نیوزی لینڈ‘ مسجد النور پر حملہ کے دوران پاکستانی شہری اور اس کا بیٹا بھی شہید ہو گئے

Spread the love

پاکستانی شہری راشد حملہ آور کو روکنے کی کوشش کے دوران شہید ہوا، تعلق ایبٹ آباد سے تھا
پانچ پاکستانی شہری لاپتہ ہیں جن کی تلاش کے لئے کوششیں جاری ہیں، دفتر خارجہ

حملہ کے بعد 10 پاکستانی لاپتہ تھے، ایک کی شناخت ہو گئی ، دیگر لاپتہ9 بارے نیوزی لینڈ کی حکوت کے ساتھ رابطہ میں ہیں، پاکستانی ہائی کمشنر ڈاکٹر عبدالمالک

کرائسٹ چرچ (صباح نیوز) نیوزی لینڈکے شہر کرائسٹ چرچ کی مسجد النور پر حملہ کے دوران پاکستانی شہری اور اس کا بیٹا بھی شہید ہو گئے۔ مزاحمت کے دوران شہید ہونے والے راشد کا تعلق ایبٹ آباد سے تھا۔ راشد کا بیٹا طلحہ نعیم بھی شہید ہو گیا۔ دفتر خارجہ کے مطابق پانچ پاکستانی شہری لاپتہ ہیں جن کی تلاش کے لئے کوششیں جاری ہیں۔ زرائع کے مطابق پاکستانی شہری راشد حملہ آور کو روکنے کی کوشش کے دوران شہید ہوا ان کا تعلق ایبٹ آباد سے تھا۔

حملے کے دروان زخمی ہونے والے چار پاکستانیوں میں ایک کراچی کا شہری سید اریب احمد ہے جو کمپنی کے کام سے نیوزی لینڈ گیا تھا ۔ 27 سالہ اریب فیڈرل بی ایریا کا رپائشی اور ایک فرم میں چارٹرڈ اکائونٹنٹ ہے۔ اریب اپنے والدین کا اکلوتا بیٹا ہے۔ حملہ میں زخمی ہونے والے ایک اور پاکستانی زخمی کا تعلق حافظ آباد سے ہے جو ڈیڑھ ماہ قبل اپنے بیٹے اور پوتوں سے ملنے نیوزی لینڈ گئے تھے۔

جبکہ نیوزی لینڈ میں متعین پاکستانی ہائی کمشنر ڈاکٹر عبدالمالک کا نجی ٹی وی انٹرویو میں کہنا تھا کہ حملہ کے بعد 10 پاکستانی لاپتہ تھے۔ ان کا کہنا تھا کہ ایک پاکستانی زخمی شہری کی شناخت ہو گئی ہے جبکہ نو دیگر لاپتہ پاکستانیوں کے حوالہ سے نیوزی لینڈ کی حکوت کے ساتھ رابطہ میں ہیں۔ پاکستانی ہائی کمیشن کے حکام نیوزی لینڈ حکام سے رابطہ میں ہیں اور تمام درکار چیزیں فراہم کی جا رہی ہیں۔

اپنا تبصرہ بھیجیں