فہمیدہ ریاض (ولادت: 28 جولائی 1946ء- 22 نومبر 2018ء)

Spread the love
Image result for ‫فہمیدہ ریاض‬‎

پاکستانی ترقی پسند ادیبہ، شاعرہ، سماجی کارکن برائے حقوق انسانی و حقوق نسواں تھیں۔ ان کی مشہور تصانیف میں گوداوری، خط مرموز اور خانہ آب و گل ہے۔ خانہ آب و گل فارسی زبان کی مشہور مثنوی مولانا روم کا پہلا اردو ترجمہ ہے۔15 ادبی کتابوں کی مصنفہ کی پوری زندگی تنازعات سے گھری رہی ہے۔ جب ان کا مجموعہبدن دریدہ منظر عام پر آیا تو ان پر شہوت انگیز اور حساس الفاظ استعمال کرنے کا الزام لگایا گیا۔ انہوں نے شاہ عبد اللطیف بھٹائی اور شیخ ایاز کی کتابوں کا سندھی زبان سے اردو میں ترجمہ کیا ہے۔ فہمیدہ ریاض نے محمد ضیاء الحق کے دور آمریت سے تنگ آ کر پاکستان سے بھارت میں پناہ لی جہاں انہوں نے کئی برس گزار دئے۔ ان کا شعری مجموعہ اپنا جرم ثابت ہے جنرل ضیاء الحق کے ظلم و ستم کو بیاں کرتا ہے۔ انہوں نے اس مجموعہ میں اپنا تجربہ بیان کیا ہے۔

Image result for ‫فہمیدہ ریاض‬‎

ان کی پہلی شاعری احمد ندیم قاسمی کے فنون میں شائع ہوئی، اس وقت ان کی عمر محض 15 برس تھی۔ 22 سال کی عمر میں ان کا پہلا شعری مجموعہ منظر عام پر آیا۔ فہمیدہ ریاض کی ولادت 28 جولائی 1946ء کو میرٹھ کے ایک تعلیمی خاندان میں ہوئی۔ اس وقت میرٹھ برطانوی حکومت کا حصہ تھا۔ ان کے والد ریاض الدین احمد ایک تعلیم پسند شخص تھے۔ وہ صوبہ سندھ میں تعلیم نظام کو بہتر بنانے میں مصروف تھے۔ ان کے والد کا تبادلہ ہو گیا اور وہ لوگ حیدراباد میں مقیم ہو گئے۔ ابھی ان کی عمر چار برس ہی تھی کہ والد صاحب کا انتقال ہو گیا اور والدہ نے ان کی پرورش کی۔ ان ہوں ایام طفولت میں اردو سندھی زبان سیکھ لی اس کے بعد فارسی سے بھی شناسائی حاصل کی۔ تعلیم مکمل کرنے کے بعد وہ ریڈیو پاکستان سے جڑگئیں۔ کالج سے تعلیم مکمل کرنے کے بعد فہمیدہ ریاض کو ان کے اہل خانہ نے ان کو طے شدہ شادی کرنے پر ابھارا۔ انہوں نے اپنے پہلے شوہر کے ساتھ کچھ برس برطانیہ میں گزارے۔ اس کے بعد طلاق لے کر پاکستان آگئیں۔ اس دوران میں انہوں نے بی بی سی اردو ریڈیو میں کام کیا اور فلم کاری میں ڈگری حاصل کی۔ اس شادی سے ان کو ایک بیٹی ہے۔

دوسری شادی سے ان کو دو اولادیں ہوئیں۔ ان کے دوسرے شوہر کا نام ظفر علی جان ہے۔ وہ ایک سیاست دان ہیں۔

Related image

کراچی میں انہوں نے ایک اشتہاری ایجنسی میں کام کرنا شروع کیا مگر جلدی ہی اپنا ایک مجلہ جاری کیا۔ اس مجلہ کا انداز کچھ سیاسی اور لبرل تھا جو جنرل ضیاءالحق کو پسند نہ آیا اور ان پر اور ان کے شوہر پر متعدد الزامات لگائے گئے اور یہاں تک کہ ان کے شوہر ظفر کو جیل بھی جانا پڑا۔ بعد میں مجلہ بھی بند ہو گیا۔ سنسرشب کے بارے میں وہ کہتی تھیں:

