مریم نوازنے بھی لندن جا نے کی اجازت مانگ لی, نام ای سی ایل میں شامل کرنے کا اقدام چیلنج

Spread the love

لاہور (نامہ نگار خصوصی)مریم نوازنے بھی

سابق وزیر اعظم میاں محمد نواز شریف کی صاحبزادی مسلم لیگ (ن) کی سینئرنائب صدر مریم نواز شریف نے اپنانام ایگزٹ کنٹرول لسٹ میں شامل کئے جانے کولاہور ہائی کورٹ میں چیلنج کردیا۔اس سلسلے میں امجد پرویز ملک ایڈووکیٹ کی وساطت سے دائر درخواست میں مریم نواز کا پاسپورٹ واپس کرنے کی استدعا بھی گئی ہے ،مسٹر جسٹس علی باقر نجفی اور مسٹر جسٹس انوارالحق پنوں پر مشتمل ڈویژن بنچ کل 9دسمبر کو اس کیس کی سماعت کرے گا۔

مریم نواز کی درخواست میں وفاقی وزارت داخلہ، چیئرمین نیب ، ڈی جی نیب لاہور، ایف آئی اے حکام اورڈی جی امیگریشن اینڈ پاسپورٹ کو فریق بنایا گیاہے ۔درخواست میں مریم نواز نے اپنے نام کی ای سی ایل میں شمولیت کے قانونی جواز کو چیلنج کیا ہے ،انہوں نے درخواست میں اپنے والد کی تیمارداری کی خاطر 6ہفتوں کے لئے ایک مرتبہ بیرون ملک جانے کی اجازت دینے کی استدعا بھی کی ہے ،

یہ بھی پڑھیں:نالائق اعظم نے پاکستان کی معیشت تباہی کے دہانے پر پہنچا دی،مریم نواز

درخواست گزار کا موقف ہے کہ ان کے والد میاں محمدنواز شریف تین مرتبہ اس ملک کے وزیراعظم رہے ،وہ جمہوریت ،عوامی فلاح ،انصاف اورقانون کی حکمرانی پر یقین رکھتے ہیں،ان کے والد کی حالت تشویشناک ہے اور وہ علاج کے لئے لندن میں ہیں، درخواست میں کہا گیاہے کہ وہ اپنی بسترمرگ پرپڑی والدہ کو چھوڑ کر اپنے والد کے ساتھ سزاکاٹنے کے لئے خود پاکستان واپس آئی تھیں،

انہیں ایون فیلڈ ریفرنس میں سزا ہو چکی تھی اوران کی گرفتاری یقینی تھی، درخواست گزار کو ان کے والد کے ساتھ طیارے سے ہی گرفتارکرکے اڈیالہ جیل بھیج دیا گیا تھا،جہاں انہیں بنیادی سہولتوں سے بھی محروم رکھا گیا،جس کے کچھ عرصہ بعد ان کی والدہ کا لندن میں انتقال ہوگیا اور ان کا جسدخاکی پاکستان لایا گیا،ایون فیلڈ ریفرنس میں اسلام آباد ہائی کورٹ جبکہ چودھری شوگرملز منی لانڈرنگ کیس میں لاہور ہائی کورٹ ان کی ضمانت منظور کرچکی ہے ،درخواست میں قانونی نکات اٹھائے گئے ہیں کہ ان کاموقف سنے بغیر نام ای سی ایل میں شامل کیا گیا،

ای سی ایل میں نام شامل کرنے کا میمورنڈرم غیر قانونی ، آئین کی خلاف ورزی اورعدالتی فیصلوں کے منافی ہے ،درخواست گزارعدالتوں میں ڈیڑھ سال تک مسلسل پیش ہوتی رہی ہیں،ان کانام ای سی ایل میں شامل کرنے کا اقدام عجوبہ ہے، حکومت کا یہ اقدام ایگزٹ کنٹرول لسٹ کی سکیم سے بھی متصادم ہے،وہ اپنی والدہ کی وفات کے بعد اپنے والد میاں نواز شریف کی دیکھ بھال کرتی رہی ہیں،میاں نواز شریف بیماری میں ان پر ہی انحصار کرتے ہیں، نواز شریف کی بیماری کی حالت ناقابل بیان اورتشویشناک ہے ،درخواست گزار اپنے والد کی بیماری کی وجہ سے شدید ذہنی دباؤ کا شکار ہے،

والد کی دیکھ بھال کے لئے بیرون ملک جانا چاہتی ہوں، درخواست میں استدعا کی گئی ہے کہ ان کا نام 20اگست2018ء کوای سی ایل میں شامل کیا گیا ،حکومت کے اس اقدام کو غیر آئینی اور غیر قانونی قراردے کر کالعدم کیا جائے ۔ درخواست میں مزید کہا گیاہے کہ لاہور ہائی کورٹ نے 31اکتوبر 2019ء کو ان کی درخواست ضمانت منظور کرتے ہوئے انہیں اپنا پاسپورٹ جمع کروانے کی ہدایت کی تھی ،

درخواست گزار نے31اکتوبر کو اپنا پاسپورٹ عدالتی حکم کے مطابق ڈپٹی رجسٹرار(جوڈیشل)کے پاس جمع کروادیاتھا، درخواست میں کہا گیاہے کہ وہ اپنے والد کی عیادت اور تیمارداری کے لئے ان کے پاس بیرون ملک جانا چاہتی ہیں، اس لئے عدالت عالیہ کے ڈپٹی رجسٹرار(جوڈیشل)کو پاسپورٹ واپس کرنے کا حکم دیا جائے،درخواست میں یہ استدعا بھی کی گئی ہے کہ اس درخواست کے حتمی فیصلے تک انہیں عبور ی دادرسی کے طور پر 6ہفتے کے لئے ایک مرتبہ بیرون ملک جانے کی اجازت دی جائے۔

مریم نوازنے بھی


Notice: Undefined variable: aria_req in /backup/wwwsirfu/public_html/wp-content/themes/upress/comments.php on line 83

Notice: Undefined variable: aria_req in /backup/wwwsirfu/public_html/wp-content/themes/upress/comments.php on line 89

اپنا تبصرہ بھیجیں