بھارت میں انتہا پسندوں کا کشمیری نوجوان پر تشدد، زنانہ لباس میں گھماتے رہے

Spread the love
کشمیری طالب علم میر فرید جسے انتہا پسند ہندووں نے تشدد کا نشانہ بنایا

انجینئرنگ کا طالب علم میرفرید اے ٹی ایم سے پیسے نکلوانے گیا کہ انتہا پسندوں نے تشدد کا نشانہ بنایا، بھارتی میڈیا

مقامی پولیس کو اطلاع دی تو انتہا پسندوں کیخلاف کاروائی کے بجائے میرفرید سے سخت سوالات پوچھتے رہے ،بھائی

جے پور(مانیٹرنگ ڈیسک) راجستان کے شہر الور میں انتہا پسند ہندوں نے کشمیری نوجوان پر تشدد کیا اور اسے زنانہ کپڑے پہنا کر گھماتے رہے۔ غیرملکی میڈیا کے مطابق بھارتی ریاست راجستان کے شہر الور میں ہندو انتہا پسندوں نے کشمیری نوجوان کا نہ صرف تشدد کا نشانہ بنایا بلکہ اسے زنانہ لباس پہنا کر بازاروں میں گھمایا گیا۔

بھارتی میڈیا کے مطابق بارہ مولا سے تعلق رکھنے والا 23 سالہ میرفرید انجینئرنگ کا طالب علم ہے، میر فرید اے ٹی ایم سے پیسے نکلوانے گیا تھا کہ انتہا پسندوں نے اسے دھرلیا اور تشدد کا نشانہ بنایا، اسے زنانہ لباس پہنا کر کھمبے سے باندھ دیا اور بازاروں میں گھمایا۔

متاثرہ نوجوان کے بھائی کا کہنا ہے کہ میر فرید جان بچانے کے لیے ایک اے ٹی ایم میں داخل ہوا تو 20 کے قریب انتہا پسندوں نے اسے دوبارہ نکال کر تشدد کا نشانہ بنایا۔ مقامی پولیس کو اطلاع دی گئی تو پولیس میرے بھائی کو ہی اپنے ساتھ لے گئی اور انتہا پسندوں کے خلاف کاروائی کے بجائے میرفرید سے سخت سوالات پوچھے جا رہے ہیں۔

کشمیری نوجوان پر تشدد

Leave a Reply