126

مقبوضہ کشمیر میں46ویں روزبھی کرفیوکے باوجود احتجاج

Spread the love

سرینگر (مانیٹرنگ ڈیسک) مقبوضہ وادی میں جبری پابندیوں کا گزشتہ روز 46 واں روز تھا، تمام تر بھارتی مظالم کے باوجود لوگوں کا حوصلہ بلند ہے، مسلسل کرفیو کے باوجود مظاہرے اور جگہ جگہ احتجاج جاری رہا۔بھارتی فوج طاقت کے زور پر کشمیریوں کی آواز دبانے میں مصروف ہے۔

ہر گلی اور سڑک پر بھارتی فوج تعینات ہے، کشمیریوں کو گھروں سے نکلنے نہیں دیا جا رہا، مارکیٹ، دکانیں، ٹرانسپورٹ بند ہیں، کمیونی کیشن سسٹم بند جبکہ ٹی وی چینلز تک رسائی نہیں، مودی سرکار بھارتی سیاسی رہنماؤں کو بھی وادی کا دورہ کرنے کی اجازت نہیں دے رہی۔دوسری طرف اقوام متحدہ کے سیکریٹری جنرل انٹونیو گوٹیریس نے بھارت سے مقبوضہ کشمیرمیں انسانی حقوق کا احترام کرنیکا مطالبہ کرتے ہوئے کہا ہے کہ مسئلہ کشمیر کے حل کیلیے پاک بھارت مذاکرات انتہائی ضروری ہیں،

فریقین قبول کریں تو اقوام متحدہ کردار ادا کرنے کے لیے تیار ہے۔غیرملکی خبررساں ادارے کے مطابق انہوں نے کہا کہ ہم صرف اپنی خدمات پیش کرسکتے ہیں اور فریقین قبول کرلیں تو اس پر عمل کیا جاسکتا ہے اور دوسری جانب ہم کسی چیز کی حمایت کرسکتے ہیں

جس کا اظہار کیا جا چکا ہے اور کیا جاتا رہے گا۔سیکریٹری جنرل انٹونیو گوٹیریس نے مزید کہا کہ میری رائے واضح ہے کہ علاقے(مقبوضہ کشمیر)میں انسانی حقوق کامکمل احترام کیا جاناچاہیے اور یہ کہ بھارت اور پاکستان کے درمیان مسئلہ کو حل کرنے کے لیے مذاکرات انتہائی اہم ہیں۔

اپنا تبصرہ بھیجیں