گرمی میں تندرست رہنے کا قدیمی نسخہ

Spread the love

حکیم محمد شیراز

ریسرچ آفیسر یونانی(سائنسداں) و لکچرر شعبہ معالجات

آرآرآئی یو ایم، کشمیر یونیورسٹی سری نگر، کشمیر۔

’پانی کی لذت کا اندازہ تو گرمی میں ہوتا ہے،’‘آئسکریم کھا کر مزہ آگیا،’‘اف! گرمی بہت ہے’وغیرہ وغیرہ جملے آج کل بکثرت سننے میں آتے ہوں گے۔برصغیر کے بیشتر علاقوں میں موسم گرما نے دستک دے دی ہے۔قارئین کی درخواست پر موسم گرما کی تدابیر صحت رقم کی جاتی ہیں نیز کچھ لوگوں نے گرمی کے مد مقابل کچھ چیزوں کو لا کر کھڑا کر دیا ہے اور انھیں گرمی کا دشمن قرار دیا ہے اس مقالہ میں دوستی اور دشمنی کے جذبات سے پرے،ان کا غیر جانبدارانہ جائزہ لینے کی کوشش کی ہے۔

اگر موثراحتیاطی تدابیر اختیار نہ کی جائیں تو موسم گرمابیشتر امراض کا باعث بنتا ہے۔ پچھلے چند سالوں کا جائزہ لیا جائے تو درجہ حرارت میں بتدریج اضافہ ہوا ہے۔ گرمی میں ہسپتال آنے والوں میں زیادہ تر تعداد ان مریضوں کی ہوتی ہے جو گرمی سے بچنے کے لئے احتیاطی تدابیر اختیار نہیں کرتے۔

لولگنا

بھوک کی کمی سردرد،صفراوی،بخار،گھبراہٹ،خفقان،ٹائیفائڈ،پھوڑے پھنسیاں،ہیپاٹائٹس،یرقان،نفخ،ہیضہ،اسہال اور پیچش، ہیٹ یا سن اسٹروک، فوڈ پوائزننگ اور فلو وغیرہ جیسے عوارضات اسی موسم میں ہوتے ہیں۔موسم گرما میں کوکا کولا، پیپسی وغیرہ مشروبات کی بجائے دودھ یا دہی کی لسی، روح افزا، بزوری،صندل، فالسہ اور نیلوفر کا شربت،لیموں پانی، تازہ پھل کا استعمال کیا جائے۔گوشت و فاسٹ فوڈز کی بجائے سبزیوں کا استعمال مفید ہے۔سخت دھوپ میں گھر سے باہر نہ نکلیں بہت ضروری ہو تو سادہ پانی،نمکین لسی یا لیموں پانی پی کراور سر و گردن پر کوئی کپڑا لے کر نکلیں۔ اس موسم میں سوتی ملبوسات زیادہ بہتر ہیں جسمانی صفائی کا خاص خیال رکھیں موجودہ دور میں جو پانی ہمیں میسرہے اسے ہمیشہ اُبال کر ہی پینا چاہیے۔

بعض پھل مثلاً خربوزہ،تربوزاور کھیرا وغیرہ کھانے میں خاص احتیاط کریں پھل اور سبزیاں تازہ اور اچھی طرح دھو کر استعمال کریں گلے سڑے یا پہلے سے کٹے ہوئے پھل نہ کھائیں ورنہ یہ گرمی کے بجائے آپ کی ہی دشمن ثابت ہوں گی۔زیادہ عرصے سے ریفریجریٹر میں رکھا ہوا گوشت اور دیگر باسی اشیا ہرگز استعمال نہ کریں کھانا ہمیشہ بھوک رکھ کراور تازہ کھائیں ذرا سی بداحتیاطی نفخ، بد ہضمی،اسہال (دست)یا ڈائریا (پیچش)میں مبتلا کر سکتی ہے۔اس موسم میں پسینے کی زیادتی اور دیگر وجوہات سے جسم میں نمکیات اور حیاتین کی کمی ہو جاتی ہے لہٰذا اس کے تدارک کیلئے لیموں اور نمک ملی سکنجبین بہت مفید ہے اسی طرح طب نبویہ کے مطابق سرکہ اس موسم کی بیشتر بیماریوں کا بہترین علاج ہے۔ہیضہ سے بچنے کے لئے سرکے میں بھیگی ہوئی پیاز کا استعمال بہتر ہے سرکہ خون کو صاف کر تا ہے اورپھوڑے پھنسیوں سے بچاتا ہے پیاس کو تسکین دیتا ہے جسم کی حرارت کو اعتدال پر رکھتا ہے غذا کو جلد ہضم کرتا ہے نیز جسم سے فاسد اور غلیظ مادوں کو نکالنے میں معاون ہے۔ اگر صحیح غذائی احتیاط اور حفظ صحت کے اصولوں پر عمل کریں تو یقینا ہم موسم گرما کے عوارضات اور امراض سے بچ سکتے ہیں۔

