وزیر اعظم صدر پاکستان 150

ریکارڈ ٹیمپرنگ کیس ،صدر عارف علوی 12جون کو طلب

Spread the love

کراچی( کورٹ رپورٹر )سندھ ہائیکورٹ میں صدر مملکت ڈاکٹر عارف علوی کے

خلاف درخواست کی سماعت ہوئی۔صدر مملک کی جانب سے جواب جمع نہ

کروانے پر عدالت نے برہمی کا اظہار کیا۔ سندھ ہائیکورٹ نے ڈاکٹر عارف علوی

کو 12 جون کو طلب کر لیا ہے۔ جسٹس محمد علی مظہر نے دوران سماعت

ریمارکس دئیے کہ جواب جمع کروائیں پھر دیکھیں گے۔واضح رہے سندھ ہائی

کورٹ نے ڈاکٹر عارف علوی کے صدرِ مملکت منتخب ہونے کے خلاف دائر

درخواست کو فوری سماعت کے لیے منظور کیا تھا ۔درخواست گزار عظمت

ریحان نے اپنی درخواست میں موقف اختیار کیا کہ ڈاکٹر عارف علوی نے عدالتی

ریکارڈ میں ٹیمپرنگ کی۔انہوں نے بتایا کہ ڈاکٹر عارف علوی نے 1977سے

عدالت میں زیرِ سماعت کیس میں 3 مرتبہ اپنا حلف نامہ جمع کروایا اور انہوں نے

تینوں مرتبہ اس میں غلط بیانی کی۔درخواست میں کہا گیا کہ ڈاکٹر عارف علوی

نے دستاویزات جمع کرواکر ہاکس بے پر 1810 ایکڑ زمین کے کیس کا فیصلہ

اپنے حق میں کروایا تھا، اور وہ ایک ٹرسٹ کے شریک ٹرسٹی بھی ہیں۔ان کا

مزید کہنا تھا کہ سندھ ہائی کورٹ کے موجودہ چیف جسٹس نے ڈاکٹر عارف علوی

کے خلاف حکم نامہ جاری کیا تھا۔درخواست میں کہا گیا ہے کہ عدالتی ریکارڈ

میں ٹیمپرنگ کرنے ولا شخص پاکستان کا صدر نہیں بن سکتا۔سندھ ہائی کورٹ

نے عظمت ریحان کی درخواست کو فوری سماعت کے لیے منظور کرتے ہوئے

فریقین کو یکم جنوری تک جواب جمع کروانے کا حکم بھی دیا تھا۔درخواست کی

سماعت پر عارف علوی کو کئی بار طلب کیا گیا تاہم ان کی طرف سے کوئی

جواب جمع نہ کروایا گیا جس پر آج عدالت نے برہمی کا اظہار کیا/۔عظمت ریحان

نے اپنی درخواست میں وفاقی حکومت، الیکشن کمیشن پاکستان (ای سی پی)اور

دیگر کو فریق بنایا ہے۔



اپنا تبصرہ بھیجیں