مقبوضہ کشمیر کے عوام کو مسلسل شدید مشکلات کا سامنا‘ فوجی محاصرہ 68 ویں روز بھی جاری رہا

Spread the love

قابض انتظامیہ نے 05 اگست کے بعد سے مقبوضہ علاقے کی تمام بڑی مساجد اور درگاہوں پر نمازجمعہ کی ادائیگی کی اجازت نہیں دی

سرینگر(وائس آف ایشیا)مقبوضہ کشمیرمیں مسلسل 68ویںروز بھی مقبوضہ وادی کشمیر اور جموں کے مسلم اکثریتی علاقوںمیں کشمیریوںکو بھارت کے فوجی محاصرے اور مواصلاتی پابندیوںکی وجہ سے شدید مشکلات کا سامنا ہے۔ کشمیر میڈیاسروس کے مطا بق کشمیریوںکو سخت پابندیوں کے باعث خوراک اور ادویات سمیت اشیائے ضروریہ کی شدید قلت کا سامنا ہے اورلوگوںکو موبائیل او ر انٹرنیٹ سروسز سمیت ذرائع مواصلات اورپبلک ٹرانسپورٹ معطل ہونے کے باعث مقبوضہ علاقے اور مقبوضہ علاقے سے باہر اپنے پیاروں کے بارے میں کوئی اطلاع نہیں ہے ۔اس دوران کئی مواقع پر لوگوںکو اپنے رشتہ داروں کے انتقال کے بارے میں اطلاع ایک ہفتہ یا اس کے بھی بعد ملی ۔ مسلسل لاک ڈائون اور ایمبولینسوںکی عدم دستیابی کی وجہ سے بعض افرادبروقت ہسپتال نہ لے جانے کے باعث انتقال کر گئے ہیں ۔ قابض انتظامیہ کی طرف سے آج لوگوںکو نماز جمعہ کے بعد بھارت مخالف مظاہرے کرنے سے روکنے کیلئے وادی کشمیر میں کرفیو جیسی پابندیاں دوبارہ نافذ کرنے کا خدشہ ہے ۔

یاد رہے کہ قابض انتظامیہ نے 05 اگست کے بعد سے مقبوضہ علاقے کی تمام بڑی مساجد اور درگاہوں پر نمازجمعہ کی ادائیگی کی اجازت نہیں دی ہے۔ادھر امریکی سینیٹر میگی حسن نے ٹویٹر پر جاری ایک پیغام میں بھارت اور پاکستان کے درمیان کشیدگی کے خاتمے کے طریقے تلاش کرنے پر زوردیا ہے ۔کشمیر میں بڑھتی ہوئی کشیدگی کے بارے میں انہوںنے کہاکہ دو نوںاطراف صورتحال میں بہتری کے طریقے تلاش کرناضروری ہے ۔میگی حسن نے کہاکہ وہ اب بھارت کا دورہ کر رہی ہیںجہاں وہ صورتحال اور بین الاقوامی تجارت کے بارے میں مزید تبادلہ خیال کیلئے حکام سے ملاقاتیں کریںگی۔

Leave a Reply