کرونا مریض صحت یاب 115

شریف اور زرداری خاندان لوٹا ہوا آدھا پیسہ واپس لے آئیں ملک کا قرضہ اتر جائے گا، عمران خان

Spread the love

راولپنڈی (سٹاف رپورٹر ) وزیراعظم عمران خان نے کہا ہے کہ ملک مسائل

کی وجہ سے نہیں کرپشن کی وجہ سے تباہ ہو سکتا ہے،نئے پاکستان میں ایک

قانون ہو گا، بڑے اور چھوٹے ڈاکو کو ایک ہی کلاس ملے گی،مہذب معاشروں

میں ریلوے کوتوجہ دی جاتی ہے، شہبازشریف کا خاندان اور زرداری کا خاندان

آدھا بھی پیسہ جو چوری کا واپس لے آئیں تو ملک کا قرضہ اتر جائے گا، روپیہ

اوپر چلا جائے گا اور ڈالر نیچے آئے گا،میں نے قوم سے وعدہ کیا تھا، جنہوں

نے ملک کو کنگال کیا اور لوگوں پرمشکلات ڈالیں ان سے جواب لوں گا، یہ جو

مرضی کریں مجھے کوئی فرق نہیں پڑے گا، جس بادشاہ سے سفارش کرائیں ان

کے گھٹنے دبائیں، میں نے جواب لینا ہے، کوئی این آر او نہیں دوں گا۔وہ بدھ کو

راولپنڈی میں سرسید ایکسپریس ٹرین کے افتتاح کے موقع پر تقریب سے خطاب

کر رہے تھے۔ وزیراعظم عمران خان نے کہا کہ شیخ رشید ریلوے کو بہتر کرنے

کی کوشش کررہے ہیں، سارا پاکستان ان کو دعائیں دے گا، ریلوے عام آدمی کا

سفر ہے، دنیا میں سارے مہذب معاشروں کے اندر ریلوے کو درجہ دیا جاتا ہے

، ریلوے سفر کاسب سے آسان اور بہترین طریقہ ہے، ریلوے میں 36 ارب کا

خسارہ تھا، تیل کی قیمت اوپر جانے اور روپے کی قدر کم ہونے کے باوجود 36

ارب سے خسارہ 32 ارب پر لے آئے، ابھی صرف 10 ماہ ہوئے ہیں، ملک کا

ایک ایک ادارہ ریکارڈ خساہ کررہا تھا، اس خسارے کی وجہ کیا تھی، اس کے

پیچھے کرپشن تھی، ایک ملک وسائل کی کمی سے غریب نہیں ہوتا بلکہ کرپشن

کی وجہ سے ہوتا ہے، ہندوستان میں ریل چل رہی ہے اور اربوں کا نفع ہے لیکن

ہمارے ملک میں یہ خسارے میں ہے ، ہم نے ملک میں عام آدمی کی زندگی بہتر

کرنا ہے، اب تک چھوٹے طبقے کی زندگی بہتر ہوئی، عام آدمی پسا ہے تعلیم

انگلش میڈیم اور پیسے والوں کے لیے ہے، ملک کا آج دیوالیہ غریبوں نے نہیں،

ان تھوڑے سے لوگوں نے نکالا جو آج بھاگے پھررہے ہیں۔انہوں نے کہا کہ

کرپشن کا مطلب پبلک کا پیسہ چوری ہونا ہے، یہ غریب کو غریب اور چھوٹے

طبقے کو امیر کرتی ہے، ملک ایک مشکل سے گزررہا ہے اس کے پیچھے کیا

ہے، 10 سال میں 2 حکومتیں قرض کو 6 ہزار ارب سے 30 ہزار ارب پر لے

گئیں، یہ کیسے ممکن ہے، کوئی بتائے کہ 60 سالہ تاریخ میں قرضہ 6 ہزار ارب

ہو اور 10 سال میں 30 ہزار ارب پر لے گئے، دونوں گھر شریفوں اور زرداری

کی دولت دیکھیں، 10 سال میں یہ کتنے امیر تھے، پہلے ہی پیسہ چوری کیا تھا،

10 سالوں میں دونوں خاندانوں میں بچوں کے بچے بھی اربوں پتی بن گئے اور

قوم مقروض ہوگئی، یہ شور کرتے ہیں کہ عمران خان انتقامی کارروائی کررہا

ہے، انتقامی کارروائی تو میرے خلاف ہوئی تھی، جب میں نے پاناما کی بات کی

تو میرے اوپر سپریم کورٹ میں 2 کیسز ہوئے اور 32 مقدمات بنائے، 6 کیس

الیکشن کمیشن میں کیے، یہ صرف اس لیے کہ میں پاناما کے اربوں روپے کا

