19 مئی کے واقعات ایک نظر میں

Spread the love

واقعات


1930ء جنوبی افریقہ میں سفیدفام خواتین کو ووٹ ڈالنے کا حق دیا گیا

1635ء فرانس نے اسپین کے خلاف جنگ کاآغاز کیا

2018 گروپ علم و دانش کے اڈمن اور پسرور شہر کی مشہور سماجی اور سیاسی شخصیت محترم جناب عثمان رضا وڑائچ صاحب آج ہفتہ کا دن ہونے کی وجہ سے آرام فرما رہے ہیں۔

ولادت

1881ء – مصطفٰی کمال اتاترک، ترک فوجی و سیاست دان، پہلے صدر ترکی۔

1910ء نتھو رام گوڈسے مشہور بھارتی رہنما گاندھی کا قاتل تھا۔ نتھورام گوڈسے نے 30 جنوری، 1948 کو موہن داس گاندھی کو قتل کر دیا تھا، بھارتی عدالت میں انتہاپسند گوڈسے نے بیان دیا تھا کہ موہن داس گاندھی نے قیام پاکستان کی حمایت کی، اسی لیے اس نے قتل کر دیا۔ بعض انتہا پسند ہندو تنظیمیں گوڈسے کو اپنا قومی ہیرو مانتی ہیں۔ اور 2014ء میں گوڈسے کے نام پر ایک مندر کا افتتاح کیا گيا۔ ہندو مہاسبھا نے اعلان کیا ہے کہ وہ گوڈسے کے مجسمے کو ملک کے ہر بڑے شہر میں نصب کرنا چاہتی ہے۔ تنظیم نے اپنے مرکزی ہیڈکوارٹر میں ایک مجسمہ نصب بھی کر لیا ہے۔ اس بارے میں سبھا کے صدر چندر پرکاش کوشک کا کہنا ہے کہ “ہم اس سلسلے میں وزیر اعظم مودی کو خط لکھ کر یہ مطالبہ کریں گے کہ گوڈسے کے مجسمے پورے ملک میں لگانے کی مہم شروع کی جائے۔ نتھو رام کو 15 نومبر 1949ء کو پھانسی دے دی گئی۔

1913ء – نیلم سنجیوا ریڈی، بھارتی وکیل اور سیاست دان، چھٹے صدر بھارت (و۔ 1996ء)

1914ء نسیم حجازی اردو کے مشہور ناول نگار تھے جو تاریخی ناول نگاری کی صف میں اہم مقام رکھتے ہیں۔

1914ء – میکس پیروٹز، آسٹریاوی انگریز ماہر حیاتیات اور اکیڈمک، نوبل انعام یافتہ (و۔ 2002ء)

1925ء – میلکم ایکس (پیدائشی نام: میلکم لٹل) جو الحاج ملک الشہباز کے طور پر بھی جانے جاتے ہیں ایک سیاہ فام مسلمان اور نیشن آف اسلام کے قومی ترجمان تھے۔ وہ 19 مئی 1925ء کو امریکہ کی ریاست نیبراسکا میں پیدا ہوئے اور 21 فروری 1965ء کو نیو یارک شہر میں ایک قاتلانہ حملے میں جاں بحق ہوئے۔ وہ مسلم مسجد اور آرگنائزیشن آف ایفرو امریکن کمیونٹی کے بانی بھی تھے۔

ان کے بارے میں تفصیلی مضمون پڑھنے کے لیے یہاں کلک کریں

1949ء صدر افغانستان، سابق افغان وزیر خزانہ، ماہر اقتصادیات اور صدارتی امیدوار 2009ء انتخابات۔ 1949ء کو صوبہ لوگر میں پیدا ہوئے۔ پشتون قبیلے سے ان کا تعلق ہے۔ ان کے والد شاہی دور میں اعلٰی عہدوں پر فائز رہے۔ 2014ء کے صدارتی انتخابات کامیابی کے بعد عبد اللہ کے ساتھ مل کر حکومت بنائی ہے۔

1964ء شیخ عمر واڈیلو (یا شیخ عمر ابراہیم واڈیلو) جدید اسلامی طلائی دینار کے دوبارہ احیاء کے بانی ہے۔ آپ کی کوششوں سے سن 2010ء میں ملائیشیا کے صوبے کیلانتن نے جدید اسلامی طلائی دینار کا اجرا کیا۔ آپ اسلامی اقتصادی نظام کے ماہر ہیں۔ آپ مرابطون عالمی تحریک کے ایک سرگرم رکن، عالمی اسلامی ادارہ برائے تجارت کے بانی بھی ہیں، جو ملکی اور بین الاقوامی تجارت کے اسلامی اصولوں کو اجاگر کرتی ہے۔عالمی اسلامی ٹکسال کے بانی ہیں، جو پوری دنیا میں اسلامی طلائی دینار اور نقرئی درہم کے معیارات کا تعین کرتی ہے۔ اس کے علاوہ آپ نے ای دینار(e-dinar) نامی ایک آن لائن سونے کی ادائیگی اور مخزن نظام متعارف کرایا، جس میں آپ سونے کے سکّوں کے اکاونٹ کھلوا سکتے ہے اور ایک اکاونٹ سے دوسرے اکاونٹ میں رقم منتقل کر سکتے ہیں۔

