نوازشریف ایک بار نہیں تین بار جیل کاٹ چکے ہیں

Spread the love

شہبازشریف جیل سے گھبراتے ہیں اور نہ ہی وطن واپس آنے سے گریز کیا ہے

جو لوگ شہباز شریف کے بارے میں افواہیں اڑا رہے ہیں وہ افواہیں کبھی سچ ثابت نہیں ہوں گی

نوازشریف نے احتجاج کی تجویز سے اتفاق نہیں کیا، پارٹی کو کارکنوں کے جذبات سننے کی ہدایت

جس طرح عمران خان نے بھارتی انتخابات سے قبل آئی ایم ایف کے سامنے سرنڈر کیا اسی طرح کا سرنڈر وہ انتخابات کے بعد بھارت کے سامنے کرنے جا رہے ہیں ـ پرویز رشید

لاہور (صباح نیوز) گذشتہ روز کوٹ لکھپت جیل میں مسلم لیگ ن کے قائدمیاں نواز شریف سے ملاقات کے بعد میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے کیا ـ پرویز رشید نے کہا نوازشریف ایک بار نہیں تین بار جیل کاٹ چکے ہیں، شہبازشریف جیل سے گھبراتے ہیں اور نہ ہی وطن واپس آنے سے گریز کیاہے ـجو لوگ شہباز شریف کے بارے میں افواہیں اڑا رہے ہیں وہ افواہیں کبھی سچ ثابت نہیں ہوں گی

انہوں نے کہا ـنوازشریف کو ایک پیپلزپارٹی دوسری بار پرویز مشرف اور تیسری بار عمران خان نے جیل میں ڈال کر اپنا شوق پورا کر لیاـنوازشریف جب ملک آئے تو زبردستی ملک بدر کیاگیا، انہون نے کہا ـجو پاکستان میں عوام کیلئے کام کرتا ہے اسے سزا ملتی ہے جو ناکام ہوتاہے اسے انعام ملتا ہے اور عمران خان اس کی بہترین مثال ہیں ـجس نے ملک کی خودمختاری پر سودا بازی کی اوربیرون ملک مالیاتی اداروں کے آگے فروخت کیا اسے بطور انعام وزیر اعظم بنادیاگیا۔

بھارتی انتخابات سے قبل جیسا سرنڈر آئی ایم ایف کے سامنے ہوا ہے ویسے ہی سرنڈر عمران خان بھارتی انتخابات کے بعد بھارتی حکومت کے سامنے کرنے جارہے ہیںـعمران خان کی حکومت کو صرف نو ماہ ہوئے ہیں پانچ سال بہت مشکل نظر آتا ہے ـمسلم لیگ ن کی قیادت نوازشریف کے پاس ہے مریم یا حمزہ کے پاس نہیں ـپرویز رشید سمیت ہر لیڈر پارٹی کا کارکن ہیں لیڈر صرف نوازشریف ہےـ نوازشریف نے احتجاج کی اجازت نہیں دی بلکہ پارٹی کو کارکنوں کے جذبات سننے کی ہدایت کی

انہوں نے کہا ملک اس وقت شدید مہنگائی سے متاثر ہے کارکن باہر نکلنا چاہتے ہیں، ن لیگ کے کارکنوں اور عہدیداران کی نواز شریف سے گفتگوکرتے ہوئے عہدیداران اور کارکنوں نے میاں نواز شریف کو احتجاج کے حوالے سے تجاویز دیں

ملکی مہنگائی عوام کی برداشت سے باہر ہوچکی ہے عوام کے اندر حکومت کی پالیسی کے خلاف احتجاج پرورش پارہا ہے

ورکرز کی رائے ہے کہ مسلم لیگ ن کے کارکنان کو باہر نکلنا چاہیے، میاں نواز شریف نے اپنے ساتھیوں سے کہا ہے کہ ورکرز کی کال پر غور کریں، میاں صاحب جیل میں ہیں ن لیگ کا رکن چاہتا ہے احتجاج ہونا چاہیے، سیاسی جماعتوں کے کارکنوں کا کام ہے عوام کی ترجمانی کرنا اگر ایسا نہیں ہوگا عوام آگے نکل جائیں گے سیاسی جماعتیں پیچھے رہ جائے گیـ مسلم لیگ ن نے طے کیا ہے کہ اپنے اجلاس میں کارکنوں کے جذبات پر غور کیا جائیگاـمیاں صاحب جیل میں ہے مسلم لیگ ن کا کارکن چاہتا ہے کہ احتجاج کیا جائےـ

Please follow and like us:

Leave a Reply