جواب مانگ رہا تھا، اس کو انتقامی کاروائی کہتے ہیں۔ عمران خان نے کہا کہ

زرداری اور نوزشریف کے کیسز پرانے ہیں، ہم نے کیسز شروع نہیں کیے، انہوں

نے مجھ پر کیس کیے، جمہوریت میں لیڈر جواب دہ ہوتا ہے، میں لندن نہیں بھاگ

گیا تھا، میں نے 10 ماہ جواب دیا، سپریم کورٹ میں ایک ایک چیز کا جواب دیا

جس سے میں صادق اور امین ثابت ہوا، میں نے رونا دھونا نہیں کیا، ان کی طرح

جلسے جلوس نہیں کیے، عدالت میں اپنا جواب دیا، اپوزیشن لیڈر شہباز شریف

شہباز نے اسمبلی میں کہا کہ روپیہ کتنا گر گیا اور ڈالر اوپر گیا، شہبازشریف کا

خاندان اور زرداری کا خاندان آدھا بھی پیسہ جو چوری کا واپس لے آئیں تو ملک

کا قرضہ اتر جائے گا اور ڈالر نیچے آئے گا۔ وزیراعظم عمران خان نے کہا کہ

نیا پاکستان بننا شروع ہوگیا ہے، کبھی بھی اتنے بڑے ڈاکوں پر کسی نے ہاتھ نہیں

ڈالا تھا، کبھی ایسے لوگوں کا احتساب نہیں ہوا تھا، جیلوں میں غریب لوگ ملتے

ہیں، جو لوگ چوری کرکے پیسہ لے گئے وہ وی آئی پی جیل مانگتے ہیں، ہمارے

80 فیصد لوگوں کے پاس ائیرکنڈیشن نہیں، ادھر یہ لوگ جیل میں ائیرکنڈیشن اور

ٹی وی مانگ رہے ہیں، اس حوالے سے اپنے وزیر قانون کو کہا ہے،نیا پاکستان

ایک پاکستان ہوگا، ہم نے قانون سب کیلئے ایک ہی قسم کا لانا ہے ۔دریں اثناوزیرِ

اعظم عمران خان نے گیس چوری کے خلاف مہم کو مزید موثر بنانے کی ہدایت

کرتے ہوئے کہا ہے کہ گیس چوری میں ملوث عناصر کے بلا تفریق کاروائی کے

ساتھ ساتھ ایسے عناصر کو بے نقاب کیا جائے۔ انہوں نے یہ بات بدھ کو گیس کی

فراہمی سے متعلق امور پراعلی سطح کے اجلاس کی صدارت کرتے ہوئے کہی۔

معاون خصوصی ندیم بابر، سیکرٹری پاور عرفان علی، سیکرٹری خزانہ نوید

کامران بلوچ، سیکرٹری دفاع لیفٹیننٹ جنرل (ر)اکرام الحق، سیکرٹری خارجہ

سہیل محمود، ایم ڈی انٹر سٹیٹ گیس سسٹم مبین صولت، ڈی جی گیس شاہد یوسف

و دیگر سینئر افسران اجلاس میں شریک تھے۔معاون خصوصی ندیم بابر نے وزیرِ

اعظم کو گیس کی طلب و رسد اور آئندہ مہینوں میں گیس کی ضروریات کو پورا

کرنے کے سلسلے میں اٹھائے جانے والے اقدامات سے آگاہ کیا۔معاون خصوصی

بابر ندیم نے بریفنگ دی کہ گزشتہ دو ماہ میں گیس چوری میں ملوث 18 ہزار

کنکشنز کو منقطع کیا گیا ہے جبکہ اب تک 2.5 ارب روپے مالیت کی گیس چوری

ہونے سے بچائی گئی ہے۔ نیشنل پاورٹی گریجوایشن انیشی ایٹو کا آغاز 5جولائی

سے ہو گا جس سے ایک کروڑ 61لاکھ افراد چار سال کے دوران استفادہ کریں

گے بدھ کو وزیراعظم عمران خان کی زیر صدارت نیشنل پاورٹی گریجوایشن

انیشی ایٹو منصوبے سے متعلق اجلاس ہوا۔ اجلاس میں وزیراعظم کو بتایا گیا کہ

نیشنل انیشی ایٹو منصوبے کا آغاز 5جولائی سے ہو رہا ہے، جبکہ اس منصوبے

سے ایک کروڑ 61لاکھ افراد 4 سال کے دوران استفادہ کریں گے، اجلاس میں

وزیراعظم کو منصوبے کے بجٹ اور دیگر تفصیلات پر بھی آگاہ کیا گیا جبکہ اس

موقع پر معاون خصوصی برائے اطلاعات ڈاکٹر فردوس اعوان بھی موجود تھیں۔



اپنا تبصرہ بھیجیں