ماہ رمضان کے حوالے سے اشفاق احمد صاحب کی ایک فکر انگیز تحریر

Spread the love

ماہ رمضان کے حوالے سے اشفاق احمد صاحب کی ایک فکر انگیز تحریر

میں ھر گھریلو عورت کو ھی ”اللہ والی“ سمجھتا ھُوں۔

گھریلو عورت ولایت کے ایک اونچے درجے پر فائز ھوتی ھے.
ﺳﺐ ﺳﮯ ﭘﮩﻠﮯ اُﭨﮭﮯ ، ﺳﺤﺮﯼ ﺑﻨﺎئے اور خود ﺳﺐ ﺳﮯ ﺁﺧﺮ ﻣﯿﮟ ﮐﮭﺎئے. ﭘﮭﺮ دن بھر ﺭﻭﺯﮦ ﺭﮐﮭﮯ،

ﺩﻭﭘﮩﺮ ﻣﯿﮟ ﺑﭽﻮﮞ ﮐﮯ ﻟیے کھانا بناتی ھے، ﭘﮭﺮ ﭼﺎﺭ ﺑﺠﮯ ﺳﮯ ﺍﭘﻨﮯ ﺷﻮھﺮ ﺍﻭﺭ ﺳﺴﺮﺍﻝ ﻭﺍﻟﻮﮞ ﮐﮯ ﻟﺌﮯ ﺍﻓﻄﺎﺭﯼ ﺑﻨﺎﻧﮯ ﮐﮯ ﻟیے ﺟُﺖ ﺟﺎﺗﯽ ھﮯ.

ﭘﮑﻮﮌﮮ ، ﺩھﯽ ﺑﮭﻠﮯ ، ﭼنا چاٹ ، فروٹ چاٹ ﺍﻭﺭ نہ ﺟﺎﻧﮯ ﮐﯿﺎ ﮐﯿﺎ ، ﭘﮭﺮ ﺑﮭﯽ ﯾﮩﯽ ﺩﮬﮍﮐﺎ ﮐﮧ ﭘﺘﺎ ﻧﮩﯿﮟ ﺷﻮھﺮ ، ﺑﺎﭖ ﯾﺎ ﺳﺴﺮ ﮐﻮ ﭘﺴﻨﺪ ﺁﺗﮯ ھﯿﮟ ﯾﺎ ﻧﮩﯿﮟ…؟

ﺍﺫﺍﻥ ﮐﮯ ﻭﻗﺖ ﺗﮏ ﭘﮑﻮﮌﮮ تلتی ﺭھﮯ ﮐﮧ گھر والوں کو ﺑﺎﺳﯽ ﭘﮑﻮﮌﮮ ﭘﺴﻨﺪ جو ﻧﮩﯿﮟ۔ ﺳﺐ ﺭﻭﺯﮦ ﮐﮭﻮﻝ ﻟﯿﮟ ﺗﻮ ﻭﮦ مسکین بھی ﭼﭙﮑﮯ ﺳﮯ ﺁﮐﺮ ﺭﻭﺯﮦ ﮐﮭﻮﻝ ﻟﯿﺘﯽ ھﮯ۔

ﺍﻭﺭ ﺗﻤﺎﻡ ﮔﮭﺮ ﻭﺍﻟﻮﮞ ﮐﻮ ﭘﻮﺭﯼ ﺍﻓﻄﺎﺭﯼ ﮐﮭﻼﻧﮯ ﺍﻭﺭ ﺷﺮﺑﺖ ﭘﻼﻧﮯ ﮐﯽ ﺧﺎﻃﺮ ﻣﺪﺍﺭﺍﺕ ﮐﺮﺗﯽ ﺭھﺘﯽ ھﮯ کہ کسی کے آگے کوئی چیز کم تو نہیں ھو گئی.

افطاری ختم لیکن عورت کا کام ختم نہیں ھُوا ﺑﻠﮑﮧ اُس کو گھر والوں کے لیے ﺗﺮﺍﻭﯾﺢ ﮐﮯ بعد رات کا کھانا بھی تیار کرنا ھے.

ﺳﺎﺭﮮ ﮔﮭﺮ ﮐﺎ ﮐﺎﻡ ﺧﺘﻢ ﮐﺮ ﮐﮯ ﺁﺩﮬﯽ ﺭﺍﺕ ھﻮ ﺟﺎﺗﯽ ھﮯ. ﺍﻭر ھﺎﮞ ﺍﺳﮯ ﺻﺒﺢ ﺗﯿﻦ ﺑﺠﮯ ﺍﭨﮭﻨﺎ ﺑﮭﯽ ﺗﻮ ھﮯ اور برتن بھی دھونے ھیں.

ﺍﻻﺭﻡ ﯾﺎﺩ ﺳﮯ لگانا ھﻮ ﮔﺎ ﻭﺭﻧﮧ ﺍﮔﺮ آنکھ ﻧﮩﯿﮟ ﮐﮭﻠﯽ ﺍﻭﺭ ﮔﮭﺮ ﻭﺍﻟﻮﮞ ﮐﺎ ﺑﻐﯿﺮ ﺳﺤﺮﯼ ﮐﺎ ﺭﻭﺯﮦ ھﻮ ﮔﯿﺎ ﺗﻮ ﺳﺎﺭﺍ ﺩﻥ ﺍُﺳﮯ ﮔﮭﺮ ﻭﺍﻟﻮﮞ ﮐﺎ ﻏﺼﮧ بھی ﺑﺮﺩﺍﺷﺖ ﮐﺮﻧﺎ ھﻮ ﮔﺎ.

بہت ھی کم لوگ ھوں گے جن کے منہ سے غلطی سے تعریف کے دو بول نکل آئیں کہ آج افطار پہ بنی ھوئی چیزیں بہت مزے کی تھیں۔

پلیز ، اِس رمضان میں ﮔﮭﺮ ﮐﯽ ﺧﻮﺍﺗﯿﻦ سے آپ کا ﺟﻮ ﺑﮭﯽ ﺭﺷﺘﮧ ھے ﻣﺎﮞ ، ﺑﮩﻦ ، ﺑﯿﻮﯼ ﯾﺎ ﺑﯿﭩﯽ ﺍﻥ ﮐﺎ بہت سارا ﺧﯿﺎﻝ ﺭﮐﮭﯿﮟ

ﮐﯿﻮﻧﮑﮧ ﻭﮦ ﺑﮭﯽ ﺍٓﭖ ﮐﯽ ﻃﺮﺡ ﺍﻧﺴﺎﻥ ھﯿﮟ اور روزے سے ھوتی ھیں.

Please follow and like us:

اپنا تبصرہ بھیجیں