18 جون کے واقعات ایک نظر میں

Spread the love

واقعات

1812ء امریکا نے برطانیہ اور آئرلینڈ کیخلاف جنگ کا اعلان کیا

1941ء ترکی نے جرمنی سے امن معاہدے پر دستخط کیے

2008ء اسرائیل نے لبنان کے ساتھ ساٹھ سالہ پرانا تنازع حل کرنے کے لیے امن بات چیت کی تجویز دی۔

ولادت

1845ء چارلس لیوس الفونسے لاورن ای فرانسیسی طبیب تھے جنھوں نے 1907 کا نوبل انعام برائے طب وصول کیا جس کی وجہ انکی جانب سے نقصان دہ جرثوموں کو دریافت کرنا تھا۔ ان کا انتقال 18 مئی 1922 کو ہوا۔

1893ء ملک فیروز خان نون 7 مئی 1893ء کو ضلع سرگودھا کی تحصیل بھلوال کے گاؤں ہموکہ میں یپدا ہوئے۔ وہ سر محمد حیات نون کے صاحبزادے تھے۔ ابتدائی تعلیم پبلک اسکول بھیرہ ضلع سرگودھا سے حاصل کی۔ 1905ء میں ایچی سن کالج لاہور میں داخلہ لیا۔ 1912ء میں اعلیٰ تعلیم کے حصول کے لیے انگلستان چلے گئے۔ 1916ء میں ویڈہم کالج آکسفورڈ سے ہسٹری میں بی اے کیا۔ 1917ء میں بیرسٹر بن کر واپس ہندوستان چلے آئے۔ جنوری 1918ء میں سرگودھا سے اپنی پریکٹس کا آغاز کیا۔ جنوری 1921ء تا جنوری 1927ء ہائی کورٹ میں پریکٹس کرتے رہے۔ 11 دسمبر 1957ء کو ابراہیم اسماعیل چندریگر وزارتِ عظمیٰ سے مستعفی ہو گئے اسی روز ملک فیروز خان نون نے بطور وزیراعظم پاکستان حلف اٹھایا۔ ملک فریوز خان نون کئی کتابوں کے مصنف بھی تھے جن میں کینیڈا، احمقوں سے حصولِ عقل، چشمِ دید، ہندوستان اور آپ بیتی (سوانح عمری) قابل ذکر ہیں۔ ان کا انتقال 9 دسمبر 1970 کو ہوا۔

1918ء فرانکو موڈگ لیامی فرانس کے ماہر اقتصادیات تھے اقتصا دیات میں ان کے کام کی اہمیت کو دیکھ کر 1985ءمیں انھیں نوبل میموریل انعام برائے معاشیات مشترکہ طور پر دیا گیا۔ ان کا انتقال 25 ستمبر 2003 کو ہوا۔

1918 جیروم کارلیایک امریکی طبیعیاتی کیمیاءدان تھے، جنھوں نے 1985ء کا نوبل انعام جیتا تھا۔ ان کا انتقال 6 جون 2013ء کو ہوا۔

1927ء ادیب سہیل پاکستان سے تعلق رکھنے والے اردو کے ممتاز شاعر، ماہانہ قومی زبان کے مدیر اور ماہرِ موسیقی تھے۔ ان کا انتقال 8 مارچ، 2017ء کو ہوا۔

1949ء سوار محمد حسین جنجوعہ شہید 18 جون 1949ء کو ضلع راولپنڈی کی تحصیل گوجر خان کے ایک گاؤں ڈھوک پیر بخش (جو اب ان کے نام کی مناسبت سے ڈھوک محمد حسین جنجوعہ اور ڈھوک نشان حیدرکے نام سے موسوم کی جا چکی ہے) میں پیدا ہوئے۔ انہوں نے 3 ستمبر 1966ء کو محض سترہ سال کی کم عمری میں پاک فوج میں بطور ڈرائیور شمولیت اختیار کی اور ڈرائیور ہونے کے باوجود عملی جنگ میں بھر پور حصہ لیا۔ انہوں نے پاک بھارت جنگ میں حصہ لیا اور 10 دسمبر 1971 کو شام 4 بجے بھارتی فوج کی مشین گن سے نکلی گولیاں ان کے سینے پر لگیں اور وہ وہیں خالق حقیقی سے جا ملے۔ ان کی اسی بہادری کے اعتراف میں پاک فوج نے انہیں اعلی ترین فوجی اعزاز نشان حیدر سے نوازا۔

