بھارتی ریاستی دہشتگردی جاری،مزید4کشمیری شہید،متعددزخمی

Spread the love

سرینگر(مانیٹرنگ ڈیسک) مقبوضہ کشمیر میںبھارت کی ریاستی دہشتگردی کا

سلسلہ برقرار ہے ،گزشتہ روزفورسز کی فائرنگ سے 4کشمیری شہید

اورمتعددزخمی ہوگئے،جبکہ 50یورپین اراکین پارلیمنٹ نے بھارتی وزیر اعظم

نریندر مودی کے نام ایک خط میں مقبوضہ کشمیرمیں نہتے شہریوںپر مہلک پیلٹ

گن کے استعمال پر پابندی عائد کرنے کا مطالبہ کردیا ہے۔کشمیر میڈیا سروس کے

مطابق ضلع شوپیاں اور ہندواڑہ میں بھارتی سکیورٹی فورسز نے نام نہاد آپریشن

کے نام پر فائرنگ کر کے چار کشمیری شہید کر دئیے،جس کیخلاف علاقے کے

لوگ سڑکوں پر نکل آئے اور بھارتی ریاستی دہشت گردی کیخلاف شدید نعرہ

بازی کی۔ایک دوسرے واقعہ میںبھارتی فورسز نے فائرنگ کرکے ضلع کلگام میں

متعدد کشمیریوں کوزخمی کردیا۔کشمیرمیڈیاسروس کے مطابق شوپیاں میںشہید

ہونیوالے تین نوجوانوں میںسجا د کھانڈ ے ، عاقب احمد ڈار اور بشارت احمد

میرشامل ہیںجنہیں فوجیوںنے یارون علاقہ میں تلاشی و محاصرے کی ایک

کارروائی کے دوران شہید کیا۔ فوجیوںنے ایک اور نوجوان کو کپواڑہ کے علاقے

لنگیٹ میں شہید کیا۔چار نوجوانوںکی شہادتوںکیخلاف شوپیاں، پلوامہ اور ہندواڑہ

کے علاقوںمیں مکمل ہڑتال کی گئی جبکہ پلوامہ ، شوپیاں، کولگام ، بیج بہاڑہ ،

سوپور اور ہندواڑہ کے علاقوںمیں بھارت کیخلاف اور آزادی کے حق میں بڑے

پیمانے پر مظاہرے کئے گئے ۔ گورنمنٹ ڈگری کالج کولگام کے طلباء نے بھی

کالج کیمپس میںبھارت مخالف مظاہرے کئے ۔ فوجیوںنے ضلع کولگام کے علاقے

ٹنگ بل کجر میں ایک مکان کو آگ لگا دی ۔قابض انتظامیہ نے سوپور ، ہندواڑہ

اور کپواڑہ کے علاقوں میںموبائل انٹرنیٹ سروس معطل کر دی جبکہ تعلیمی

ادارے بند کرنے کا حکم جاری کیا۔ادھرمقبوضہ کشمیر کے مختلف علاقوںمیں

ہزاروں کی تعداد میں لوگوںنے شہید نوجوانوں کی نماز جنازہ میں شرکت کی ۔

سرینگر کے علاقے آلوچی باغ میں واقع بھارتی فوجی بنکر کے قریب ایک زور د

ھما کے میں ایک مکان اور ایک گاڑی کو نقصان پہنچا،دھماکہ کی آواز دو ردور

تک سنائی دی گئی ۔ مقامی افراد کے مطابق بھارتی فوجی بنکر کے قر یب دھماکہ

اتنا شدید تھا کہ متعدد گھروں کی کھڑکیاں ٹوٹ گئیں،ایک سرکاری سکول ٹیچر کی

لاش پراسرار حالت میں ضلع پونچھ کے علاقے بلنوئی جبکہ ضلع بانڈی پورہ کے

علاقے سنبل میں دریائے جہلم سے ایک نامعلوم خاتون کی لاش ملی ہے ۔

Please follow and like us:

اپنا تبصرہ بھیجیں