ہیروئن اسمگل کرنے کا الزام، سعودی عرب میں دو پاکستانیوں کے سر قلم

Spread the love

ریاض(مانیٹرنگ ڈیسک) سعودی عرب میں دو پاکستانیوں کے سر قلم کر دئیے گئے ۔شرعی عدالت میں غلام قمر اور محمد اکبر پر ہیروئن اسمگل کرنے کا جرم ثابت ہوا تھا۔سعودی ذرائع ابلاغ کے مطابق دونوں پاکستانی شہریوں نے جرم کا اعتراف بھی کیا تھا۔جنیوا میں اقوام متحدہ کی انسانی حقوق کونسل کی رپورٹ کے مطابق ستمبر2019 تک 21 پاکستانیوں سمیت 134 افراد کے سر قلم کیے گئے۔

سزائے موت پانے والوں میں 21 پاکستانی، 15 یمنی، 5 شامی، چار مصر ی، دو اردن، دو نائیجیریا، ایک صومالیہ کا شہری شامل ہے جب کہ دو کی شناخت نہیں بتائی گئی۔اس سال پھانسی پانے والوں میں تین خواتین اور 51 وہ ہیں جن پر منشیات کے الزامات تھے۔ڈیتھ پنلٹی پروجیکٹ نے اپنی رپورٹ میں انکشاف کیا کہ مزید 24 افراد کو پھانسی کا خطرہ ہے جن میں سیاسی مخالفین، علما اور انسانی حقوق کے کارکن بھی شامل ہیں۔گزشتہ برس 2018 میں سعودی عرب نے 149 افراد کو پھانسی دی گئی تھی۔

Leave a Reply