مزدوروں کی ہلاکت,داسو ڈیم کی تعمیرعارضی طور پربند

Spread the love

صوبہ خیبر پختونخواہ کے حساس ضلع کوھستان میں پیر اور منگل کی درمیانی شب لینڈ سلائیڈنگ کی زد میں آکر داسو ہائیڈرو پاور پراجیکٹ کی تعمیر میں مصروف چین کی کمپنی میں کام کرنے والے آٹھ مزدوروں کی ہلاکت کے بعد مشتعل قبائل نے داسو ڈیم پر ہر قسم کا کام روک دیا ہے۔مزدوروں کی ہلاکت کے واقعے کے بعد مشتعل عوام نے شاہراہ قراقرم کو ہر قسم کی ٹریفک کے لیے دھرنا دے کر بند کردیا تھا جس کو منگل اور بدھ کی درمیانی رات کو تیز بارش شروع ہونے کے بعد کھول دیا تھا۔داسو میں موجود جرگہ کے ارکان اور انتظامیہ کے ساتھ مذاکرات میں شریک محمد حفیظ نے برطانوی نشریاتی ادارے کو بتایا ہے کہ آٹھ مزدوروں کے مٹی کے تودوں کے تلے دب کر ہلاک ہونے کے بعد احتجاج شروع ہوا جس کے بعد انتظامیہ کی جانب سے مذاکرات کی دعوت دی گئی تھی جو کہ قبول کرلی گئی۔ان مذاکرات میں مقامی جرگے کا مطالبہ تھا کہ ہلاک ہونے والے ہر ایک مزدور کے لواحقین کو 40 لاکھ روپے اور ان کے خاندان کے دو افراد کو سرکاری ملازمتیں دی جائیں، مگر انتظامیہ کی جانب سے نو لاکھ روپیہ فی کس اور ملازمتوں کے حوالے سے خاموشی اختیار کی گئی تھی۔ جس کے بعد مذاکرات تعطل کا شکار ہو گئے۔

اپنا تبصرہ بھیجیں