ہر ایک کو ایک فن میں سنجیدہ ہونا چاہئے اور کبھی بھی سمجھوتہ نہیں کرنا چاہئے۔ فن میں ایسی تقدیس ہے کہ وہ تشدد کو نہیں اپناتا ہے۔ قاری کو چاہئے کہ وسعت قلب کے ساتھ مطالعہ کرے تاکہ معنی کی گہرائی کو پہونچ سکے۔ میں اردو-ہندی انگریزی لغت ایسی دلچپی سے پڑھتی ہوں گویا شاعری پڑھ رہی ہوں۔ مجھے الفاظ بہت بھاتے ہیں۔

ان کا ماننا تھا کہ نسوانیت کے کئی معنی ہوسکتے ہیں۔ میرے نزدیک نسوانیت کا مطلب یہ ہے کہ مرد کی طرح عورت بھی ایک مکمل انسان ہے جس کی لا محدود ذمہ داریاں ہیں۔ ان کو بھی امریکی کالے یا دلت کی طرح سماجی برابری حاصل کرنے لیے جدوجہد کرنی پڑتی ہے۔ عورتوں کو معاملہ مزید سنگین ہے۔ ان کو سڑک پر بلا جھجک اور بغیر کسی پریشان کا سامنا کیے ہوئے سڑکوں پر گھومنے کی آزادی ہے۔ ان کو تیرنے، محبت کی شاعری کرنے کی آزادی ہے، بالکل اسی طرح جس طرح مرد بلا کسی روک ٹوک کےکرتے ہیں اور ان پر کوئی اخلاقی پابندی عائد نہیں ہوتی ہے۔ یہ نا انصافی بہت واضع ہے، بہت ظالمانہ اور ناقابل معافی ہے۔

Image result for ‫فہمیدہ ریاض‬‎

اپنے سیاسی خیالات کی بنا پر ان کو کافی مشکلات کا سامناکرنا پڑا۔ جنرل ضیاءالحق کے دور میں ان پر تقریباً دس مقدمے کیے گئے۔ پاکستان پینل کوڈ کی دفعہ 124A کے تحت ان پر سیڈیشن چارج لگا۔ شوہر کی گرفتاری کے بعد ان کے ایک مداح نے ان کو ضمانت پر رہا کروایا تاکہ پھر سے ان کو جیل نا جانا پڑے اور پھر ان کو اور ان کے دو چھوٹے بچوں اور بہن سمیت مشاعرہ کے بہانے بھارت بھیج دیا جائے۔ اس وقت بھارت کی مشہور شاعرہ امرتا پریتم نے اس ضمن میں موجودہ وزیر اعظم اندرا گاندھی سے اس ضمن میں بات کی اور محترمہ ریاض کو بھارت میں پناہ مل گئی۔

ان کے بچوں کو بھارت میں اسکول میں داخلہ مل گیا۔ بھارت میں ان کے کئی رشتہ دار رہتے تھے۔ بعد میں ان کے شوہر جیل سے رہا ہونے کے بعدبھارت آگئے اور ان کے ساتھ رہنے لگے۔ اس خاندان نے تقریباً سات برس جلا وطنی کی زندگی گزاری۔ پھر جنرل محمد ضیاء الحق کی وفات کے بعد بینظیر بھٹو کے ولیمہ کی شام کو وہ بھارت سے پاکستان لوٹ آئیں۔ اس دوران میں ان کا قیام بحیثیت شاعرہ جامعہ ملیہ اسلامیہ دہلی میں رہا۔ اپنی جلاوطنی کے دوران میں انہوں ہندی بھی سیکھ لی تھی۔

وفات

72 سال کی عمر میں 21 نومبر 2018ء کو وہ اس دنیا سے چل بسیں۔

Please follow and like us:

Leave a Reply