ایفی ڈرین کوٹہ کیس،حنیف عباسی کی ضمانت منظور ٍٍ

Spread the love

لاہور (کورٹ رپورٹر) لاہور ہائی کورٹ نے پاکستان مسلم لیگ (ن) کے سینئر رہنما محمد حنیف عباسی کی

ایفی ڈرین کوٹہ کیس میں عمر قید کی سزا معطل کرتے ہوئے انہیں فوری طور پر رہا کرنے کا حکم دیا ہے ۔

عدالت نے محمد حنیف عباسی کی درخواست ضمانت منظور کر لی۔ جمعرات کو لاہور ہائی کورٹ کی جسٹس

عالیہ نیلم کی سربراہی میں دو رکنی بینچ نے حنیف عباسی کی درخواست ضمانت پر فیصلہ سنایا۔ محمد حنیف

عباسی کے وکیل اعظم نذیر تارڑ کی جانب سے دلائل میں کہا گیا کہ انسداد منشیات عدالت نے فیصلہ میں اہم

قانونی نکات کو نظر انداز کیا، کیس میں نامزد دیگر سات ملزمان کو رہا کیا گیا ہے جبکہ حنیف عباسی کو

سیاسی بنیادوں پر کیس بنا کر ان کو سزا سنائی گئی ہے جو کہ غیر قانونی اقدام ہے۔ ا نہوں نے کہا کہ سیاسی

بنیادوں پر حنیف عباسی کو کیس میں ملوث کیا گیا جبکہ اس کیس سے ان کا کوئی تعلق نہیں۔ حنیف عباسی پر

بے بنیاد اور غیر آئینی الزامات لگائے گئے ہیں۔ انہوں نے کہا کی حنیف عباسی نے قانونی طور پر ایفی ڈرین

کا کوٹہ حاصل کیا تھا۔ انہوں نے کہا کہ ایفی ڈرین کیس میں حنیف عباسی کا کوئی تعلق نہیں بنتا، حنیف عباسی

کے خلاف بدنیتی کی بنیاد پر مقدمہ قائم کیا گیااور سیاسی بدنیتی کی بنیاد پر ہی سزا سنائی گئی ۔ دوران سماعت

عدالت نے کہا کہ ٹرائل کورٹ نے اس کیس میں اہم قانونی نقاط کو نظر انداز کیا ہے لہٰذا حنیف عباسی ضمانت

کے حقدار ہیں ۔ جبکہ دوران سماعت سرکاری وکیل نے اعظم نذیر تارڑ کے دلائل کی مخالفت کی تاہم عدالت

نے دونوں فریقین کے دلائل مکمل ہونے کے بعد حنیف عباسی کی درخواست ضمانت منظور کرتے ہوئے ان

کی سزا معطل کر دی اور انہیں فوری طور پر رہا کرنے کا حکم دیا ہے۔ واضح رہے کہ راولپنڈی کی انسداد

منشیات عدالت نے حنیف عباسی کو ایفی ڈرین کوٹہ کیس میں عمرقید کی سزا سنائی تھی۔

Please follow and like us:

اپنا تبصرہ بھیجیں