1964ء عُدے صدام حسین سابقہ عراقی صدر صدام حسین کا سب سے بڑا بیٹا اور قصی صدام حسین کا بھائی تھا۔ کئی سالوں تک عدے کو اس کے والد کا جانشین تصور کیا جاتا رہا، تاہم بعد میں یہ مقام اس کے بھائی قصی کو حاصل ہو گیا جس کی وجہ اس کا قاتلانہ حملے میں شدید زخمی ہونا، غیر معمولی سیلانی طرز عمل اور خاندان کے ساتھ اس کے خراب تعلقات تھے۔ اس پر عصمت دری، قتل اور ایذا رسانی کے کئی الزامات تھے، جس میں عراقی اولمپک کھلاڑیوں اور قومی فٹ بال ٹیم پر تشدد بھی شامل ہیں۔ اسے کئی بار قید، جلاوطن اور اپنے والد کی حکومت کی طرف سے برائے نام سزائے موت کی سزا بھی سنائی گئی۔22 جولائی 2003ء میں عراق پر ریاستہائے متحدہ کی قیادت میں حملے کے دوران وہ اپنے بھائی قصی اور بھتیجے مصطفی کے ہمراہ ایک امریکی ٹاسک فورس کے ہاتھوں موصل میں ہلاک ہوا۔

1987ء معین علی ایک انگریز بین الاقوامی کرکٹ کھلاڑی ہے۔ 2017ء سے معین علی تمام اقسام کی کرکٹ میں انگلستان قومی کرکٹ ٹیم کی نمائندگی کر رہا ہے۔

وفات

741ء لیون سوم ایساوری کو لیون سوم سوری بھی کہا جاتا ہے، وہ 717ء سے 741ء میں اپنی وفات تک بازنطینی سلطنت کا شہنشاہ رہا۔ لیون نے 1717ء میں محاصرۂ عظیم سے قبل شہنشاہ ثیودوسیوس سوم کو تخت چھوڑنے کو کہا اور خود قابض ہوکر تخت نشین ہو گیا۔ انہوں نے امویوں چڑھائی کے خلاف سلطنت کا کامیابی سے دفاع کیا اور شبیہوں کی تعظیم و تکریم ممنوع قرار دی۔

767ء نعمان ابن ثابت بن زوطا بن مرزبان، عام طور پر آپکو امام ابو حنیفہ کے نام سے بھی جانا جاتا ہے۔ آپ سنی حنفی فقہ (اسلامی فقہ) کے بانی تھے۔ آپ ایک تابعی، مسلمان عالم دین، مجتہد، فقیہ اور اسلامی قانون کے اولین تدوین کرنے والوں میں شامل تھے۔ آپ کے ماننے والوں کو حنفی کہا جاتا ہے۔ زیدی شیعہ مسلمانوں کی طرف سے بھی آ پ کو ایک معروف اسلامی عالم دین اور شخصیت تصور کیا جا تا ہے۔ انہیں عام طور پر “امام اعظم” کہا جاتا ہے۔آپ 5 ستمبر 699ء کو پیدا ہوئے۔

1858ء جھانسی کی رانی جن کا نام لکشمی بائی تھا۔ جھانسی ریاست کی رانی تھی جو 19 نومبر 1828ء کو پیدا ہوئی اور 18 جون 1858ء کو وفات پاگئی۔ وہ جنگ آزادی ہند 1857ء میں بھرپور کردار نبھانے والے ان لیڈروں میں سے ایک تھی جنہوں نے ہندوستان کو انگریزوں سے آزاد کرانے میں زبردست کردار آدا کیا۔

1936ء میکسم گورکی روس کے مشہور انقلابی شاعر، ناول نگار، افسانہ نگار، ڈراما نویس اور صحافی ہیں جنہوں نے اپنی تحریروں سے دنیا کے بہت بڑے حصے کو متاثر کیا، انقلاب میں ایک نئی روح پھونک دی اور دنیا کے مظلوم طبقے و پسے ہوئے لوگوں میں امید کی ایک نئی لہر پیدا کردی جس کی بازگشت آج تک جاری ہے۔

گورکی کے بارے میں تفصیلی مضمون پڑھنے کے لیے یہاں کلک کریں۔

1971ء پال کارر،ایک سوئس آرگینک کیمسٹ تھا جنھیں وٹامنز کے حوالے سے جانا جاتا ہے۔ انہوں 1937 میں والٹر ہاورتھ کے ساتھ کیمسٹری کا نوبل انعام دیا گیا۔ وہ 21 اپریل 1889 کو پیدا ہوئے۔

تعطیلات و تہوار

1953ء انقلاب مصر مصرمیں جمہوریت کا اعلان محمدعلی کی بادشاہت کاخاتمہ ہوا

Leave a Reply