بدعنوانی سے لوٹی اور منی لانڈرنگ سے بیرون ملک بھیجی گئی رقوم کو واپس لایا جائیگا،چیئر مین نیب

Spread the love

قومی احتساب بیورو کے چیئر مین جسٹس (ر)جاوید قبا ل نے کہا ہے میگا کرپشن کے مقدمات کو منطقی انجام تک پہنچا نا نیب کی اولین ترجیح ہے۔ ملک میں بدعنوانی دیمک سے بڑھ کرناسورکی صورت اختیار کر چکی ہے جس کو جڑ سے اکھاڑ پھینکنا وقت کی اہم ضرورت ہے ۔ نیب ملک سے بدعنوانی کے خاتمہ اور منی لانڈرنگ کی روک تھام کیلئے اقدامات کر رہا ہے ۔ بدعنوانی سے لوٹی گئی اور منی لانڈرنگ سے بیرون ملک بھیجی گئی رقوم کو پاکستان واپس لایا جائے گا۔ نیب کا کسی گروہ ،سیاست اور سیاسی جماعت سے نہیں صرف پا کستان سے تعلق ہے ۔ نیب نے گزشتہ ایک سال کے دوران 503 افراد کو گرفتار کرنے کے علاوہ 440 افراد کیخلاف بدعنوانی کے ریفرنس عدالتوں میں دائر کئے جوپہلے کسی ایک سال میں نیب نے دائر نہیں کئے ، نیب کے 1211 بدعنوانی کے ریفرنس اس وقت مختلف معزز احتساب عدالتو ں میں تقریباََ مالیت 900 ارب روپے کے بدعنوانی کے ریفرنس زیر سماعت ہیں۔ نیب نے گزشتہ ایک سال کے دوران بلا امتیاز کاروائیاں کرتے ہوئے 1713 شکایا ت کی جانچ پڑتال ، 877 انکوائریا ں اور 227 انوسٹی گیشنز کی منظوری دی ۔ اس کے علاوہ نیب نے وائٹ کا لر مقدمات کو منطقی انجام تک پہنچانے کیلئے 10 ما ہ کا وقت مقرر کیا ہے جو کسی بھی دوسرے اینٹی کرپشن کے ادارے نے مختص نہیںکیا کیونکہ وائٹ کالر مقدمات کی تحقیقات سالہاسال تک چلتی رہتی ہیں، اسلام آباد میں اسٹیٹ آف دی آرٹ فرانزک لیبارٹری قائم کی ہے جس سے دستاویزات کی تصدیق ، موبائل ڈیٹا، فنگر پرنٹس کی شناخت کی وجہ سے میگا کرپشن کے مقدمات میں ٹھوس شواہد کے حصول میںمددملتی ہے۔ بدعنوان عناصر کیخلاف شکایات کی جانچ پڑتال ، انکوائریوں اور انوسٹی گیشنز کو قانون، میرٹ، شفافیت اور ٹھوس شوائد کی بنیا د پر مقررہ وقت کے اندر منطقی انجام تک پہنچایا جائے۔ اشتہاری اور مفرور ملزمان کی گرفتاری کیلئے تمام وسائل بروئے کار لائے جائیں۔ ٹرا نسپرنسی انٹر نیشنل، ورلڈ اکنامک فورم، پلڈاٹ، مشال پاکستان نے نیب کی کاوشوں کی بدولت پاکستان میں بدعنوانی کی شرح میںمسلسل کمی کو سراہا ہے جبکہ گیلانی اینڈ گیلپ کے حالیہ سروے کے مطابق 59 فیصد لو گ نیب پر اعتماد کرتے ہیں جو قومی احتساب بیورو کی چیئر مین نیب جسٹس (ر ) جاوید قبا ل کی قیادت میںنیب کی پاکستان سے بدعنوانی کے خاتمے کا عملی ثبوت ہے۔

Please follow and like us:

اپنا تبصرہ بھیجیں