آصف زرداری 10 روز کے جسمانی ریمانڈ پر نیب کے حوالے

Spread the love

عدالت کا آصف زرداری کو 21 جون کو دوبارہ پیش کرنے کا حکم

سماعت کے موقع پر احتساب عدالت کے اندر اور باہر سیکورٹی کے انتہائی سخت انتظامات

احتساب عدالت کو جانے والے تمام راستوں کو بند کردیا گیا

جوڈیشل کمپلیکس کے اردگرد سیکورٹی کے لیے 1500 اہلکاروافسران تعینات تھے

اسلام آباد(صباح نیوز) احتساب عدالت نے جعلی اکاونٹس کیس میں گرفتار سابق صدر آصف زرداری کو 10 روز کے جسمانی ریمانڈ پر نیب کے حوالے کردیا۔نیب نے گذشتہ روز اسلام آباد ہائیکورٹ کی جانب سے آصف زرداری کی مستقل ضمانت کی درخواست مسترد ہونے پر انہیں زرداری ہاوس سے گرفتار کیا تھا۔نیب کی جانب سے سابق صدر کو احتساب عدالت کے جج ارشد ملک کی عدالت میں پیش کیا گیا۔

اس موقع پر پولیس کے 300 اہلکار نیب راولپنڈی کے دفتر اور 500 اہلکار احتساب عدالت کے باہر تعینات تھے جب کہ رینجرز اہلکار بھی گشت پر تھے۔دورانِ سماعت پراسیکیوٹر نیب مظفر عباسی نے موقف اختیار کیا کہ بینک حکام کی معاونت سے جعلی بینک اکاونٹس کھولے گئے، ملزم کو گرفتار کیا ہے، تفتیش کے لیے ریمانڈ کی ضرورت ہے۔

جج ارشد ملک نے استفسار کیا آصف زرداری کو کن بنیادوں پر گرفتار کیا پہلے یہ بتائیں جس پر پراسیکیوٹر نیب نے کہا میں گرفتاری کی بنیاد پڑھ کر بتا دیتا ہوں۔ نیب نے احتساب عدالت سے آصف زرداری کے 14 روزہ جسمانی ریمانڈ کی استدعا کی جس پر عدالت نے فیصلہ محفوظ کرلیا۔ احتساب عدالت نے تقریبا ایک گھنٹہ بعد فیصلہ سناتے ہوئے سابق صدر کا 10 روز کا جسمانی ریمانڈ منظور کرتے ہوئے انہیں نیب کے حوالے کردیا۔

عدالت نے آصف زرداری کو 21 جون کو دوبارہ پیش کرنے کا حکم دیا ہے۔ نیب نے اپنی دستاویزات وجوہات بیان کرتے ہوئے بتایا ہے کہ آصف زرداری پر رقوم اپنے ساتھیوں، بے نامی داروں اور فرنٹ مینوں کے ذریعے لانڈر کرنے کا الزام ہے، رقوم فراڈ منتقلیوں کے ذریعے بینک اکاونٹس میں منتقل کی گئیں، فراڈ منتقلیوں کے ذریعے رقم منتقل کرنے میں بینک حکام بھی ملوث تھے، جعلی اکاونٹس کے تجزیے میں پتہ چلتا ہے کہ منتقلیوں اور آپریشن کو دور سے کنٹرول کیا گیا۔

نیب دستاویزات میں مزید بتایا گیا ہے کہ ملزم نے اس سے حتمی فائدہ اٹھایا، ملزم کے غیر قانونی بے نامی داروں، ساتھیوں، ملازمین نے کمیشن اور کک بیکس کو فراڈ قرضوں اور غیر قانونی فائدوں میں ظاہر کیا، ان رقوم کو مشکوک منتقلیوں کے ذریعے لانڈرنگ مقاصد کے لیے بینک میں دوبارہ انویسٹ کرایا گیا۔ دستاویزات کے مطابق سابق صدر زرداری کے فرنٹ مین اے جی مجید کے ذریعے بینک میں مفادات تھے، ثبوتوں سے ظاہر ہوتا ہے جعلی اکانٹس اور خود کے درمیان اومنی گروپ کو رکھا گیا، اس کا مقصد جعلی اکاونٹس اور اپنے درمیان فاصلہ رکھنا تھا، آصف زرداری نے اومنی گروپ کے ذریعے جعلی اکاونٹس کھولے، ان میں بھاری رقوم ڈالیں اور نکالیں۔

ذرائع کے مطابق نیب راولپنڈی نے آصف زرداری کو 2 اٹینڈنٹس فراہم کرنے کی منظوری دے دی، آصف زرداری نے ڈی جی نیب راولپنڈی کو خط لکھ کر اٹینڈنٹ فراہم کرنے کی درخواست کی تھی۔

Leave a Reply