وفات

1623ء مریم الزمانی بیگم صاحبہ (دیگر نام: رکماوتی صاحبہ، راج کماری ہیرا کنواری، جودھا بائی اور ہرکھا بائی) ایک راجپوت شہزادی تھیں جو مغل بادشاہ جلال الدین محمد اکبر سے شادی کے بعد ملکہ ہندوستان بنیں۔ وہ جے پور کی راجپوت ریاست آمیر کے راجا بھارمل کی سب سے بڑی صاحبزادی تھیں۔ آپ کے بطن سے ولی عہد و ہندوستان کے اگلے بادشاہ نور الدین جہانگیر پیدا ہوئے۔ ان کی تاریخ پیدائش یکم اکتوبر 1542 بیان کی گئی ہے۔ مریم زمانی کا انتقال 1623ء میں ہوا اور آپ کو آگرہ میں پہلے سے بنائے گئے مزار میں مسلم عقائد کے تحت دفن کیا گیا۔

1817ء انشا اللہ خان انشاشاعر، انشاء کی ذہانت اور جدت پسندی انہیں اپنے ہم عصروں میں منفرد نہیں بلکہ تاریخ ادب میں بھی ممتاز مقام دلاتی ہے۔ غزل،ریختی، قصیدہ اور بے نقط مثنوی اوراردو میں بے نقط دیوان رانی کیتکی کی کہانی جس میں عربی فارسی کا ایک لفظ نہ آنے دیا۔ یہی نہیں بلکہ انشاء پہلے ہندوستانی ہیں جنہوں نے دریائے لطافت کے نام سے زبان و بیان کے قواعد پرروشنی ڈالی۔ انشاء نے غزل میں الفاظ کے متنوع استعمال سے تازگی پیدا کرنے کی کوشش کی اور اس میں بڑی حد تک کامیاب بھی رہے۔ تاہم بعض اوقات محض قافیہ پیمائی اور ابتذال کا احساس بھی ہوتا ہے۔ انشاء کی غزل کا عاشق لکھنوی تمدن کا نمائندہ بانکا ہے۔ جس نے بعد ازاں روایتی حیثیت اختیار کر لی جس حاضر جوابی اور بذلہ سنجی نے انہیں نواب سعادت علی خاں کا چہیتا بنا دیا تھا۔ اس نے غزل میں مزاح کی ایک نئی طرح بھی ڈالی۔ زبان میں دہلی کی گھلاوٹ برقرار رکھنے کی کوشش کی۔ اس لیے اشعار میں زبان کے ساتھ ساتھ جو چیز دگر ہے اسے محض انشائیت ہی سے موسوم کیا جاسکتا ہے۔ وہ یکم دسمبر 1752ء کو پیدا ہوئے۔

1935ء لیفٹیننٹ کرنل تھامس ایڈورڈ لارنس، جنہیں پیشہ ورانہ طور پر ٹی ای لارنس کے طور پر جانا جاتا تھا، برطانوی افواج کے ایک معروف افسر تھے جنہیں پہلی جنگ عظیم کے دوران سلطنت عثمانیہ کے زیر نگیں عرب علاقوں میں بغاوت کو منظم کرنے کے باعث عالمی شہرت ملی۔ اس بغاوت کے نتیجے میں جنگ عظیم کے بعد عرب علاقے سلطنت عثمانیہ کی دسترس سے نکل گئے۔ اسلامی خلافت کے خاتمے کے لیے عربوں میں قوم پرستی کے جذبات جگا کر انہیں ترکوں کے خلاف متحد کرنے کے باعث انہیں لارنس آف عربیہ بھی کہا جاتا ہے۔ ان کا یہ خطاب 1962ء میں لارنس آف عربیہ کے نام سے جاری ہونے والی فلم کے باعث عالمی شہرت اختیار کر گیا۔ وہ 16 اگست 1888 میں پیدا ہوا۔

1958ء جدوناتھ سرکار یا یدوناتھ سرکار ایک ہندوستانی بنگالی مؤرخ تھا۔ اُس کی وجہ شہرت اورنگزیب عالمگیر پر لکھی گئی متعدد تصانیف ہیں۔ وہ 10 دسمبر 1870ء کو پیدا ہوا۔

2009ء معروف امریکی نوبل انعام یافتہ سائنس دان وہ 4 جون 1914ء کو امریکی ریاست جنوبی کیرولائنا میں پیدا ہوئے۔ رابرٹ فرشگوٹ کو1998ء میں ان کی تحقیق پر، جس میں نائٹرک آکسائڈ گیس کی انسانی قلب اور گردش خون کے نظام میں اہمیت کا پتہ چلایا گیا مشترکہ طب کا نوبل انعام دیا گیا۔ یہ دریافت کہ یہ گیس خون کی شریانوں کو کھولنے میں ایک اہم عنصر ہے، ویاگرا نامی دوائی جو دل کے مریضوں کے لیے کافی مفید ثابت ہوئی کی تیاری میں انتہائی مدد گار ثابت ہوئی۔ 19 مئی 2009ء کو امریکی ریاست ریاست واشنگٹن میں ان کا انتقال ہو گیا۔

تعطیلات و تہوار

کریمیا کے تاتاری ہر سال 19 مئی کو اِس جبری ہجرت کی یاد میں دن مناتے ہیں

ہیپاٹائٹس کا عالمی دن

Please follow and like us:

Leave a Reply