دوسری جنگ عظیم میں نازی فوجوں کو اہم مقامات پر شکست دینے والے کا نام منظر عام پر آگیا

Spread the love

لاہور(ظہیر عباس سے) ایلن تورنگ ایک انگریز سائنسدان اور ریاضی دان تھے، جنہوں نے عالمی جنگ دوم

کے دوران جرمن فوج کے پیغاموں کا رمز توڑنے میں اہم کردار ادا کیا۔ وہ کمپیوٹر سائنس کی نشو و نما میں

بہت اثر انداز تھے اور مفروضاتی کمپیوٹر سائنس اور مصنوعی ذہانت (آرٹیفشل انٹیلیجنس) کے بانی سمجھے

جاتے ہیں۔ عالمی جنگ دوم کے دوران انہوں نے بلیچ لی پارک (Bletchley Park) میں کام کیا، جو برطانیہ

کا رمز شکنی (codebreaking) کا مرکز تھا۔ یہاں انہوں نے جرمن رمز بند (encoded) پیغاموں کی

ترجمانی کرنے کے لیے کچھ تکنیک ایجاد کیے۔ ترسیل کے عمل میں پکڑے ہوئے سندیسوں کا اصل روپ

دریافت کرنے میں اُن کا کلیدی کردار نے انہی کی وجہ سے اتحادی افواج نے نازی فوجوں کو متعدد اہم محاذوں

پر فتح دلائی۔ اندازہ کیا گیا ہے کہ بلیچلی پارک میں ہونے والے کام کے سبب ہی یورپ نے جنگ میں فتح پائی۔

1952 میں ٹورنگ ہم جنسیت کے الزام پر قصور وار ٹھہرائے گئےیہ اس وقت کی بات ہے جب برطانیہ میں

ایسے فعل غیر قانونی ہی تھے۔ 1954 میں، اپنی بیالیسویں سالگرہ سے سولہ دن پہلےسائنائڈ کھانے سے اس

کی موت ہو گئی۔ تفتیش میں اس کو موت کو خود کشی قرار دیا گیا مگر اس کی والدہ سمیت متعدد لوگ تھے جن

کا کہنا تھا کہ اس نے غلطی سے سائناڈ نگل لیا تھا۔ 2009 میں، ایک انٹرنیٹ کمپین کے نتیجے میں، برطانوی

وزیر اعظم گارڈن براؤن نے اُس کے ساتھ سلوک کے لیے برطانوی حکومت کی جانب سے عوام سے معافی

مانگی اور ملکہ الیزابتھ دوم نے اُس کو 2013 میں بعد از موت معافی دے دی۔

Please follow and like us:

Leave a Reply