کرائسٹ چرچ حملہ کے بعد نیوزی لینڈمیں مساجد کھول دی گئیں

Spread the love

متاثرین کی مدد کے لئے اب تک 50 لاکھ امریکی ڈالرز سے زائد رقم جمع کر لی گئی

36 افراد مختلف ہسپتالوں میں زیر علاج ہیں جن میں سے 11 کی حالت نازک ہے

تین گرفتار افراد کا حملہ سے تعلق ثابت نہیں ہو سکا، ایک خاتون کو چھوڑ دیا گیا، دو افراد دیگر الزامات میں بدستور زیر حراست ہیں،پولیس

کرائست چرچ (صباح نیوز)کرائسٹ چرچ حملہ کے بعد نیوزی لینڈمیں مساجد کھول دی گئیں۔جبکہ متاثرین

کی مدد کے لئے اب تک 50 لاکھ امریکی ڈالرز سے زائد رقم جمع کر لی گئی ہے۔ زخمیوں میں سے 11

افراد کی حالت نازک بتائی جاتی ہے۔ جبکہ تین گرفتار افراد کا حملہ سے تعلق ثابت نہیں ہو سکا۔ نیوزی لینڈ

پولیس کے مطابق کرائسٹ چرچ میں دہشت گردی کے شبہ میں گرفتار تین افراد کا حملہ سے کوئی تعلق نہیں ۔

ایک خاتون کو چھوڑ دیا گیا جبکہ دو افراد دیگر الزامات میں بدستور زیر حراست ہیں۔ جبکہ پولیس نے سانحہ

میں جاں بحق افراد کی تعداد 50 ہونے کی تصدیق بھی کر دی ہے۔ نیوزی لینڈ میں مساجد بھی دوبارہ کھول دی

گئی ہیں۔ پولیس نے لوگوں کومساجد نہ جانے کی ہدایت کی تھی تاہم اب یہ پابندی اٹھا لی گئی ہے۔ حکام کے

مطابق ملک بھر میں تمام مساجد پر پولیس موجود رہے گی۔ حملہ کے بعد 36 افراد مختلف ہسپتالوں میں زیر

علاج ہیں جن میں سے 11 کی حالت نازک ہے۔ جاں بحق افراد کے ورثاء اور زخمیوں کی مدد کے لئے نیوزی

لینڈ کونسل آف وکٹم سپورٹ گروپس کی سوشل پیج اور دیگر ویب سائٹس نے اب تک 43 لاکھ امریکی ڈالرز

جمع کر لئے ہیں ۔

اپنا تبصرہ بھیجیں