو غلطی سے میزائل حملے سے نشانہ بنایا گیا تھا۔ طیارے پر 176 افراد سوار تھے جن میں سے کوئی زندہ نہیں بچ سکا تھا۔اس واقعے کے بعد ایران میں طلبا اور نوجواںوں بڑی تعداد سڑکوں پرنکل آئی تھی۔ طیارہ مار گرانے کے خلاف ایران میں احتجاج کل چوتھے روز بھی جاری رہا۔

اپنا تبصرہ بھیجیں