گرمی سے بچنے کے طریقے

۱ ۔دوپہر بارہ بجے سے شام پانچ بجے تک غیر ضروری گھر سے باہر نکلنے سے اجتناب کریں۔

۲ ۔ہلکے رنگ کے ڈھیلے کپڑے پہنیں تاکے جسم کو ہوا لگتی رہے۔

۳ ۔ سورج کی تپش اور دھوپ سے بچیں اور جلد کو جھلسنے سے بچائیں، باہر نکلتے وقت سن بلاک یا سن اسکرین کریم استعمال کریں۔

۴ ۔پانی کا استعمال بڑھائیں۔ باہر نکلتے وقت ایک پانی کی بوتل اور ایک گیلا کپڑا اپنے ساتھ لازمی رکھیں۔

۵ ۔بچوں کو گاڑی میں تنہا نہ چھوڑیں گرمی کے دوران گاڑی کے اندر کا درجہ حرارت تیزی سے بڑھتا ہے۔

۶۔ موٹر سائیکل استعمال کرنے والی افراد ہیلمٹ، ٹوپی یا کم از کم کپڑے سے سر کو ڈھانپ کر رکھیں۔

۷۔ ورزش صبح سویرے یا مغرب کے بعد کریں کیوں کے ورزش سے پسینہ آتا ہے اور پسینہ جسم میں پانی کی کمی نیز بدبو کی وجہ بن سکتا ہے۔ ساتھ ہی روزانہ صبح غسل کو لازمی سمجھیں۔

۸ ۔ضعیف، بیمار، سانس اور دل کے مریض گرمی سے زیادہ جلدی متاثر ہوتے ہیں اس لئے انکا خاص خیال رکھیں۔

غذاؤں کا انتخاب

تربوز

گرمی کی شدت کو کم کرنے کے لئے تربوز سے بہتر کچھ نہیں تربوز میں نوے فساد پانی پایا جاتا ہے جو جسم میں پانی کی کمی کو پورا کرنے کے لئے نہایت اہم کردار ادا کرتا ہے.۔ تربوز میں وٹامن اے اور سی شامل ہونے کے علاوہ یہ کینسر اور دل کی بیماریوں کے بچاؤ میں بھی نہایت مفید ہے۔

خربوز

پانی کی بھرپور مقدار رکھنے والا خربوزہ انسانی جسم کو ڈی ہائیڈریشن سے بچاتا ہے۔ خربوزے میں کیلوریز اور پوٹاشیم کم مقدار ہونے کی وجہ سے یہ وزن میں کمی کرنے کے لئے بھی نہایت فائدے مند تصور کیا جاتا ہے۔

ترش پھل

مالٹا، انگور اور لیموں جیسے ترش پھل مزیدار ذائقوں کے علاوہ ان کی تاثیر ٹھنڈی ہونے کی وجہ سے گرمی میں اسکا استعمال جسم کو مختلف بیماریوں سے محفوظ رکھتا ہے پھل آپ کو جوان بنائے رکھنے میں بھی اہم کردار ادا کرتے ہیں۔

سبزیاں

پھلوں کے علاوہ ٹھنڈی تاثیر رکھنے والی سبزیاں بھی موسم گرما میں انسانی جسم کے لئے نہایت مفید ہیں۔ بہت سی ایسی سبزیاں پائی جاتی ہیں، جو جسمانی درجہ حرارت کو کم رکھتی ہیں۔ ان سبزیوں میں کھیرا، گاجر، سلاد اور پودینہ شامل ہیں جن میں پانی کی ایک خاص مقدار شامل ہوتی ہے جو خون کو پتلا رکھتی ہے اور جسمانی درجہ حرارت میں کمی لاتی ہیں۔

موسم گرما میں مندرجہ بالا معمولی احتیاطی تدابیر آپ اور آپ کے اہل خانہ کی صحت کو برقرار رکھنے میں معاون ہو سکتی ہے۔

Please follow and like us:

اپنا تبصرہ بھیجیں