کھیل میں ہار جیت ہوتی رہتی ہے، ٹیم میں گروپ بندی کی خبریں درست نہیں، عماد وسیم

Spread the love

سرفراز احمد کی کپتانی سے استعفی کا معاملہ کرکٹ بورڈ اور سلیکشن کمیٹی کا ہے

اسپنرز عماد وسیم اور شاداب خان کی مشترکہ پریس کانفرنس

اسلام آباد (سپورٹس رپورٹر)قومی ٹیم کے آل رائونڈر عماد وسیم کا کہنا ہے کہ سرفراز احمد کی کپتانی سے استعفی کا معاملہ کرکٹ بورڈ اور سلیکشن کمیٹی کا ہے۔ اسلام آباد میں قومی ٹیم کے اسپنرز عماد وسیم اور شاداب خان نے مشترکہ پریس کانفرنس کی اس موقع پر عماد وسیم نے کہا کہ کھیل میں ہار جیت ہوتی رہتی ہے، ٹیم میں گروپ بندی کی خبریں درست نہیں، ہم ٹیم ورک کے طور پر کھیلے جب کہ میچ کے دوران کوچ کا کردار کم ہوتا ہے، کھلاڑی نے ہی پرفام کرنا ہوتا ہے اور کپتان اور کھلاڑی فیصلہ کرتے ہیں۔

عماد وسیم کا کہنا تھا کہ عمران خان بڑے سوچ کے مالک ہیں لیکن ہمیں ورلڈکپ کے دوران وزیراعظم کا کوئی پیغام نہیں آیا اور بھارت کے خلاف میچ کو ہماری قوم جنگ کی طرح لیتی ہے، بھارت سے شکست کے بعد ہم پر بہت دبا تھا، سرفراز احمد نے بھارت کے میچ کے بعد خود میٹنگ بلائی تھی جس میں سرفرازنے کہا ہمیں ٹورنامنٹ میں کم بیک کرنا ہے۔

عماد وسیم نے کہا کہ رن ریٹ کا ایشو تھا لیکن پہلا میچ ہم بری طرح ہارے تھے اور میں قسمت کے بجائے محنت پر یقین رکھتا ہوں، افغانستان کے خلاف میچ میں شائقین کو تحمل کا مظاہرہ کرناچا ہیے تھا۔ ایک سوال کے جواب میں آل رانڈر نے کہا کہ سرفراز احمد کی کپتانی سے استعفی کا معاملہ کرکٹ بورڈ اور سلیکشن کمیٹی کا ہے۔

افغانستان کے خلاف میچ میں شائقین کے درمیان جھڑپ کے حوالے سے بات کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ ہم مسلمان بھائی ہیں، لڑنا نہیں چاہیے۔ انہوں نے کہا کہ آج کل کی کرکٹ میں کوئی ٹیم چھوٹی نہیں، افغانستان کی ٹیم بھی مضبوط ہے۔

عماد وسیم نے کہا کہ راشد خان ورلڈ کلاس بولر ہیں اور ان کے خلاف رنز بنانا آسان نہیں۔نیوزی لینڈ کے خلاف بلے بازوں کی محتاط بیٹنگ کے حوالے سے ان کا کہنا تھا کہ اس حوالے سے بیٹسمین ہی بتاسکتے ہیں تاہم نیوزی لینڈ کی مضبوط ٹیم ہے وکٹیں گر جاتی تو مشکلات ہو جاتیں۔دوسری جانب شاداب خان کا کہنا تھا کہ بھارت کے خلاف میچ ہارنے سے ہمیں افسوس ہے۔

Please follow and like us:

Leave a Reply